آپ آف لائن ہیں
ہفتہ26؍شعبان المعظم 1442ھ 10؍اپریل 2021ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

امریکی ایوان نمائندگان سے 29 ہزار کھرب کا کورونا ریلیف پیکیج منظور

واشنگٹن (جنگ نیوز)امریکی ایوان نمائندگان نے صدر جو بائیڈن کا پیش کردہ 1اعشاریہ 9ٹریلین ڈالر (29ہزار کھرب روپے سے زائد )کا کورونا امدادی پیکیج منظور کر لیا ہے۔ اس پیکج کے ذریعے کاروبار، مقامی حکومتوں اور عالمی وبا سے مالی مشکلات کا شکار ہونے والے شہریوں کی مدد کی جائے گی۔قانون سازوں نے ہفتے کو پارٹی لائن پر ووٹ دیتے ہوئے یہ امدادی پیکیج 212 کے مقابلے میں 219 ووٹ سے منظور کیا۔کورونا امدادی پیکیج اب امریکا کے 100 رکنی سینیٹ میں پیش ہو گا جہاں دونوں جماعتوں کے پاس 50، 50 ووٹ ہیں۔ البتہ کسی بھی صورت میں ووٹنگ برابر ہونے پر نائب صدر کاملا ہیرس ٹائی بریکر ووٹ کے ذریعے فیصلہ کر سکتی ہیں۔ڈیموکریٹک پارٹی کا مؤقف تھا کہ امریکا کی معیشت کا پہیہ چلانے کے لیے یہ امدادی پیکیج بہت ضروری ہے۔ امریکا میں وبا کی وجہ سے اب تک پانچ لاکھ 10 ہزار افراد ہلاک ہو چکے ہیں۔ دوسری جانب ری پبلکن پارٹی کا مؤقف ہے کہ 1900 ارب ڈالرز کا امدادی پیکیج بہت بڑا پیکیج ہے۔اس امدادی پیکیج کی مد میں جہاں ویکسین اور طبی اشیا کے اخراجات کو پورا کیا جائے گا۔ وہیں اکثر شہریوں کو 1400 ڈالر فی کس کی ادائیگی بھی کی جائے گی۔اس پیکج کے ذریعے مقامی اور ریاستی حکومتوں کو ہنگامی معاشی امداد دی جائے گی اور اس کے ساتھ ساتھ وبا کی وجہ سے معاشی طور پر مشکلات کے شکار کاروبار جیسے ریستوران اور ایئر لائنز انڈسٹری کو بھی مدد مل پائے گی۔بل میں بے روزگاری کی مد میں ملنے والی رقوم اگست تک جاری رہیں گی اور کم آمدنی والے افراد، بچوں والے خاندانوں اور چھوٹے کاروباروں کو معاشی استحکام کے لیے مدد کی جائے گی۔واضح رہے کہ امریکا کے ایوانِ زیریں میں ڈیموکریٹک پارٹی کی اکثریت ہے۔ 20 جنوری کو صدارت سنبھالنے کے بعد یہ قانون سازی میں صدر جو بائیڈن کی پہلی کامیابی ہے۔

اہم خبریں سے مزید