• بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

آج سے تین سال پہلے جب کورونا کی وبا پھیلی تو دنیا کو سمجھ ہی نہ آئی کہ یہ کیا ہوا ہے، اِس ضمن میں طرح طرح کی سازشی تھیوریاں گھڑی گئیں ، کسی نے کہا کہ یہ بل گیٹس کا ویکسین بیچنے کا منصوبہ ہے، کسی نے مغربی ممالک کو موردِ الزام ٹھہرایا، کسی نے فائیو جی نیٹ ورک کی لہروں سے اِس کے تانے بانے ملائے، کسی نے پرانی فلم کا کوئی سین نکال کر دکھایا کہ دیکھو سازش پکڑی گئی، کسی نے اسے مسلمانوں کی نا فرمانی کے ساتھ جوڑ دیا، کسی نے کہا کہ یہ وائرس لیبارٹری میں تیار ہوا ہے ، کسی نے کہا کہ حکومت غیر ملکی امداد لینے کے لیے کورونا کے مریضوں کی تعداد بڑھا چڑھا کر بیان کر رہی ہے اور کسی نے سرے سے کورونا وائرس کے وجود کو ہی ماننے سے انکار کردیا۔ آج تین سال بعد یہ تمام سازشی تھیوریاں دم توڑ چکی ہیں۔ ہم میں سے شاید ہی کوئی ایسا ہو جس کا عزیز، دوست یا رشتہ دار اِس وائرس کی زد میں آکر فوت نہ ہوا ہو۔جو لوگ ویکسین لگوانے والوں کا تمسخر اڑاتے تھے انہوں نے بعدمیں بوسٹر ڈوز تک لگوائی اورجو اسے کفا ر کی چال کہتےتھے انہوں نے پھر اسی عطار کے لونڈے سے دوالی۔ یہ سب کچھ ہماری آنکھوں کے سامنے ہوامگر اِس کے باوجود شاید ہی کوئی ایسا جی دار ہو جس نےسازشی نظریے والی غلطی کا اعتراف کیا ہو۔ لوگ کورونا وائرس سے مر گئے مگر انہو ں نے اِس کے وجودکو تسلیم نہیں کیا۔ ایسا کیوں ہوتا ہے؟

کچھ عرصہ پہلےایک غیر ملکی ویب سائٹ کا مضمون نظر سے گزرا جس میں لکھاری نے اُن اسباب پر روشنی ڈالی تھی جس کی بنا پر لوگ سازشی نظریات کو نہ صرف قبول کرتے ہیں بلکہ صدقِ دل سے اس کی ترویج بھی کرتے ہیں۔ لکھاری کا کہنا تھا کہ لوگوں کو ایک ’ولن‘ کی ضرورت ہوتی ہے جس پر وہ اپنی زندگی کی ناکامیوں کا ملبہ ڈال سکیں یا اُن واقعات کا ذمہ دار قرار دے سکیں جو اُن کے لیے تباہ کُن پریشانی کا سبب بنتے ہیں۔ یہ ولن کوئی بھی ہو سکتا ہے، اِس کے لیے ضروری نہیں کہ وہ حقیقتاً کوئی مجرم ہو، کورونا کے معاملے میں بل گیٹس جیسے شخص کو لوگوں نے ولن بناڈالا۔ سازشی نظریات کی وجہ لوگوں میں پائی جانے والی عمومی بے چینی اور اضطراب ہوتا ہے، ہر شخص بات کی گہرائی میں نہیں جاتا، کسی کے پاس اتنا وقت نہیں ہوتا کہ وہ ہر معاملے کی پڑتال کرے اور یہ دیکھے کہ حقائق کیا ہیں؟ اِس کام کے لیے ذہنی مشقت کی ضرورت ہوتی ہے، تعصبات سے بالا تر ہو کر سوچنا پڑتا ہے اور بعض تلخ حقیقتوں کو قبول کرنا پڑتا ہے، یہ کوئی آسان کام نہیں، عام لوگ اِس طرح نہیں سوچتے، وہ عموماً سرسری انداز میں معاملات کو دیکھتے ہیں اور پھر ایک نقطہ نظر اپنا لیتے ہیں، انہیں اُن باتوں میں بہت کشش نظر آتی ہے جن پر وہ آسانی سے یقین کر سکیں اور زیادہ تردد نہ کرنا پڑے اور یوں سازشی نظریات جنم لیتےہیں۔دلچسپ بات یہ ہے کہ عام لوگ ہی نہیں بعض اوقات اچھے خاصے پڑھے لکھے لوگ بھی اِن نظریات کا پرچار کرتے ہیں کہ اِس دنیا کو طاقتور افراد کا ایک گروہ چلا رہا ہے جس کا خفیہ اجلاس یورپ میں واقع کسی دورافتادہ جزیرے پر ہوتا ہے جہاں چند ارب پتی مل کر یہ فیصلہ کرتے ہیں کہ آئندہ امریکہ کا صدر کون ہوگا، یورپی یونین کی سربراہی کسے دی جائے گی،تیل کی قیمت کتنی رکھی جائے گی، پنجاب کا وزیر اعلیٰ کون ہوگا، وغیرہ۔ اسی طرح ماحولیاتی آلودگی کے بارے میں بھی کہا جاتا ہے کہ یہ محض طاقت ور ممالک کی سازش ہے، کرہ ارض کا درجہ حرارت ایک یا ڈیڑھ ڈگری بڑھنے سے کوئی فرق نہیں پڑتا، اصل میں یہ بدمعاش ممالک چاہتے ہیں کہ اُن کے صنعتی انقلاب کے بعد کہیں پسماندہ ممالک ترقی نہ کرلیں۔ یہاں ایک بات بہت اہم ہے کہ کوئی بھی سازشی تھیوری، جھوٹی خبر یا فریب پر مبنی نظریہ تراشنے کے لیے زیادہ تردد نہیں کرنا پڑتا لیکن اسے رَد کرنے کے لیے بے پناہ محنت کرنی پڑتی ہے۔کورونا وبا کی مثال ہی لیتے ہیں، یار لوگوں نے فیس بک پوسٹ بنا ئی کہ کورونا وائرس اسرائیل کی فلاں لیبارٹری میں ایجاد کیا گیا ہے اور نیچے کسی بھی خبر رساں ایجنسی کا نام لکھ دیا۔ اِس قسم کا کام کرنے میں زیادہ سے زیادہ پانچ سے دس منٹ لگتےہیں مگر اسے رد کرنے کے لیے سائنس دانوں کی پوری ٹیم کو سر جوڑ کر بیٹھنا پڑتا ہے۔ چنانچہ سائنس دانوں کو یہ بات ثابت کرنے میں کئی ماہ لگے کہ یہ وائرس انسانی ایجاد نہیں، یہ تحقیق معتبر سائنسی جریدوں میں شائع ہوئی جو عام لوگ نہیں پڑھتے، اوروہاں بھی انہوں نے احتیاط سے کام لیتے ہوئے یوں لکھا کہ’ اب تک کی تحقیق سے یہ بات سامنے آئی ہے کہ۔ ۔۔‘جبکہ سازشی تھیوری ہمیشہ دو ٹوک ہوتی ہے اور عام آدمی کا ذہن انہیں آسانی سے قبول کر لیتا ہے۔

ایک مثالی سازشی تھیوری کیسی ہوتی ہے ؟ ایک مثالی سازشی تھیوری میں وہ تمام مسالہ جات شامل ہوتے ہیں جو کسی بھی عام آدمی کے ذہن کو متاثر کرسکیں، اُس میں مہا حب الوطنی ہوتی ہے، لوگوں کے جذبات کو وطن کی محبت اور مذہب کے نام پر ابھاراجاتا ہے کیونکہ اِن جذبات کے سامنے عقل کام نہیں کرتی۔ وطن کی محبت تو بہت بڑی چیز ہے، عام بندے کی عقل تو خوبصورت عورت کے آگے کام کرنا چھوڑ دیتی ہے، اور اگر اُس سے محبت ہوجائے تو سونے پہ سہاگہ، پھر تو بندے کو نظر ہی کچھ نہیں آتا، پھر چاہے سارا زمانہ آ کر کہے کہ اُس عورت میں دنیا جہان کی خرابیاں ہیں مگر بندےکادماغ بند ہوجاتا ہے، وہ کہتا ہے کہ سار ی دنیا غلط ہوسکتی ہے مگر میری جان من میں کوئی خرابی نہیں ہو سکتی۔اسی طرح ایک آئیڈیل سازشی تھیوری لوگوں کی ناکامیوں کا مداوا کرتی ہے، اُن کے ذہن میں موجود اندیشوں کو مزید پختہ کرتی ہے، اُن کے جذبات کو زبان دیتی ہے۔ لوگوں کو اپنی ناکامیوں اور محرومیوں کا ذمہ دار ٹھہرانے کے لیے ایک دشمن کی ضرورت ہوتی ہے، ایک مثالی سازشی تھیوری انہیں وہ دشمن فراہم کرتی ہے۔

اِن تمام باتوں کا یہ مطلب ہرگز نہیں کہ دنیا میں سازشیں نہیں ہوتیں، زیادہ دور کیوں جائیں، امریکہ اور برطانیہ نے مل کر عراق پر حملہ کیا اور الزام یہ لگایا کہ عراق کے پاس وسیع پیمانے پر تباہی پھیلانے والے ہتھیار ہیں، یہ بات اِس صدی کا سب سے بڑا جھوٹ ثابت ہوئی، خود ہمارے ملک کی تاریخ بھی سازشیوں سے بھری پڑی ہے۔ ایسے میں لوگوں کا کسی سازشی نظریے پر ایمان لے آنا کوئی اچنبھے کی بات نہیں۔ اصل کام یہ ہے کہ کسی بھی سازشی تھیوری کا توڑ کیسے کیا جائے؟ کچھ لوگ یہ سمجھتے ہیں کہ گڈ گورننس ہی مسئلے کا حل اور سازش کا توڑ ہے۔ یہ ایک مغالطہ ہے۔ دنیا میں لوگ مرگئے مگر کورونا وائرس کو نہیں مانا۔ سازشی نظریات کو رد کرنے کی ایک علیحدہ سائنس ہے جس کا ذکر پھر کبھی !

تازہ ترین