آپ آف لائن ہیں
ہفتہ8؍ صفر المظفّر 1442ھ 26؍ستمبر 2020ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

یوم استحصال کشمیر پر عالمی میڈیا کی بھارتی مظالم پر شدید تنقید

بین الاقوامی میڈیا پر یومِ استحصال کے حوالے سے مقبوضہ کشمیر میں جاری بھارتی بربریت پر شدید تنقید کی گئی ہے تاہم چند ایک نے مقبوضہ وادی میں انسانی حقوق کی خلاف ورزیوں پر خود کو غیر جانبدار رپورٹنگ تک محدود رکھا۔

برطانوی جریدے گارجین نے ناول نگار، مصنفہ اور سیاسی کارکن اروندھتی رائے اور کشمیری ناول نگار مرزا وحید کے مضامین شائع کیے، جو کہ بھارتی حکومت کے غیر انسانی ہتھکنڈوں اور مقبوضہ کشمیر میں جاری نسل کشی اور قتل عام کی تفصیلات پر مبنی ہیں۔

مرزا وحید نے بتایا کہ کس طرح مودی حکومت مقبوضہ کشمیر کی زرخیز زمین اور معدنی ذخائر کو بیچ رہی ہے اور کس طرح مقبوضہ وادی میں بچوں اور خواتین کے تحفظ کے ادارے ختم کر دیئے گئے ہیں۔ اروندھتی رائے کی رائے میں مودی حکومت کشمیری ثقافت کو نیست و نابود کر رہی ہے۔

الجزیرہ نے یومِ استحصال کشمیر پر رپورٹنگ کے ساتھ ساتھ مقبوضہ کشمیر کی معاشی تباہی پر توجہ دیتے ہوئے کہا کہ کسی بھی نوآبادیاتی منصوبے کی طرح مودی حکومت مقبوضہ کشمیر میں ترقی کے جھوٹے بیانیے کو وہاں جاری ظلم و بربریت کا جواز بنا رہی ہے۔

امریکی میڈیا سی این این کی توجہ اس بات پر مرکوز رہی کہ کیسے پچھلے ایک سال میں صحافیوں کی ہلاکت اور اُن پر جھوٹے مقدمات کے نتیجے میں مقبوضہ وادی کی ابتر صورت حال پر رپورٹنگ کی جرات کرنے والوں کی تعداد انتہائی کم رہ گئی ہے۔

ترکی کے سرکاری میڈیا گروپ ٹی آر ٹی ورلڈ نے اپنی ویب سائٹ پر ایک سال کے دوران مقبوضہ کشمیر کی بدتر ہوتی ہوئی صورت حال پر تصویری رپورٹ شائع کی۔

 ان میں انسانی حقوق کی پامالیوں اور بھارتی فوج کے مظالم کو قدم بہ قدم دیکھا جا سکتا ہے۔ دیگر مضامین میں بتایا گیا ہے کہ کس طرح بھارتی قبضے کے ایک سال میں ہی مقبوضہ وادی کی پہچان اور شناخت کو مسخ کر دیا گیا ہے۔

جرمن نشریاتی ادارے ڈوئچے ویلے نے اپنی رپورٹ میں بھارتی قبضے کے بعد سے مقبوضہ وادی میں بندوق کی نوک پر ہونے والی سیاسی معذوری اور معاشی تباہی جیسی تبدیلیوں کا جائزہ لیا ہے۔

بین الاقوامی خبریں سے مزید