• بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

کرکٹ میں کئی ایسی انفرادی پرفارمنسز دیکھنے کو ملتی ہیں کہ وہ ہر کسی کی توجہ کا مرکز بن جاتی ہیں اور مدتوں یاد رہتی ہیں، ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ میں بھی ایسی کئی یاد گار پرفارمنس دیکھنے کو ملی ہیں جو فینز کو آج بھی یاد ہیں۔

آئی سی سی ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ دو ہزار سات میں شروع ہوا، اس بار ورلڈ کپ کا ساتواں ایڈیشن کھیلا جارہا ہے، ہر ایڈیشن میں کھلاڑیوں نے کچھ ایسی یادگار پرفارمنس دی جو فینز کبھی فراموش نہیں کرسکتے۔

بھارتی کھلاڑی یووراج سنگھ کی پہلے ٹی 20 ورلڈ کپ کی اننگز کو کون بھول سکتا ہے، انگلینڈ کیخلاف ڈربن میں یووراج سنگھ نے اسٹورٹ براڈ کو چھ گیندوں پر چھ چھکے رسید دیئے اور ٹی ٹوئنٹی انٹرنیشنل کی تیز ترین نصف سنچری صرف بارہ گیندوں پر بنائی تھی جو آج تک ایک عالمی ریکارڈ ہے۔

2009 کا ورلڈ کپ تو کوئی پاکستانی فراموش نہیں کرسکتا کیوں کہ پاکستان نے سری لنکا کو ہراکر تاریخی فتح حاصل کی تھی، اس میچ میں بوم بوم کے نام سے مشہور شاہد آفریدی نے شاندار بیٹنگ کا مظاہرہ کرتے ہوئے انہوں نے چالیس گیندوں پر چوون رنز کی شاندار میچ وننگ اننگز کھیلی تھی۔

عمر گل کی نیوزی لینڈ کیخلاف تباہ کن بولنگ بھی یادگار انفرادی پرفارمنسز میں سے ایک ہے، اوول کے مقام پر پاکستانی فاسٹ بولر نے تین اوورز میں چھ رنز دے کر پانچ کھلاڑیوں کو آؤٹ کیا تھا اور ٹی ٹوئنٹی انٹرنیشنل میں ایک اننگز میں 5 وکٹیں لینے والے پہلے بولر بن گئے۔

پھر 2010 میں پاکستان اور آسٹریلیا کا سیمی فائنل کون بھول سکتا ہے، جس میں پہلے اکمل برادران کی نصف سنچریوں کی بدولت پاکستان نے آسٹریلیا کو جیت کیلئے 192 کا ہدف دیا تھا، آسٹریلوی کھلاڑی مائیکل ہسی کی ذمے دارانہ بیٹنگ کی وجہ آسٹریلیا نے فائنل میں کوالیفائی کیا تھا، جس میں سعید اجمل کے آخری اوور میں مائیکل ہسی نے چار گیندوں پر بازی پلٹ دی تھی اور ان کی اننگز تاریخ کا حصہ بن گئی۔

2014 کےٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ میں جنوبی افریقہ کیخلاف ویرات کوہلی کی بیٹنگ بھی ٹی ٹوئنٹی ورلڈ کپ مقابلوں کی یادگار پرفارمنسز میں سے ایک ہے، بھارت کو آخری دس اوورز میں 93 رنز درکار تھے ، ایسے میں کوہلی نے شاندار اننگز کھیلی اور چوالیس گیندوں پر 72 رنز بناکر اپنی ٹیم کو فتح سے ہمکنار کرایا۔

2016 کے ورلڈ کے کپ میں کارلوس براتھ ویٹ نے انگلینڈ کیخلاف فائنل میں جو کیا ، وہ بھی ناقابل فراموش ہے، ویسٹ انڈیز کو آخری اوور میں 19 رنز درکار تھے اور بین اسٹوکس بولنگ پر تھے، کارلوس براتھ ویٹ نے 4 گیندوں پر 4 چھکے لگا کر اپنی ٹیم کو ٹی 20 کا چیمپئن بنادیا تھا۔

کھیلوں کی خبریں سے مزید