مکمل چاند گرہن لگنے پر چاند سرخ رنگ کا کیوں نظر آتا ہے؟

May 16, 2022

مکمل چاند گرہن، فائل فوٹو

آج رواں سال کا پہلا مکمل چاند گرہن جیسے سرخ چاند بھی کہا جاتا ہے، دنیا کے بہت سے ممالک میں دیکھا گیا۔

چاند گرہن کا آغاز پاکستانی وقت کے مطابق صبح 6 بج کر 32منٹ پر ہوا، اور صبح 9 بج کر 13منٹ پرچاند کا گرہن عروج پر تھا۔

اس چاند گرہن کا اختتام پاکستانی وقت کے مطابق آج دوپہر 11بجکر51 منٹ پر ہوجائے گا۔

چاند گرہن کن ممالک میں دیکھا گیا؟

ماہرفلکیات کے مطابق،رواں سال کا پہلا مکمل چاند گرہن امریکا، یورپ، افریقا اور ایشیا کے کچھ حصوں میں دیکھا گیا۔

تاہم، پاکستان میں دن ہونے کی وجہ سے آج لگنے والا مکمل چاند گرہن نہیں دیکھا گیا۔

مکمل چاند گرہن لگنے پر چاند سرخ رنگ کا کیوں نظر آتا ہے؟

مکمل چاند گرہن لگنے پر چاند سرخ رنگ کا نظر آتا ہے، اور اسی لیے اسے بلڈ مون یعنی سرخ چاند کہا جاتا ہے۔

دراصل چاند گرہن اس وقت لگتا ہے جب زمین اپنے مدار میں گھومتی ہوئی سورج اور چاند کے درمیان آجاتی ہے اور سورج کی روشنی چاند تک نہیں پہنچ پاتی، اس دوران چاند سیاہ ہونا شروع ہوجاتا ہے جسے گرہن لگنا کہتے ہیں۔

ناسا کے مطابق، چاند مکمل چاند گرہن کے دوران سرخ اس لیے نظر آتا ہے چونکہ چاند تک پہنچنے والی سورج کی روشنی جب زمین کے ماحول سے گزرتی ہوئی چاند تک پہنچتی ہے تو زمین پر موجود دھول یا بادل گرہن کو سرخی مائل شکل دیتے ہیں۔

خیال رہے کہ چاند گرہن پیلے، نارنجی یا بھورے رنگ کا بھی دکھ سکتا ہے کیونکہ مختلف قسم کے دھول کے ذرات مختلف طول موج (wavelenghts) کو چاند کی سطح تک پہنچنے دیتے ہیں۔

دنیا کے کچھ حصّوں میں مکمل چاند گرہن کو ’سپر فلاور بلڈ مون‘کیوں کہا جاتا ہے؟

شمالی نصف کرۂ ارض پر مکمل چاند گرہن کو ’سپر فلاور بلڈ مون‘ بھی کہا جائے جاتا ہے۔

شمالی نصف کرہ میں مئی کے مہینے میں نظر آنے والے پورے چاند کو اکثر ’فلاور مون‘ یعنی پھولوں کا چاند کہا جاتا ہے کیونکہ یہ بہار کے موسم میں نظر آتا ہے جوکہ پھولوں کے کھلنے کا موسم ہوتا ہے۔

اسی لیےمئی کے مہینے میں لگنے والے چاند گرہن کو شمالی نصف کرہ میں ’سپر فلاور بلڈ مون‘ بھی کہا جاتا ہے۔