دنیا کے آخری بوئنگ 300-747 کی 5 سال مرمت کے بعد ایران میں پہلی اڑان
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
,

دنیا کے آخری بوئنگ 300-747 کی 5 سال مرمت کے بعد ایران میں پہلی اڑان

ایران کی مہان ایئر کے زیر استعمال 35 سال پرانے دنیا کے آخری بوئنگ 300-747 طیارے نے 5 سال کی مرمت اور بحالی کے بعد ایران میں اندرون ملک روٹ پر پہلی کامیاب اڑان بھرلی۔

ایوی ایشن ذرائع کے مطابق ایران کی مہان ایئر کے زیر استعمال ای پی- ایم این ای رجسٹریشن کے اس بوئنگ طیارے میں اکتوبر 2015 میں مہر آباد سے بندر عباس کی پرواز کے دوران دونوں انجن میں شدید خرابی پیدا ہوگئی تھی۔

طیارے کو بھی شدید نقصان پہنچا تھا اور عملے کے 19 ارکان سمیت 422 مسافروں کی زندگیاں بمشکل بچائی جاسکتی تھیں۔


اس حادثے کے بعد سے طیارے کو ایران کے محراب انٹرنیشنل ایئرپورٹ پر کھڑا کردیا گیا تھا۔

ایرانی انجینئرز نے مہان ایئر کے ای پی- ایم این ڈی رجسٹریشن کے ایک ریٹائرڈ بوئنگ 747 کے 2 انجنوں کی اس طیارے میں تنصیب کی۔

طیارے کی بحالی اور تزئین و آرائش کے کام میں لگ بھگ 5 سال لگے، بوئنگ 300-747 نے ایک بار پھر ہواؤں میں تیرنا شروع کر دیا ہے۔

مہان ایئر نے گذشتہ روز تہران سے کش آئی لینڈ تک کی دو طرفہ پرواز ڈبلیو 51042 اور ڈبلیو 51043 کیلئے اپریل 1986 میں پہلی اڑان بھرنے والا یہی طیارہ استعمال کیا۔

ایئرلائن ذرائع کے مطابق مزید ڈومیسٹیک پروازوں کے لیے اب یہ طیارہ باقاعدگی سے استعمال کیا جائے گا۔

بین الاقوامی خبریں سے مزید
خاص رپورٹ سے مزید