• بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

ٹی ٹوئنٹی ورلڈکپ: بھارت کا پاکستان کو جیت کیلئے 152 رنز کا ہدف


ٹی 20 ورلڈکپ سپر 12 کے چوتھے میچ میں بھارت نے مقررہ 20 اوورز میں 7 وکٹ پر 151 رنز بنائے اور پاکستان کو 152 رنز کا ہدف دیا ہے۔

بھارت کی طرف سے کپتان ویرات کوہلی نے 57 رنز کی ذمے دارانہ اننگز کھیلی جبکہ رشبھ پنت 39 رنز کے ساتھ نمایاں اسکورر رہے۔

میچ کے آغاز میں پاکستانی بولر شاہین شاہ آفریدی نے 6 کے اسکور پر دونوں بھارتی اوپنرز کو پویلین بھیج کر میچ پر گرین شرٹس کی پوزیشن مستحکم بنادی۔

پہلے اوور میں شاہین شاہ آفریدی نے روہیت شرما کو صفر پر میدان بدر کیا تو اننگز کے تیسرے اوور کی پہلی گیند پر شاہین نے کے ایل راہول کو بولڈ کردیا۔

اس کے بعد بھارتی کپتان ویرات کوہلی نے سوریا کمار یادیو کے ہمراہ 25 رنز کی شراکت قائم کی، حسن علی نے محمد رضوان کی  مدد سے سوریا کمار کو 11 کے انفرادی اسکور پر قابو کرلیا۔

یوں بھارت کی ابتدائی تین وکٹیں 31 کے اسکور پر گرگئیں، ایسے میں بھارتی کپتان ویرات کوہلی نے وکٹ پر روکنے اور مزید تحمل کیساتھ کھیلنے کا فیصلہ کیا۔

انہوں نے اس موقع پر آنے والے لیفٹ ہینڈ بیٹسمین رشبھ پنت کو موقع دیا کہ وہ کھل کر کھیلیں، اس دوران دونوں کھلاڑیوں نے اسکور میں مجموعی طور پر 53 رنز کی شراکت قائم کی۔

رشبھ پنت نے 30 گیندوں پر 2 چھکوں اور اتنے ہی چوکوں کی مدد 39 رنز بنائے انہیں شاداب خان نے آؤٹ کیا۔

بھارت کی پانچویں وکٹ 125 کے اسکور پر گری جبکہ رویندر جدیجا 13 رنز بنا کر حسن علی کا دوسرا شکار بن گئے۔ اس کے بعد 133 کے مجموعے پر گرین شرٹس کو بڑی وکٹ مل گئی، ویرات کوہلی کو شاہین شاہ آفریدی نے 57 انفرادی اسکور پر میدان سے واپسی کا راستہ دکھایا۔

ہردیک پانڈیا 11 رنز بنا کر حارث رؤف کا شکار بنے تو بھارت کی 7ویں وکٹ 146 رنز پر گر گئی۔

پاکستان کی طرف سے شاہین شاہ آفریدی نے 3، حسن علی نے 2، شاداب خان اور حارث رؤف نے ایک ایک وکٹ اپنے نام کی۔

واضح رہے کہ پاکستانی کپتان بابراعظم نے بھارت کے خلاف ٹاس جیت کر پہلے فیلڈنگ کا فیصلہ کیا۔

بابراعظم نے ٹاس جینے کے بعد اپنے فیلڈنگ کرنے کے فیصلے سے متعلق کہا تھا کہ میچ میں ڈیو فیکٹر اثر کرے گا، اس لیے ہم نے ہدف کے تعاقب کا فیصلہ کیا ہے۔

اس موقع پر بھارتی کپتان ویرات کوہلی نے کہا تھا کہ ہم ٹاس جیتے تو پہلے بولنگ کرنے کا فیصلہ کرتے، ہماری ٹیم متوازن ہے اور مقابلے کے لیے کافی ہے۔

میچ میں پاکستان کی طرف سے بابراعظم، محمد رضوان، فخر زمان، محمد حفیظ، شعیب ملک، آصف علی، شاداب خان، عماد وسیم، حسن علی، حارث رؤف اور شاہین شاہ آفریدی میدان میں اترے ہیں۔

بھارت کی طرف سے کے ایل راہول، روہیت شرما، ویرات کوہلی، سوریا کمار یادیو، رشبھ پنت، ہردیک پانڈیا، رویندرا جدیجا، بھنشور کمار، ورن چکرورتی، محمد شامی اور جسپرت بھمرا ٹیم میں شامل ہیں۔

واضح رہے کہ یہ پاکستان اور بھارت کے درمیان یہ 9واں ٹی 20 میچ ہے۔

ماضی کی بات کی جائے تو دونوں روایتی حریفوں کے درمیان 8 ٹی 20 میچز ہوچکے ہیں، ان میں 6 مرتبہ بھارت فاتح رہا جبکہ پاکستان نے اسے ایک بار شکست سے دو چار کیا ہے جبکہ ایک میچ ٹائی ہوا ہے۔

دونوں ٹیموں کے کپتانوں میں تجربے اور جوش کا بڑا امتحان ہے، ویرات کوہلی چوتھی بار ورلڈکپ کھیل رہے ہیں جبکہ بابر اعظم کا یہ پہلا ورلڈ کپ ہے اور اسی میں کپتان بھی ہیں۔

دونوں کپتانوں میں کئی باتیں مشترک، دونوں بیٹسمین، دونوں جارح مزاج ہیں، دونوں ہی ہدف کا تعاقب کرنا پسند کرتے ہیں، دونوں میچ ونر اور اپنی اپنی عوام کی آنکھوں کے تارے ہیں۔

کھیلوں کی خبریں سے مزید