آپ آف لائن ہیں
جنگ ای پیپر
بدھ13؍ربیع الثانی 1441ھ 11؍دسمبر 2019ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
تازہ ترین
آج کا اخبار
کالمز

’سرفنگ ‘ کراچی کے ساحلوں پر ایک نئے کھیل کا بڑھتا رجحان

مستنصر حسین، محمد صہیب

اگر آپ کراچی کے مضافات میں واقع ساحلوں پر گئے ہیں تو کیا کبھی آپ کی نظر ایسے لوگوں پر پڑی جو سمندر میں بلند ہوتی لہروں پر تختوں کی مدد سے لہرا رہے ہوں؟

اگر آپ کا جواب ہاں ہے، تو یہ افراد دراصل دنیا بھر میں مقبول کھیل '’سرفنگ‘ سے لطف اندوز ہو رہے ہیں۔

یہ کھیل دیکھنے میں جتنا پرسکون لگتا ہے، اسے عملی طور پر انجام دینا اتنا ہی مشکل ہے۔ اس کھیل کو دیکھ کر کوئی انجان بندہ یہ سوچنے پر مجبور ہو جاتا ہے کہ آخر یہ سرفرز اس تختے پر اپنا توازن کیسے برقرار رکھ سکتے ہیں،تاہم آپ کے ذہن میں یہ سوال بھی ضرور ابھرے گا کہ سرفنگ کا کھیل کراچی کے پانیوں تک کیسے پہنچا؟

سرفنگ ایک ایسا کھیل ہے، جس میں صرف بورڈ یعنی خصوصی تختے پر قدم جما کر سمندی لہروں پر لہرا یا جاتا ہے۔

اس کھیل کو بغیر کسی خطرے کے اپنانے کے لیے تیراکی میں مہارت حاصل کرنا لازمی ہے۔ اس کی وجہ یہ ہے کہ سرفنگ کے دوران کھلاڑی اکثر پانی میں گرتے ہیں اور یہ بھی ہو سکتا کہ تختہ دور ہو جائے۔

سرفنگ کرتے وقت سب سے پہلے ایک سرف بورڈ پر لیٹ کر اس سے کشتی کا کام لیا جاتا ہے اور اپنے ہاتھوں کو چپوؤں کی طرح چلا کر پانی میں داخل ہوا جاتا ہے

پھر سرفر ایک شکاری کی طرح بڑی لہر کی تاک میں بیٹھ جاتا ہے اورپانی پر’ 'فلوٹ‘ یعنی تیرتے ہوئے انتظار کرتا ہے،جیسے ہی کوئی لہر آتی ہے تو وہ فوراً اپنی سمت تبدیل کرتا ہے، جس میں لہر اس کی پشت پر ہوتی ہے اور ایسے لگتا ہے کہ جیسے وہ لہر سے بچ کر بھاگنے کی کوشش میں ہے۔پلک جھپکنے میں وہ اچھل کر بورڈ اپنے پیروں تلے لے آتا ہے اور پھر وہی لہر اس کے قدموں تلے ہوتی ہے۔جب تک لہر ہموار نہیں ہو جاتی سرفر اس کے کناروں پر اپنا سفر جاری رکھتا ہے البتہ اس سارے مرحلہ میں اپنا توازن برقرار رکھنا بنیادی شرط ہے

عام طور پر تو سرفنگ تفریح کی غرض سے کی جاتی ہے۔ تاہم مغربی دنیا میں سرفنگ کے مقابلے عام ہیں۔

مبارک ولیج میں سرفنگ کرتے زیادہ تر نوجوان ایک ماہی گیر خدا گنج شاہ کے زیرِ نگرانی 'مبارک گنج سرفنگ کلب میں تربیت لے رہے ہیں

کراچی کے نواح میں واقع ہاکس بے اور مبارک ولیج کے ساحل اس کھیل کے لیے سازگار ہیں۔

مبارک ولیج اپنے ماہی گیروں کی وجہ سے مشہور ہے۔ سنہ 2014 میں پاکستان فشر گروپ فورم کے غلام مصطفیٰ بھورگے نے خدا گنج سے رابطہ کیا کہ ان کے دوست ڈاکٹر آفتاب عزیز صدیقی ان کے گاؤں مبارک ولیج میں کچھ سرف بورڈز دینا چاہتے ہیں، کیا وہ انھیں استعمال میں لا سکیں گے؟ خدا گنج نے فوراً حامی بھر لی۔

خدا گنج نے صرف تین سرف بورڈز اور 28 ممبرز سے آغاز کیا۔ تیراکی تو ان کے لیے بہت آسان تھی لیکن سرفنگ کے کھیل کی نوعیت مختلف ہونے کے باعث انھیں آغاز میں مشکلات کا سامنا کرنا پڑا۔نہ کوئی کوچنگ تھی نہ نگران تھا، بس انٹرنیٹ کے سہارے اس فن میں مہارت حاصل کرنے کی کوشش کی،پھر دیکھتے ہی دیکھتے وہ سرفنگ میں مہارت حاصل کرنے لگے اور یہ کارواں بڑھتا چلا گیا۔

پاکستان میں پانی سے منسلک کھیلوں سے نا آشنائی کے باعث ان میں استعمال ہونے والا سامان مارکیٹ میں دستیاب نہیں ہوتا،یہی وجہ ہے کہ پاکستان میں سرف بورڈ اور اس پر لگنے والی ویکس (موم) کی خریداری میں سرفرز کو شدید مشکلات کا سامنا کرنا پڑتا ہے۔

ہاکس بے پر ایسی ہی ایک سرفنگ اکیڈمی چلانے والے امریکی نژاد پاکستانی سرفر ہاشم احمد نے ان مشکلات کے باوجود لوگوں کو سرفنگ سکھانے کے لیے ایک سرفنگ ا سکول بنایا۔ان کا سرفنگ اسکول ڈی کے سی سرفنگ کے نام سے جانا جاتا ہے۔وہ بتاتے ہیں ’ہم یا تو بیرونِ ملک کسی سے کہہ کر یہ سرف بورڈ منگواتے ہیں، یا پھر کبھی کبھار یہاں باہر سے آئے سامان میں سے استعمال شدہ سرف بورڈ مل جاتے ہیں۔‘

اس کے علاوہ ان سرف بورڈز پر ویکس یعنی موم لگائی جاتی ہے تاکہ سرفر کے پاؤں بورڈ پر مضبوطی سے جم سکیں۔ ان کا کہنا ہے کہ وہ بھی پاکستان میں دستیاب نہیں اور اکثر نچلے درجے کی ویکس لگانی پڑتی ہے۔ اس ویکس کی خریداری کے لیے بھی آپ کو بیرونِ ملک سے آنے والے پاکستانیوں کی راہ تکنی پڑتی ہے۔

وہ کہتے ہیں کہ ’پاکستان میں سرفنگ کرنا بہت مشکل ہے کیونکہ آن لائن آرڈر ہوتا نہیں ہے، اور اگر ہوتا بھی ہے تو آپ کو یہ معلوم نہیں ہوتا کہ سرفنگ بورڈ کس قسم کا آئے گا۔‘

خدا گنج بھی اس بات کی تصدیق کرتے ہیں۔ تاہم وہ بتاتے ہیں کہ ڈاکٹر عزیز اور ان کے دوستوں نے انھیں کبھی مایوس نہیں کیا۔

خدا گنج بتاتے ہیں: ’سرفنگ کا سامان پاکستان میں نہیں ملتا، اگر بورڈ ٹوٹ جائے تو آپ اس کی مرمت نہیں کروا سکتے، یہاں تک کہ ایک خاص قسم کا رسّا بھی یہاں دستیاب نہیں ہے۔ سب کچھ باہر سے منگوانا پڑتا ہے۔‘

سرفرز عام طور پر تیز رفتار لہروں کے باعث جون اور جولائی میں سرفنگ کرنے سے گریز کرتے ہیں۔ سرفنگ کا سیزن مارچ کے آخر میں شروع ہو جاتا ہے اور اگست سے اکتوبر تک چلتا ہے، جبکہ سردیوں میں سرفنگ نہیں کی جاتی۔‘

ہاشم احمد پاکستان میں لوگوں کی پانی سے منسلک کھیلوں سے دوری سے متعلق بات کرتے ہوئے کہتے ہیں کہ پاکستان کی ساحلی پٹی کافی طویل ہے، جہاں آپ سرفنگ کر سکتے ہیں لیکن لوگ اس بات کا فائدہ نہیں اٹھاتے۔

کئی دفعہ کوسٹ گارڈ آ کر حوصلہ شکنی کرتے ہیں۔ پچھلے اتوار کو ٹشان کے ساحل پر کوسٹ گارڈ آ گئے اور انھوں نے ہمیں سرفنگ کرنے سے روکا اور کسی دوسری جگہ جانے کو کہا۔‘

وہ کہتے ہیں کہ ’اگر آپ سیاحت کے فروغ کی بات کرتے ہیں تو آپ کو سیاحوں کے لیے دوستانہ ماحول فراہم کرنا پڑے گا اور سرفنگ سیاحوں کو اپنی طرف متوجہ کرنے کا ایک اہم ذریعہ ہے۔‘

کولاچی کراچی سے مزید