آپ آف لائن ہیں
پیر7؍ ربیع الثانی1442ھ 23؍ نومبر2020ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

سادہ لوح افراد کو دوسرے ملکوں میں جا کر پیسہ کمانے اور راتوں رات امیر بن جانے کے دلفریب جھانسے دینے کی آڑ میں انسانی اسمگلنگ دنیا بھر میں ایک منظم نیٹ ورک کی حیثیت اختیار کر چکی ہے وطن عزیز میں اس کے خلاف کامیابی حاصل نہ کرنا قانون نافذ کرنے والے اداروں کی کارکردگی پر ایک سوالیہ نشان ہے۔ جعلی ریکروٹنگ ایجنسیوں کے ورغلا کر بھیجے جانے والے افراد آئے روز کسی نہ کسی ملک کی سرحد پار کرتے ہوئے پکڑے جاتے ہیں بہت سے پاکستانی اب تک کشتیاں ڈوبنے کے حادثات کی نذر بھی ہو چکے ہیں جبکہ سیکڑوں نہایت کسمپرسی کی حالت میں مختلف ملکوں کی جیلوں میں قید ہیں۔ اتوار کے روز ایرانی حکام نے سفری دستاویزات کے بغیر غیر قانونی طور پر یورپ جانے کی کوشش کرنے والے 500پاکستانی شہری گرفتار کرکے سرحدی شہر تفتان میں راہداری گیٹ پر پاکستانی حکام کے حوالے کر دیئے جن میں سے 77کا خیبرپختونخوا، 399کا پنجاب، پانچ کا سندھ، دو کا بلوچستان جبکہ 17کا تعلق آزاد کشمیر سے ہے۔ یہ صورتحال عالمی سطح پر ملک کی بدنامی کا باعث بن رہی ہے اور مختلف واقعات میں ملوث پاکستانیوں کی وجہ سے آئے روز بیرون ملک قومی سفارت کاروں کو حزیمت کا سامنا کرنا پڑتا ہے جبکہ اندرون ملک یہ معاملہ محض سطحی کارروائی تک محدود رہتا ہے جس سے انسانی اسمگلر دندناتے پھر رہے ہیں۔ ذرائع کے مطابق پاکستان کے اندر یا ملک سے باہر روزانہ اوسطاً 100سے 150کی تعداد میں 8سے 30سال عمر کی لڑکیوں کی تجارت بھی ہو رہی ہے۔ اس حوالے سے انسانی اسمگلنگ روکنے سے متعلق ایک بل قومی اسمبلی میں زیر التوا پڑا ہے۔ معاملے کی سنگینی کے پیش نظر ضروری ہو گا کہ اسے سرد خانے سے نکال کر موثر قانون کی شکل دی جائے۔

اداریہ پر ایس ایم ایس اور واٹس ایپ رائے دیں00923004647998

تازہ ترین