آپ آف لائن ہیں
اتوار2؍صفر المظفّر 1442ھ 20؍ستمبر 2020ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

یورپین یونین اور نیٹو کا بین الافغان مذاکرات کا خیرمقدم

یورپین یونین اور نیٹو نے افغانستان کے متحارب گروپوں کے درمیان آج باہمی مذاکرات شروع ہونے کا خیرمقدم کیا ہے۔

اس حوالے سے یورپین یونین کی جانب سے خارجہ امور کے سربراہ جوزپ بوریل نے ویڈیو اور نیٹو کے سیکٹری جنرل یین سٹولٹن برگ نے اپنے علیحدہ علیحدہ پیغامات جاری کئے ہیں۔

اپنے پیغامات میں انہوں نے اس عمل کو خوش آمدید کہتے ہوئے کہا کہ اب جبکہ باہمی مذاکرات شروع کرنے کی تمام شرائط پوری کی جا چکی ہیں تو ایسے میں مذاکرات میں شریک افغان حکومت اور طالبان امن کے حصول کے اس موقع کو ہاتھ سے نہ جانے دیں اور اس مذاکراتی عمل کو سچے طریقے سے اپنا بنا لیں۔

جوزپ بوریل نے مزید مطالبہ کیا کہ فریقین اس گفتگو کے آغاز کے پہلے مرحلے کے طور پر سارے افغانستان میں فوری جنگ بندی کا اعلان کریں ۔

انہوں نے کہا کہ اب جبکہ افغانستان میں مذاکرات کے آغاز کیلئے تمام شرائط پوری ہو چکی ہیں تو صرف تشدد میں کمی کافی نہیں۔

جوزپ بوریل نے اس موقع پر اس عمل میں مدد دینے والے تمام ممالک سے بھی اپیل کی کہ وہ افغانستان کی آزادی اور خود مختاری کا خاص طور پر احترام کریں، اسی کے ساتھ ہی ان مذاکرات میں اس بات کا بھی خیال رکھا جائے کہ 2001 سے لیکر خواتین کے حقوق سمیت سماجی بہتری کے معاملات پر افغان سوسائٹی آگے بڑھ چکی ہے ، اس میں کمی نہ آئے اور افغانستان کے کمزور طبقات کا فائدہ ہو۔

نیٹو سیکٹری جنرل نے مزید کہا کہ نیٹو افغانستان میں اپنا ریزولیوٹ سپورٹ مشن جاری رکھے گا جو کہ لڑائی کیلئے نہیں بلکہ افغان فورسز کی ٹریننگ اور مشاورت کا عمل انجام دے رہا ہے۔

بین الاقوامی خبریں سے مزید