آپ آف لائن ہیں
پیر23؍ رجب المرجب 1442ھ 8؍مارچ2021ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

انتہاپسند نظریات یادداشت کے ناقص عمل اور سنسنی کی تلاش کے رجحانات سے منسلک ہیں

لندن ( پی اے ) تحقیق سے پتہ چلتا ہے کہ انتہا پسندنظریات ناقص کام کرنے والی یادداشت ،تسلسل اور سنسنی کی تلاش کی طرف رجحانات سے منسلک ہیں، کیلیفورنیا میں کیمبرج یونیورسٹی اورسٹینفورڈ یونیورسٹی پر ہونے والی اس تحقیق سے ظاہر ہوتا ہے کہ علمی اور شخصی تشخیص نظریاتی ترجیحات کی مضبوط پیش گوئی کر سکتی ہیں۔محققین کی موجودہ تحقیق کی بنیادسٹینفورڈ یونیورسٹی کی ایک سابقہ تحقیق پر رکھی گئی تھی ، جس میں سیکڑوں شرکاء نے 37 مختلف علمی اہداف انجام دیئے اور 2016اور 2017 میں 22مختلف شخصیات سے سروے کئے ۔ انہوں نے گذشتہ سٹڈی کے 334شرکاء کی خدمات حاصل کیں جو کہ تمام امریکہ کے رہائشی تھے تاکہ 2018 میں مزید 16سروے مکمل کریں۔اس تحقیق میں نظریات کی طرف رویوں اور احساس کی طاقت کا تعین کرنا تھا۔ تحقیق میں کسی فرد کے نظریاتی گروہ کی حمایت میں تشدد کی توثیق سمیت ، انتہا پسندانہ رویوں کوکمزور ترین ورکنگ یادداشت سے منسلک کیا گیا ہے۔سٹڈی سے پتہ چلتا ہے کہ انتہا پسندانہ رویہ بھی آہستہ آہستہ’’ادراک کی حکمت عملی‘‘ ، شکل اور رنگ جیسے بدلتے ہوئے محرکات کے لاشعوری عمل اور سنسنی کی تلاش کے رجحانات سے بھی وابستہ ہے۔محققین نے اس نفسیاتی نشانات کی نقشہ سازی کی جس میں شدید سیاسی قدامت پسندی ، اور ساتھ ہی تعصب اور ہٹ دھرمی بھی شامل ہے - ایسے

افراد عالمی سطح پر ایک مقررہ نقطہ نظر رکھتے ہیں اور وہ شواہد کی مزاحمت کرتے ہیں۔ماہرین نفسیات اس نتیجے پر پہنچے ہیں کہ قدامت پسندی کا تعلق علمی "احتیاط" سے ہے ، سست اور درست لاشعوری فیصلہ سازی تیز اور ناقص "ادراک کی حکمت عملی" کے مقابلے میں زیادہ آزاد خیال ذہنوں میں پائی جاتی ہے۔زیادہ لاشعوری افراد کے دماغ ادراک کے شواہد پر سست عمل کرتے ہیں لیکن وہ زیادہ متاثر کن شخصیت کے مالک ہوتے ہیں۔ اس مطالعاتی ٹیم کا کہنا ہے کہ ابتدائی مراحل میں رہتے ہوئے بھی ، اس تحقیق سے سیاسی اور مذہبی شعبوںمیں بنیاد پرستی میں سب سے کمزور لوگوں کی شناخت اور ان کی مدد کرنے میں معاونت مل سکتی ہے۔ بنیاد پرستی کی پالیسی کے نقطہ نظر بنیادی طور پر عمر ، نسل اور جنس جیسی معلومات پر انحصار کرتے ہیں۔علمی اور شخصی تشخیصوں کو شامل کرکے ، ماہرین نفسیات نے ایک شماریاتی ماڈل تیار کیا جس کے بارے میں ان کا کہنا ہے کہ یہ صرف آبادی کی سوچ کہ بہ نسبت شخصی نظریات کو سمجھنے میں چار سے پندرہ گنا زیادہ طاقتور ہے۔ کیمبرج کے شعبہ نفسیات کے مرکزی مصنف ، ڈاکٹر لیور زیمگروڈ نے کہا کہ میں اس کردار سے دلچسپی رکھتا ہوں جو نظریاتی سوچ کو تراشنے میں چھپے ہوئے علمی افعال انجام دیتا ہے۔بہت سے لوگ اپنی جماعتوں میں ان لوگوں کو جانتے ہوں گے جو انتہا پسند بن گئے ہیں یا تیزی سے انتہائی سیاسی نظریات اختیار کر چکے ہیں ، خواہ وہ بائیں یا دائیں بازو سے تعلق رکھتے ہوں۔ہم جاننا چاہتے ہیں کہ کیوں خاص افراد زیادہ حساس ہیں۔ بنیادی معلوماتی پروسیسنگ کے ʼسرد لاشعوری ادراک کے ساتھ گرم جذباتی ادراک کی جانچ کرکے ہم ان لوگوں کے لئے ایک نفسیاتی نشانات بنا سکتے ہیں جن کے انتہائی نظریات اختیار کرنے کے خدشات ہوں۔یہ تحقیق رائل سوسائٹی بی کےجرنل فلاسفیکل ٹرانزیکشنز میں شائع ہوئی ہے۔

یورپ سے سے مزید