آپ آف لائن ہیں
اتوار18؍ذی الحج 1441ھ 9؍اگست 2020ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

اللہ کے احکام اور شریعت کی نافرمانی

قرآن و سنّت کی رو سے اللہ کے احکام اور شریعتِ مُطہرہ کی خلاف ورزی اور اس کی نافرمانی گناہ کا سبب،رحمتِ خداوندی سے دوری اور بلاشبہ پروردگارِ عالم کی ناراضی کا بنیادی سبب ہے۔چناںچہ ہر وہ کام جو شریعت کے بتائے ہوئے احکام کے خلاف ہو، گناہ کہلاتا ہے۔اﷲتعالیٰ نے جن اعمال کے کرنے سے منع کیا ہے، اس کی اصل حقیقت تو اﷲرب العزت خود ہی جانتا ہے۔ عقلی اعتبار سے غور کرنے سے یہ بات سمجھ میں آتی ہے کہ ان اعمال کے کرنے سے کسی کا حق ضائع ہوتا ہے اور کسی کا حق ضائع کرنا، چاہے وہ اﷲتعالیٰ کا ہو یا کسی مخلوق کا ، نہایت بڑا ظلم ہے۔یا ان اعمال کے کرنے سے انسانی زندگی کا امن متاثر ہوتا ہو اور معاشرے کے امن وسکون کو برباد کرنا کھلا فساد اور معصیت ہے۔ یا ان اعمال کے نہ کرنے کا حکم اﷲتعالیٰ کی طرف سے بندوں کی آزمائش وامتحان ہے، لہٰذا انسان اگرا ن اعمال کو کرتا ہے تو گویا وہ اپنے آپ کو بڑا سمجھ کر اﷲتعالیٰ کے مقابلے پر اتر آتا ہے۔ اس سے بڑھ کر گناہ کا عمل اور بغاوت اور کیا ہوگی؟

٭ گناہِ کبیرہ کی تعریف:ایسی تمام نافرمانیاں جن کے کرنے پر شریعت کی طرف سے سزا مقرر کی گئی ہو، جن کے کرنے والوں پر قرآن وحدیث میںلعنت کے الفاظ آئے ہوں، جن کے کرنے والوں کو جہنم کی وعید سنائی گئی ہو، جن کے کرنے پر عذاب کی وعیدبیان کی گئی ہو اور جن اعمال کو کافرانہ اعمال کہا گیاہو وغیرہ وغیرہ یہ گناہ کبیرہ کہلاتے ہیں۔اس کے علاوہ گناہ اورنافرمانیوں کو گناہ صغیرہ کہا جاتا ہے ،لیکن اگران نافرمانیوںکو عادت بنا لیا جائے، تو وہ بھی کبیرہ بن جاتی ہیں۔

علمائے کرام نے قرآن مجید اور احادیثِ طیّبہ کے ذخیرے سے ان اعمال کو جمع فرمایا ہے، جنہیں گناہ کبیرہ کہا گیا ہے ،ان میں سے بعض درج ذیل ہیں:٭ شرک اور شرک کے علاوہ وہ عقائد اور وہ اعمال جن سے کفر لازم آتا ہے۔٭کسی مسلمان کو جان بوجھ کر قتل کرنا۔٭جادو سیکھنا، سکھانا اور کرنا، کرانا۔٭ فرض نماز کو چھوڑنا یا وقت سے پہلے پڑھنایا قضا کر کے پڑھنا۔٭زکوٰۃ بالکل نہ دینا یا پوری نہ دینا۔٭ بغیر کسی شرعی عذر کے رمضان المبارک کا روزہ چھوڑ دینا یا روزہ رکھ کر توڑ دینا۔٭ حج فرض ہو جانے کے باوجود نہ کرنا یہاں تک کہ انتقال ہو جائے۔٭والدین کو تکلیف دینا اور ان کی نافرمانی کرنا۔٭ رشتے داروں سے قطع تعلق کرنا۔٭زناکرنا اور کرانا۔ ٭بدفعلی کرنا یا کرانا۔ ٭ سود لینا یا دینا یا سودی معاملے کی دستاویز لکھنا یا گواہ بننا۔٭ظلماً یتیم کا مال کھانا۔٭ اﷲتعالیٰ یا اس کے رسول ﷺ کی طرف جھوٹی بات منسوب کرنا۔ ٭ میدانِ جہاد سے بھاگنا۔ ٭حاکم کا اپنی رعایا کو دھوکا دینا اور ان کے ساتھ خیانت کرنا۔٭تکبر کرنا۔ ٭جھوٹی گواہی دینا۔٭ شراب یا کوئی نشہ والی چیز بنانا، بنوانا، بیچنا، خریدنا، اسے لاد کر لے جانا، کھانا پینا،کھلانا پلاناوغیرہ۔٭ جوا کھیلنا۔٭ کسی پاک دامن عورت پر تہمت لگانا۔ ٭ مالِ غنیمت میں خیانت کرنا۔ ٭چوری کرنا۔ ٭ڈاکہ ڈالنا۔٭جھوٹی قسم کھانا۔ ٭کسی پر ظلم کرنا خواہ کسی بھی طرح کا ظلم ہو، مثلاً مارنا، گالی دینا یا کسی کا مال لے لینا۔٭ حرام مال کھانا، پینا، پہننا یاخرچ کرنا بیچنا، خریدنا، کسی کوتحفہ دینا، ثواب کی نیت سے صدقہ کرنا۔٭خودکشی کرنا یا بلا وجہ اپنا کوئی عضو کاٹ دینا۔٭ لوگوں کے خفیہ حالات کی ٹوہ لگانا تجسس کرنا۔٭کاہن یا نجومی و غیرہ کی باتوں کو صحیح ماننا اور ان کی تصدیق کرنا۔ ٭شوہر کی نافرمانی کرنا۔٭تصویر بنانا یا گھر میں لٹکانا۔ ٭اﷲ کے کسی ولی کو تکلیف دینا۔٭تہہ بند یا شلوار وغیرہ کو ٹخنوں سے نیچے لٹکانا۔٭اﷲ تعالیٰ کی رحمت سے نا امید ہو جانا۔٭ گانے بجانے کا پیشہ اختیار کرنا۔ ٭علمائے کرام اور حاملین قرآن کے حق میں بدگوئی کرنا۔٭ کسی مسلمان کو کافر کہنا۔٭ایک سے زائد بیویاں ہوں تو ان کے درمیان انصاف نہ کرنا۔٭عالم کا اپنے علم پر عمل نہ کرنا۔٭کھانے میں عیب نکالنا۔٭کسی کے گھر میں بغیر اجازت نظر ڈالنا یا بغیر اجازت داخل ہونا۔٭بیوی کو طلاق بائن ومغلظہ دے دینے کے باوجود اس کے ساتھ میاں بیوی کی حیثیت سے زندگی گزارنا۔ ٭عورتوں کا نامحرموں سے پردہ نہ کرنا۔٭مردوں کا عورتوں کی، عورتوں کا مردوں کی شباہت اختیار کرنا۔٭ملازم کا طے شدہ فرائض کوانجام نہ دینا۔وغیرہ وغیرہ

قرآن کریم میں اعمال صالحہ پر کار بند رہتے ہوئے منع کردہ بڑی بڑی برائیوں سے بچنے والوں سے اﷲ تعالیٰ جو قادر مطلق بھی ہے اور مختار کُل بھی، پہلا وعدہ یہ فرما رہا ہے کہ ہم تمہاری چھوٹی چھوٹی برائیوں کو معاف فرماتا رہے گا۔اس دنیا میں نفس وشیاطین کی دشمنیوں میں پھنسے ہوئے بندوں کے لیےاﷲتعالیٰ کی طرف سے زبردست حوصلہ افزائی ہے کہ وہ نفس وشیاطین کے غلبے کی وجہ سے پریشان نہ ہوں۔ اگر انہوں نے بڑے بڑے گناہوں سے اجتناب کیا تو ہماری طرف سے چھوٹی چھوٹی برائیوں سے درگزر کیا جاتا رہے گا۔

گناہوں کے صادر ہونے کی وجوہات

٭ انسان کے اندر خیر (بھلائی) کے ساتھ ساتھ شر (برائی) کا بھی مادہ رکھا گیا ہے۔ ٭انسان کے ساتھ نفس کو بھی رکھا گیا ہے جو اکثر انسانوں کو برائی ہی کی طرف آمادہ رکھتا ہے اور بھلائی پر خود بڑی مشقت کے بعد آمادہ ہوتا ہے۔ ٭انسان پر اس کے ازلی دشمن شیطان کو ایسی قوت دی گئی ہے کہ وہ انسان کے اندر دوڑنے والے خون کی مانند غلبہ رکھتا ہے۔ شیطان ہر طرف سے ہر طرح حملہ آور ہو کر انسان سے گناہ کرانے کی ہر ممکن کوشش کرتا رہتا ہے۔ یہ کوشش اس ڈھٹائی کے ساتھ جاری رکھتا ہے کہ انسان کے توبہ کر لینے اور اﷲتعالیٰ کے توبہ قبول کرلینے کے بعد بھی مایوس نہیں ہوتا۔ ٭انسان کے اندر بھول کا مادہ بھی رکھا گیا ہے جس کی وجہ سے بعض اوقات وہ اﷲتعالیٰ کے مواخذے،اس کی پکڑ،حساب اور سزا کو بھلا بیٹھتا ہے اور اس سے گناہ سرزد ہوجاتا ہے۔مندرجہ بالا حقائق کے مقابلے میں انسان کو مرضی اور ارادے کی قوت دی گئی ہے، صحیح اور غلط کو سمجھنے کی عقل سلیم عطا کی گئی ہے۔انبیاء علیہم السلام کے ذریعے بھلائی اور برائی کے راستوں کو خوب واضح طور پر کھول کھول کر بیان کیا گیا ہے۔ انسان کے اندر اگر برائی کے راستے پر چلنے کی استعدادہے تو اسے نیکی کے راستے پر چلنے کی قوت بھی دی گئی ہے۔ ان سب ناقابلِ تردید حقیقتوں کے باوجود اس بات کے امکانات یقینی طور پر تاحیات موجود رہتے ہیں کہ (انبیا علیہم الصلوٰۃ والسلام کے علاوہ) صاحب ایمان لوگوں سے گناہ صادر ہوں۔ اس پریشانی کا علاج رب غفورو رحیم نے یہ عنایت فرمایا کہ اعمالِ صالحہ پر کار بند رہو، بڑے بڑے گناہوں سے اجتناب کرتے رہو ،ہم اس کے بدلے تمہارے چھوٹے چھوٹے گناہوں کو معاف فرماتے رہیں گے۔

گناہ اوربرائیوں کی معافی کی صورتیں

٭ اﷲتعالیٰ محض اپنے لطف وکرم سے معاف فرما دیں۔٭ تمام اعمال صالحہ جس میں توبہ بھی شامل ہے کی وجہ سے گناہ معاف ہو جائیں۔٭ ذکر اﷲ، تعلیم دین اور دین کی تبلیغی مجلسوں میں شرکت کی وجہ سے معاف ہو جائیں۔ حجۃ الاسلام امام غزالیؒ فرماتے ہیں کہ انسان کے اندر ایک پاکیزہ اور معصوم فطرت ہے جس کی وجہ سے انسان گناہوں سے نفرت کرتا ہے لیکن اگر وہ گناہوں میںمبتلا رہے تویہ فطرت ایسی متاثر ہوتی ہے کہ انسان گناہوں سے نفرت کی بجائے انہیں پسند کرنے لگ جاتا ہے۔ لہٰذا اگر انسان تمام آسانیوں اور ترغیبات کے باوجود اپنے آپ کو بڑے بڑے گناہوں سے بچانے کا پختہ عزم وارادہ کرلے اوربچنے کی کوشش شروع کر دے تو اس کے نتیجے میں اس کی کھوئی ہوئی فطرت دوبارہ اپنی اصلی حالت پر بحال ہو جاتی ہے اور اسے گناہوں سے نفرت ہونے لگتی ہے، اس حالت کو گناہوں کے معاف ہونے سے تعبیر کیا گیا ہے۔