آپ آف لائن ہیں
پیر10؍صفر المظفّر 1442ھ 28؍ستمبر 2020ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

9 مہلک ترین وائرس جنہوں نے دنیا میں تباہی مچا دی

لاہور ( صابرشاہ) آج تک کم از کم نو مہلک وائرسوں نے زمین پربسنے والوں پر تباہی مچا دی ، جنگ اور جیوگروپ کی تحقیق سے ثابت ہوتاہے کہ لاکھوں افراد جان سے ہاتھ دھوبیٹھے۔ 

انفلوئنزا وبائی مرض یا ہسپانوی فلو نےجنوری 1918 تا دسمبر 1920 تک پوری دنیا میں 500 ملین افراد کو متاثر کیا تھا ،جس کی لپیٹ میں آکر 50 سے 100 ملین افراد ہلاک ہوگئے تھے۔ ایک صدی قبل انسانی تاریخ کی اس بدترین وبامیں اس وقت کی کل آبادی کے3سے 5فیصدافراد مرگئے تھے۔

’’جرنل آف ٹرانسنیشنل میڈیسن کے مطابق اس فلو کے پھیلنے سے 24 ہفتوں میں ہلاک ہونے والوں کی تعداد24 سالوں میں ایچ آئی وی ایڈز سے مرنے والوں سے زیادہ تھی۔

سائنس دانوں کا خیال ہے کہ وائرس کی وجہ سے وبائی بیماری نے 12،000 سال قبل تباہی پھیلانا شروع کردی تھی جب انسانوں نے زرعی آبادیوں کی نشوونما شروع کی تھی۔

یو ایس نیشنل لائبریری آف میڈیسن اینڈ نیشنل انسٹی ٹیوٹ آف ہیلتھ کا کہنا ہے کہ ایسی 219 اقسام کے وائرس پائے جاتے ہیں جوانسانوں متاثر کرسکتے ہیں،ان میں پیلے نخار کاپہلاوائرس 1901 میں دریافت ہوا،اور اس وقت 3سے 4 وائرس ہرسال دریافت ہوتے ہیں۔

 1892 میں تمباکو کے موزیک وائرس اور 1898 میں پاؤں اور منہ کے مرض کے وائرس کی دریافت کے بعد ، انسانوں میں پائے جانے والا پہلا فلٹریٹ ایجنٹ 1901 میں پیلے بخار کا وائرس تھا۔

نیو یارک میں واقع سائنس نیوز ویب سائٹ ’’لائیوسائنس‘‘ پر شائع ہونے والے اکتوبر2016 کے مضمون کے مطابق انسان ہماری نسل سے پہلے ہی وائرس سے لڑ رہا ہے۔

یہاں تک کہ اس کی جدید شکل میں بھی ترقی ہوچکی ہے۔ویب سائٹ نے مزید کہا کچھ وبائی بیماریوں کی ویکسین اور اینٹی وایرل ادویات نے ہمیں انفیکشن کو وسیع پیمانے پر پھیلنے سے روکااور بیمار لوگوں کو صحت یاب ہونے میں مدد فراہم کی ہے۔

یہ بھی دیکھئے : کورونا وائرس سے متاثرین کی تعداد 2 ہزار سے تجاوز کر چکی ہے


ایک بیماری چیچک جس کے ہم خاتمے کے قابل ہوچکے ہیں، اور دنیا کو نئے کیسوں سے نجات دلاتے ہیں۔لائیو سائنس کے مطابق دنیامیں 9 مہلک ترین وائرس ماربرگ ، ایبولا ، ریبیج ، ایچ آئی وی ، چیچک ، ہنٹا وائرس ، انفلوئنزا ، ڈینگی اور روٹا وائرس رہے ہیں۔

یہاں ان وائرسوں کی کچھ تفصیلات پر درج ہیں ۔ماربرگ وائرس، سائنس دانوں نے اس وائرس کی نشاندہی 1967 میں کی تھی ، جب جرمنی میں لیبارٹری کے کارکنوں کے درمیان چھوٹی وباپھیل گئی تھی ، جو یوگنڈا سے درآمد شدہ بندروں کی وجہ سے پھیلی۔ 

پہلے وباء میں اموات کی شرح 25 فیصد تھی ، لیکن جمہوریہ کانگو میں 1998-2000 کے پھیلنے کے ساتھ ساتھ انگولا میں 2005 کے وباء میں یہ ہلاکتوں کی شرح 80 فیصد سے زیادہ تھی۔

ورلڈ ہیلتھ آرگنائزیشن کے مطابق1976 میں سوڈان اور کانگو میں ایبولا پھیل گیاتھا۔ایبولا خون یا جسم کے دیگر رقیقوں ، یا متاثرہ افراد یا جانوروں سے بافتوں کے ذریعے ذریعے پھیلتا ہے۔ ایبولا ریستن ، لوگوں کو بیمار بھی نہیں کرتا ہے لیکن اس سےاموات کی شرح 50 فیصد تک ہے ، اور سوڈان کے تناؤ میں یہ 71 فیصد تک ہے۔

ڈبلیو ایچ او کے مطابق مغربی افریقہ میں وبا پھیلنے کا آغاز 2014 کے اوائل میں ہوا تھا ، اور آج تک اس بیماری کی سب سے بڑی وباپیچیدہ ہے۔

ریبیز، اگرچہ پالتو جانوروں کے لئے ریبیز ویکسین جو 1920 کی دہائی میں متعارف کروائی گئی تھی ، نے اس مرض کو ترقی یافتہ دنیا میں انتہائی کم کرنے میں مدد فراہم کی ہے ، لیکن یہ ہندوستان اور افریقہ کے کچھ حصوں میں ایک سنگین مسئلہ بنی ہوئی ہے۔ 

اگراس وائرس کے شکارہونے کے بعد آپ علاج نہیں کرواتے ہیں تو آپ کے مرنے کا 100 فیصد امکان ہے۔ایچ آئی وی / ایڈز جدید دنیا میں سب سے مہلک وائرس ہوسکتا ہے۔ ایک اندازے کے مطابق 1980 کی دہائی کے اوائل میں اس بیماری کی پہلی بار شناخت ہونے کے بعد سے 36 ملین افراد ایچ آئی وی سے مر چکے ہیں۔ 

طاقتور اینٹی وایرل منشیات نے لوگوں کے لئے ایچ ای وی کے ساتھ سالوں تک جینا ممکن بنایا ہے ، لیکن یہ بیماری بہت کم اور درمیانی آمدنی والے ملکوں کو تباہ کرتی رہتی ہے ، جہاں 95 فیصد نئے ایچ آئی وی انفیکشن ہوتے ہیں۔ افریقہ میں ہر 20 میں سے تقریبا 1 بالغ فردمیں ایچ آئی وی پایاجاتاہے۔ 

چیچک، 1980 میں عالمی ادارہ صحت نے دنیا کو چیچک سے پاک قرار دے دیا تھا۔ لیکن اس سے پہلے انسان ہزاروں سال تک چیچک سے لڑتا رہا ، اور اس بیماری نے ہر 3 میں سے 1 متاثرہ شخص کو ہلاک کیا۔ 

اس سے بچ جانے والےگہرے ، مستقل داغ اور اکثر اندھے پن کاشکارہوگئے۔ مورخین کاخیال ہے کہ امریکہ کی 90 فیصد مقامی آبادی یورپ کے متلاشیوں کے ذریعے متعارف کرائے گئے چیچک سے مر گئی ہے۔

صرف 20 ویں صدی میں چیچک نے 300 ملین افراد کو ہلاک کیا۔ہنٹا وائرس، ہنٹا وائرس پلمونری سنڈروم (ایچ پی ایس) نے پہلی بار امریکامیں 1993 میں اس وقت توجہ حاصل کی جب سانس کی قلت پیدا ہونے کے چند دن میں ہی صحت مند جوڑے کی موت ہوگئی تھی۔ 

کچھ مہینوں کے بعد صحت حکام نے متاثرہ افراد میں سے ایک کے گھر میں رہنے والے ہرن ماؤس سے ہنٹا وائرس دریافت کیا۔ امریکی بیماریوں کے قابو پانے اور روک تھام کے مراکز کے مطابق امریکہ میں 600 سے زیادہ افراد اب ایچ پی ایس کے مرض میں مبتلا ہوچکے ہیں اور 36 فیصد اس مرض سے ہلاک ہوگئے ہیں۔ ظاہر ہے کہ 1950 کی دہائی کے اوائل میں کوریائی جنگ کے دوران ہی ہنٹا وائرس نے ایک وبا پھیلا دی تھی۔ 

اور کلینیکل مائکروبیولوجی جائزہ نامی جریدے میں شائع ہونے والے 2010 کی رپورٹ کے مطابق 3000 سے زیادہ فوجی متاثرہوئے ، اور ان میں سے 12 فیصد کی موت ہوگئی۔ انفلوئنزا، ڈبلیو ایچ او کے مطابق فلوکے سیزن میں اس بیماری سے عالمی سطح پر 500،000 تک افراد ہلاک ہوجاتے ہیں ، لیکن کبھی کبھار جب کوئی نیا فلو سامنے آتا ہے تو وبائی بیماری کا پھیلاؤ تیزہوتا ہے اور اکثر موت کی شرح تیز ہوتی ہے۔ 

ڈینگی، ڈینگی وائرس پہلی بار فلپائن اور تھائی لینڈ میں 1950 کی دہائی میں نمودار ہوا تھا ، اور اس کے بعد سے وہ پوری دنیا میں پھیل چکا ہے۔ دنیا کی اب تک کی آبادی کا 40 فیصد ان علاقوں میں رہتا ہے جہاں ڈینگی کا مرض موجود ہے ،یہ وائرس مچھروں سے پھیلتاہے،اورگرمی پڑنے کے ساتھ ساتھ اس سے کےزیادہ پھیل جانے کا امکان ہے۔

ڈبلیو ایچ اوکے مطابق ڈینگی بخار میں اموات کی شرح کچھ دوسرے وائرس سے کم ہے ۔وائرس ایبولا جیسی بیماری کا سبب بن سکتا ہے جسے ڈینگی ہیمرجک بخار کہا جاتا ہے ، اور اگر علاج نہ کیا گیا تو اس کی شرح اموات 20 فیصد ہے۔روٹا وائرس، بچوں اور نو عمر بچوں میں اسہال سے متعلقہ شدید بیماری کی سب سے اہم وجہ روٹا وائرس ہے، بچوں کواس سے بچانے کے لئے اب 2 ویکسین دستیاب ہیں۔ 

اگرچہ ترقی یافتہ دنیا میں بچے روٹا وائرس کے انفیکشن سے شاذ و نادر ہی مر جاتے ہیں ، یہ بیماری ترقی پذیر دنیا میں ایک قاتل ہے ، جہاں ری ہائڈریشن کے علاج کی سہولت دستیاب نہیں ہیں۔ عالمی ادارہ صحت کا اندازہ ہے کہ 2008 میں روٹا وائرس کے انفیکشن سے 5 سال سے کم عمر کے 453،000 بچے فوت ہوگئے تھے۔ 

لیکن جن ممالک نے یہ ویکسین متعارف کروائی ہے ان میں روٹا وائرس سے اموات میں تیزی سے کمی واقع ہوئی ہے۔جہاں تک کورونا وائرس کا تعلق ہے ’’جنگ گروپ اور جیو ٹیلی ویژن نیٹ ورک‘‘ کی تحقیق سے پتہ چلتا ہے کہ وہ میملز اور پرندوں میں ایک بیماری کی وجہ سے ہیں جس میں گائے اور سور میں اسہال شامل ہے ، اور مرغیوں میں اوپری سانس کی بیماری بھی ہے۔ 

ان میں سے کچھ اقسام سنجیدہ ہیں ، اگرچہ مشرق وسطی کے 858 افرادایم آر ایس سے ہلاک ہوچکے ہیں ، جو پہلے 2012 میں سعودی عرب اور پھر مشرق وسطی ، افریقہ ، ایشیاء اور یورپ کے دوسرے ممالک میں ظاہرہواتھا۔ 

اپریل 2014 میں ایم ای آرایس کےشکار پہلے امریکی کو انڈیانا میں ہسپتال میں داخل کیا گیا تھا اور ایک اور کیس فلوریڈا میں رپورٹ کیا گیا تھا۔ دونوں سعودی عرب سے واپس آئے تھے۔ مئی 2015 میں کوریا میں ایم ای آرایس کا وبا پھیل گیا تھا ، جو جزیرہ عرب کے بعدسب سے بڑی وباتھی۔

 2003 میں شدید سانس لینے کے سنڈروم (سارس) پھیلنے سے 774 افراد فوت ہوگئے تھے۔ 2015 کے بعد سے اس مخصوص سنڈروم سے متعلق معاملات کے بارے میں مزید کوئی اطلاعات موصول نہیں ہوئیں۔ 

اگرچہ ایم ای آرایس اور سارس کورونا وائرس کی قسمیں ہیں۔ لیکن جنوری 2020 کے اوائل میں عالمی ادارہ صحت نے چین میں اس وائرس کی ایک نئی قسم کی نشاندہی کی ہے ۔جس پر دنیا بھر میں میڈیا میں گرما گرم بحث کی جارہی ہے۔

دنیا بھر سے سے مزید