• بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

بیوی: زیادہ کپڑے مت نکالنا۔

شوہر: کیوں؟بیوی: کام والی ماسی دو دن نہیں آئے گی۔

شوہر: کیوں؟

بیوی: اپنی نواسی سے ملنے بیٹی کے پاس جا رہی ہے، کہہ رہی تھی دو دن نہیں آؤں گی۔

شوہر: ٹھیک ہے، زیادہ کپڑے نہیں نکالوں گا۔

بیوی: اور !!! ماسی کو پانچ سو روپے دے دوں؟

شوہر:کیوں؟ ۔بیوی: ارے! غریب ہے بیچاری، بیٹی اور نواسی کے پاس جا رہی ہے، کچھ ان کے لئے بھی لے جائے گی۔ اس کی بیٹی اور نواسی بھی خوش ہوجائیں گی۔ ویسے بھی اس مہنگائی کے دور میں اس کی تنخواہ سےکیا بنتا ہوگا۔ اپنوں کے پاس جا رہی ہے، کچھ ہاتھ میں ہوگا تو خوش ہو گی۔

شوہر: تم تو ضرورت سے زیادہ ہی جذباتی ہو جاتی ہو ۔

بیوی: آپ فکر مت کریں میں آپ سے اضافی پیسے نہیں مانگو گی۔ آج کا پیزا کھانے کا پروگرام منسوخ کر دیتی ہوں۔ خواہ مخواہ 500 روپے اُڑ جائیں گے، اس موٹی روٹی پیزا کے آٹھ ٹکڑوں کے بدلے ،اس کی مدد مجھے بہتر لگتی ہے۔

شوہر: واہ، واہ بیگم صاحبہ آپ کے کیا کہنے !! ہمارے منہ سے پیزا چھین کر ماسی کی پلیٹ میں؟ چلو آپ کی محبت میں یہ بھی برداشت کئے لیتے ہیں۔

تین دن بعد شوہر: (پونچھا لگاتی ماسی سے پوچھا) کیسی رہی چھٹی؟

ماسی: صاحب بہت اچھی رہیں۔ مالکن جی نے پانچ سو روپے دیئے تھے بڑے کام آئے۔ اللہ سلامت رکھے اور اللہ آپ کو بہت زیادہ عطا کرے۔

شوہر: اماں 500 روپے کا کیا کیا لیا؟

ماسی: نواسی کے لئے 150روپے کی فراک لی اور 40روپے کی گڑیا، بیٹی کے لئے 50روپے کے پیڑے لے گئی تھی، 50 روپے کی جلیبیاں محلے میں بانٹ دیں۔ 60 روپے کرایہ لگ گیا تھا۔ 25 روپے کی چوڑیاں بیٹی کے لئے اور داماد کے لئے 50روپے کی بیلٹ لی۔ باقی 75 روپے بچے تھے وہ بھی میں نے نواسی کو کاپی اور پینسل خریدنے کے لئے دے دئیے۔ جھاڑو پونچھا لگاتے ہوئے پورا حساب اس کی زبان پر رٹا ہوا تھا۔

شوہر: 500روپے میں اتنا کچھ ؟ وہ حیرت سے دل ہی دل میں غور کرنے لگا۔ اس کی آنکھوں کے سامنے آٹھ ٹکڑوں والا پیزا گھومنے لگا، وہ ان آٹھ ٹکڑوں کا موازنہ ماسی کے خرچ سے کرنے لگا۔ پہلا ٹکڑا بچے کے ڈریس کا، دوسرا ٹکڑا پیڑے کا، تیسرا ٹکڑا محلے کے لوگو ں کا چوتھا کرایہ کا، پانچواں گڑیا کا، چھٹا ٹکڑا چوڑيوں کا، ساتواں داماد کی بیلٹ کا اور آٹھواں ٹکڑا بچی کی کاپی پینسل کا۔ آج تک اس نے ہمیشہ پیزا کا اوپر والا حصہ ہی دیکھا تھا، کبھی پلٹ کر نہیں دیکھا تھا کہ پیزا پیچھے سے کیسا لگتا ہے۔ لیکن آج ماسی نے پیزے کا دوسرا حصہ دکھا دیا تھا۔ پیزے کے آٹھ ٹکڑے اسے زندگی کا مطلب سمجھا گئے تھے۔

زندگی کے لئے خرچ یا خرچ کے لئے زندگی کا جدید مفہوم ایک جھٹکے میں اسے سمجھ میں آگیا۔ ہم ان چھوٹی چھوٹی باتوں پرکبھی غور ہی نہیں کرتے ہمارے لئے پانچ سو یا ہزار کی کوئی اہمیت بھی نہیں ہوتی لیکن یہ ہزار پانچ سو غریبوں کے لئے بڑی رقم ہوتے ہیں۔ اس لئے کبھی کبھی محسوس نہ ہونے والی چھوٹی چھوٹی خوشیاں کسی کے نام کرکے دیکھو آپ کو کیسے بڑی خوشی ملتی ہے، اگر اور کچھ نہیں تو کم از کم شئیر کر کے دیکھیں آپ کی روح کو کتنی تسکین ہوگی۔ (ایمن احسن)