آپ آف لائن ہیں
جنگ ای پیپر
بدھ19؍ ذوالحجہ 1440ھ 21؍اگست 2019ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

بہت سال پہلے عطاء الحق قاسمی نے مولانا فضل الرحمٰن کو اپنے ایک کالم میں ’’مولانا ڈیزل‘‘ لکھا تو سیاسی مخالفین نے اُچھل اُچھل کر، کبھی لہرا کر اور کبھی بل کھا کر ’’مولانا ڈیزل‘‘ کی اصطلاح کو طعنے کے طور پر استعمال کرنا شروع کر دیا۔ یہ وہ زمانہ تھا جب مولانا فضل الرحمٰن کو محترمہ بے نظیر بھٹو کی حکومت نے قومی اسمبلی کی قائمہ کمیٹی برائے خارجہ امور کا چیئرمین بنا رکھا تھا اور نواز شریف اس حکومت کے خلاف تحریک نجات چلانے میں مصروف تھے۔ اس تحریک نجات میں شیخ رشید احمد نے ’’مولانا ڈیزل‘‘ کے طعنے کا خوب استعمال کیا اور مسلم لیگیوں نے دل کھول کر مولانا کے خلاف اپنے دل کی بھڑاس نکالی کیونکہ مولانا نے ماضی کے کچھ تلخ تجربات کی روشنی میں نواز شریف کا ساتھ دینے سے انکار کر دیا تھا۔ ڈیزل کا پروپیگنڈا اتنا زیادہ بڑھ گیا کہ مولانا فضل الرحمٰن کے کچھ قریبی ساتھی بھی پریشان ہو گئے۔ ایک دن مفتی نظام الدین شامزئی صاحب نے مجھے پوچھا کہ یہ ڈیزل کا کیا چکر ہے؟ پہلے تو میں ہنس دیا پھر کہا کہ آپ مولانا کے زیادہ قریب ہیں خود ہی پوچھ لیجئے کہ ڈیزل کا کیا چکر ہے؟ یہ سن کر شامزئی صاحب نے قدرے تلخ لہجے میں کہا کہ یہ ایک گھٹیا الزام ہے، میں نے اپنے طور پر تحقیق کر لی ہے مولانا فضل الرحمٰن کا ڈیزل کے کاروبار سے کوئی تعلق نہیں۔ پھر انہوں نے بڑے مشفقانہ انداز میں کہا کہ آپ عطاء الحق قاسمی صاحب سے کیوں نہیں پوچھتے، انہوں نے یہ کیا لکھ دیا؟ قاسمی صاحب سے پوچھا تو انہوں نے ایک اخبار کی خبر کا ذکر کیا، جس میں کہا گیا تھا کہ مولانا فضل الرحمٰن نے ڈیزل کا پرمٹ لیا تھا۔ کس سے لیا کتنے میں لیا یہ تفصیل ان کے پاس بھی نہیں تھی لیکن مولانا نے کبھی قاسمی صاحب کے بارے میں غصے کا اظہار نہیں کیا۔ جب مفتی نظام الدین شامزئی کو کراچی میں شہید کیا گیا تو مولانا فضل الرحمٰن کو کہا گیا کہ آپ ان کے جنازے میں شرکت سے گریز کریں کیونکہ جنازہ پر بھی حملے کا خدشہ ہے۔ مولانا ہر قیمت پر جنازہ میں شریک ہونا چاہتے تھے۔ آخرکار اکرم درانی صاحب سے کہا گیا کہ مولانا فضل الرحمٰن کو کراچی جانے سے روکو۔ درانی صاحب نے بھی کوشش کی لیکن مولانا کراچی پہنچ گئے۔ وہاں پولیس اور رینجرز نے مولانا کو سیکورٹی دینے سے انکار کردیا تو مولانا بغیر سیکورٹی کے جنازے میں پہنچ گئے۔ مولانا فضل الرحمٰن سے کئی دفعہ مجھے بھی اختلاف ہو جاتا ہے لیکن یہ ماننا پڑے گا کہ نہ تو ان کا نام اصغر خان کیس میں آئی ایس آئی سے پیسے لینے والوں میں آیا اور نہ ہی بعد میں انہوں نے آئی ایس آئی سے کبھی پیسے لئے۔

ماضی قریب میں ایک ذمہ دار شخصیت نے نجی گفتگو میں دعویٰ کیا کہ مولانا فضل الرحمٰن نے ایک مغربی ملک سے رقم لی ہے اور اس رقم کے عوض وہ فاٹا کو خیبرپختونخوا میں ضم کرنے کی مخالفت کر رہے ہیں۔ کچھ دن بعد پتہ چلا کہ اس ذمہ دار شخصیت نے مولانا کے ساتھ طویل نشست کی۔ پھر ایک وزیر صاحب نے دعویٰ کیا کہ مولانا فضل الرحمٰن نے وزیراعظم عمران خان کو قتل کرانے کی سازش کی۔ یہ دعویٰ بہت تشویشناک تھا لہٰذا میں نے یہ تشویش مولانا کے سامنے رکھی تو انہوں نے یہ کہہ کر بات ختم کردی کہ میں نے کبھی سیاست میں تشدد کا سہارا نہیں لیا اور ویسے بھی میں عمران خان کو شہادت کا رتبہ دینے کے لیے تیار نہیں۔ میں نے بہت معلوم کیا کہ عمران خان کے قتل کی سازش میں مولانا کا نام کیوں اور کیسے آیا لیکن کوئی تفصیل پتہ نہ چلی لیکن اس حقیقت میں کوئی شک نہیں کہ عمران خان اور مولانا فضل الرحمٰن ایک دوسرے کا ذکر اچھے الفاظ میں نہیں کرتے۔ مولانا صاحب پہلے دن سے عمران خان کی حکومت گرانا چاہتے ہیں لیکن انہیں نواز شریف نے روک دیا تھا۔ نواز شریف نے کہا تھا حکومت گرانا آسان ہے لیکن حکومت چلانا بہت مشکل ہے آپ عمران خان کو حکومت چلانے دیں، وہ خود ہی گر جائے گا۔

مولانا کا موقف تھا کہ اگر عمران خان کو ہم نے نہیں بلکہ وقت اور حالات نے گرانا ہے تو پھر ہم سیاست میں کیوں ہیں؟ مولانا صاحب عمران خان کو گرانے کی تجویز لے کر آصف علی زرداری کے پاس گئے تو انہوں نے بھی کچھ انتظار کا مشورہ دیا تھا۔ مولانا نے انہیں کہا کہ افسوس سیاستدانوں کو بار بار ٹشو پیپر کی طرح استعمال کر کے پھینک دیا جاتا ہے لیکن وہ بار بار استعمال ہونے کے لئے تیار ہو جاتے ہیں۔ مولانا کافی دنوں سے اپنی جماعتی سرگرمیوں میں مصروف تھے۔ انہوں نے شمالی وزیرستان اور سرگودھا میں بڑے بڑے جلسے کئے جو ٹی وی اسکرینوں پر نظر نہ آئے۔ اس دوران ایک صاحب نے انہیں پشتون تحفظ موومنٹ کے خلاف اپنے تعاون کی پیشکش کی تو مولانا نے مسکرا کر معذرت کر لی اور کہا کہ ’’نکّے کے ابا‘‘ سے دور رہنا ہی بہتر ہے۔ مولانا فضل الرحمٰن نے لاہور میں نواز شریف سے ملاقات کی تو اس ملاقات پر کچھ وزراء نے کافی تنقید کی۔ یہ ملاقات پہلے سے طے تھی۔ مولانا فضل الرحمٰن کوٹ لکھپت جیل لاہور میں یہ ملاقات کرنے والے تھے لیکن اس دوران سپریم کورٹ نے انہیں چھ ہفتے کے لئے رہا کر دیا لہٰذا یہ ملاقات جیل کے بجائے نواز شریف کے گھر پر ہوئی۔ مولانا ایک طرف نواز شریف اور آصف علی زرداری سے رابطے میں ہیں تو دوسری طرف حکومت کی اتحادی جماعت بی این پی مینگل کو بھی گلے سے لگا رکھا ہے۔ منگل کو نواز شریف سے ملاقات کر کے نکلے تو مجھے کہا کہ آپ میڈیا والے بہت جلد غیر اہم ہو جائیں گے کیونکہ ہم سوشل میڈیا پر انحصار کرنے لگے ہیں۔ الیکٹرونک اور پرنٹ میڈیا سے صرف مولانا فضل الرحمٰن کو نہیں اور لوگوں کو بھی شکوہ ہے حالانکہ مولانا صاحب کو اچھی طرح معلوم ہے کہ وطن عزیز میں ایک ٹیلی فون کال پر کسی بھی وقت کوئی بھی ٹی وی چینل بند کرا دیا جاتا ہے اور اسی لیے ’’نکّے دا ابا‘‘ شہرت کی بلندیوں کو چھونے لگا ہے۔ لیکن ہم میڈیا والے ٹھہرے کمزور لوگ لہٰذا مولانا کا زور بھی صرف ہم پر چلتا ہے۔

مجھے نہیں معلوم کہ مولانا فضل الرحمٰن اپوزیشن جماعتوں کو متحد کر کے کب تک حکومت گرانے کی کوشش کریں گے لیکن یہ مجھے معلوم ہے کہ حکومت گرانا آسان اور چلانا بہت مشکل ہے۔ مولانا فضل الرحمٰن کی حکومت کے خلاف تحریک صرف سڑکوں پر نہیں بلکہ سوشل میڈیا پر بھی شروع ہونے والی ہے۔ مولانا صاحب کی سوشل میڈیا فورس تشکیل پا چکی ہے اور کچھ دنوں میں متحرک بھی ہو جائے گی لیکن اس فورس کو دوسری فورسز کی طرح گالم گلوچ، الزام اور دشنام سے پرہیز کرنا ہو گا ورنہ سوائے بدنامی کے کچھ حاصل نہ ہو گا۔ سوشل میڈیا پر وہی زبان استعمال کی جانی چاہئے جو آپ اپنے والدین اور بہن بھائیوں کے سامنے استعمال کر سکتے ہیں اگر آپ ایسا نہیں کریں گے تو سوشل میڈیا پر آپ کی تحریک بیکار ہو گی۔ سوشل میڈیا اتنا کارگر ہوتا تو عمران خان کی حکومت پر آج گلی کوچوں میں تنقید نہ ہو رہی ہوتی سیاست کے فیصلے آئندہ بھی گلی کوچے کریں گے سوشل میڈیا نہیں۔

(کالم نگار کے نام کیساتھ ایس ایم ایس اور واٹس ایپ رائےدیں00923004647998)