آپ آف لائن ہیں
جمعہ8؍ جمادی الثانی 1442ھ 22؍ جنوری2021ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

جاپانی پہلوان کو بے گناہ ثابت کرنے کے لئے ہزاروں ڈالرز خرچ کرنا پڑے

ٹوکیو( جنگ نیوز) جاپان کے گریکو رومن پہلوان سو ساکابی نے منشیات کے جرم میں پابندی کے بعد دوا ساز ادارے پر مقدمہ دائر کردیا ہے ان کا کہنا ہے کہ انہوں نے اسے غلط ادویات دی جس کے استعمال کی وجہ سے انہیں اس سزا کا سامنا کرنا پرا، دو سال کی پابندی سے گریز کرنے کے بعد ، ساکابی نے دو عمومی ادویہ سازوں کے خلاف مقدمہ دائر کیا ہے جس کا دعوی ہے کہ اس نے اسے آلودہ دوائیں دیں۔26 سالہ جاپانی سیلف ڈیفنس فورسز کے ممبر کا کہنا ہے کہ آدھی جنگ یہ ثابت کرنے کے لئے ہے کہ وہ کوئی دھوکہ باز نہیں ہے ، میں چھ ماہ سے غیر فعال رہا اور اس ڈوپنگ کیس نے میرا کیریئرختم کردیا ،میں کسی اور کے ساتھ ایسا نہیں ہونے دوں گا۔"ساکابے ان کھلاڑیوں کے لئے آواز بن کر خراب صورتحال سے بہتر بنانے کی کوشش کر رہے ہیں جو عوامل کی وجہ سے ان کے ناقابل معافی اینٹی ڈوپنگ سسٹم کا شکار ہوگئے ہیں ، اور اس کے نتیجے میں ان کو سزا کا سامنا کرنا پڑا جس کے وہ مستحق نہیں تھے۔ ساکابے کو یہ ثابت کرنا مشکل پڑا کہ کیسے ممنوعہ مادہ اس کے جسم میں داخل ہوا اس نے جان بوجھ کر قواعد نہیں توڑے۔ وہ جاپان کی اینٹی ڈوپنگ ایجنسی کی جانب سے کئے گئے ہرٹیسٹ میں ناکام رہا ، ساکابے نے وہ تمام سپلیمنٹس جو وہ نجی لیب میں جانچ کے لئے بھیجے ، جس نے تصدیق کی کہ کسی بھی ضمیمہ میں اس میں ممنوعہ

مادہ موجود نہیں تھا۔ساکابے کے پاس آٹھ چیزوں کا تجربہ کیا گیا ، ہر ٹیسٹ میں 1000 ڈالرز کا خرچہ آیا، فروری میں مزید جانچ سے یہ انکشاف ہوا تھا کہ یہ عام طور پر گیسٹرائٹس اور پیٹ کے السروں کے علاج کے لئے استعمال ہونے والی دوا تھی ، لیکن وہ اپنے جسم کو وزن کم کرنے میں مدد فراہم کرتا تھا ، جو آلودہ تھا۔ اسی مہینے انہیں معطلی سے بری کردیا گیا تھا۔یہ دوا انھیں ایک ڈاکٹر نے تجویز کی تھی۔

اسپورٹس سے مزید