آپ آف لائن ہیں
جمعرات17؍ربیع الثانی 1442ھ3؍دسمبر 2020ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

آپ کے مسائل اور اُن کا حل

سوال :- ہماری دکان ہارڈویئر کی ہے۔ ہمارے پاس آنے والے گاہکوں میں سے بعض گاہک دو سو روپے کی کوئی چیز خریدتے ہیں اور جب ہم بل بنانے لگتے ہیں تو وہ ہم سے کہتے ہیں کہ آپ ڈھائی سو کا بل بنادیں اور بساوقات حوالہ دیتے ہیں کہ ہم نے کہیں اور جگہ سے چیز خریدی ہے، اسے بھی اس بل میں شامل کردیں ۔

تو کیا ہمارے لیے جب کہ پتا نہ ہو کہ اس نے دوسری جگہ سے سامان خریدا ہے یا نہیں؟ اپنی دکان کے بل میں اضافی پیسے شامل کرناجائز ہے یانہیں ؟ اسی طرح کبھی ہم اس گاہک سے جو کہ عام طور پر کاریگر ہوتا ہے اورکسی کے لیے سامان لینے آیا ہوتا ہے ،ہم اسےکچھ رعایت دیتے ہیں لیکن ہمیں یقین ہوتا ہے کہ وہ اس رعایت کو اپنے لیے سمجھ کر رکھ لیتے ہیں تو ایسا کرنا کیا ان کے لیے ازروئے شریعت جائز ہے ؟

جواب :- جو چیز آپ سے خریدی نہیں گئی ،اسے بل میں شامل کرنا جھوٹ اور حرام ہے، اس سے گریز کریں۔ سامان کی خریداری پر جو رعایت آپ دیتے ہیں، وہ رعایت سامان کے مالک کے لیے ہوتی ہے، کاریگر کا اسے اپنے لیے رکھ لینا جائز نہیں ۔(الجوہرۃ النیرۃ کتاب الوکالۃ : 1/300۔ الفقہ الحنفی وادلتہ ، ضمان الوکیل : 2/134)