مختلف کمپنیوں نے سینی تائزر کی مقدار کم کرکے قیمت بڑھادی

March 25, 2020

کوئٹہ(سٹی ڈیسک)کورونا وائرس کے پیش نظرطبی ماہرین کی جانب سے کہا جا رہا ہے کہ سینی ٹائزر یا صابن سے وقفے وقفے سے ہاتھ دھوئے جائیں ۔ جس کے باعث سینی ٹائزر کی مانگ میں اضافہ ہوگیا ہے ۔ جس کے باعث مختلف کمپنیوں نے موقع کا فائدہ اٹھاتے ہوئے نہ صرف سینی ٹائزر کی مقدار میں کمی کردی بلکہ قیمتوں میں اضافہ کر دیا ۔ اس حوالے سےسابق ایڈووکیٹ جنرل اور ممتاز قانون دان ایم رئوف عطاء نے بتایا کہ کورونا وائرس جیسی وباء کا فائدہ اٹھاتے ہوئے دوا ساز کمپنیوں نے سینی ٹائزر اور ماسک کی قیمتوں میں ہوشربا اضافہ کردیا ہے جو انتہائی افسوسناک امر ہے ایک طرف قوم وبا کے خوف سے پریشانی کی حالت میں ہے دوسری طرف دوا ساز کمپنیاں منافع خوری میں مصروف ہیں ان کا کہنا تھا کہ سینی ٹائزر کے اجزاء معیار اور مقدار کو بھی کم کردیاگیا ہے وباء کے پھیلائو سے قبل250ملی لیٹر کی بوتل تین سو یا ساڑھے تین سوروپے میں مارکیٹ میں دستیاب تھی اب اس بوتل کی مقدار ڈھائی سو سے کم کرکے 60ملی لیٹرکر دی گئی ہے اور قیمت230 روپے ہے ۔ انہوں نے کہا کہ حکومتی ادارے بھی60ملی لیٹر کی مقدار کے غیر معیاری سینی ٹائزر اسی نرخ پر خرید رہے ہیں۔ مصیبت کی اس گھڑی میں ہونا تویہ چاہیے تھا کہ سینی ٹائزر کی مقدار کو بڑھایا اور معیار کو بہتر کیا جاتا اورقیمت بھی کم کر دی جاتی تاکہ عام آدمی بھی اس سے استفادہ کرسکتا اور اس وباء کے پھیلائو میں مزید کمی لائی جاسکتی تھی لیکن گرانفروشی اور عوام کو لوٹنے میں دوا ساز کمپنیوں اور حکومتی ادارے ایک پیج پر نظر آرہے ہیں ایسے حالات میں غریب عوام مطالبہ کرتے ہیں کہ اس جانب توجہ دی جائے اور ان منافع خوروں ، بے ایمان عناصر کی بیخ کنی کی جائے اور سستے داموں مذکورہ اشیاء کی مارکیٹ میں دستیابی یقینی بنائی جائے۔