• بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

مجھ سوز بعد مرگ سے آگاہ کون ہے

میرتقی میر

(تاریخ وفات 21ستمبر1810)

مجھ سوز بعد مرگ سے آگاہ کون ہے

شمع مزار میر بجز آہ کون ہے

بیکس ہوں مضطرب ہوں مسافر ہوں بے وطن

دوری راہ بن مرے ہم راہ کون ہے

لبریز جس کے حسن سے مسجد ہے اور دیر

ایسا بتوں کے بیچ وہ اللہ کون ہے

رکھیو قدم سنبھل کے کہ تو جانتا نہیں

مانند نقش پا یہ سر راہ کون ہے

ایسا اسیر خستہ جگر میں سنا نہیں

ہر آہ میرؔ جس کی ہے جانکاہ کون ہے

ہوتا ہے یاں جہاں میں ہر روز و شب تماشا

ہوتا ہے یاں جہاں میں ہر روز و شب تماشا

دیکھا جو خوب تو ہے دنیا عجب تماشا

ہر چند شور محشر اب بھی ہے در پہ لیکن

نکلے گا یار گھر سے ہووے گا جب تماشا

بھڑکے ہے آتش غم منظور ہے جو تجھ کو

نکلے گا یار گھر سے ہووے گا جب تماشا

بھڑکے ہے آتش غم منظور ہے جو تجھ کو

جلنے کا عاشقوں کے آ دیکھ اب تماشا

طالع جو میر خواری محبوب کو خوش آئی

پر غم یہ ہے مخالف دیکھیں گے سب تماشا