آپ آف لائن ہیں
جمعرات24؍ذیقعد 1441ھ16؍جولائی2020ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

آپ کے مسائل اور اُن کا حل

سوال:۔نماز کے علاوہ درسِ قرآن یادرسِ حدیث کے بعد اجتماعی دعا کی شرعی حیثیت کیا ہے؟قرآن و سنّت کی روشنی میں وضاحت فرما دیں۔

جواب :۔نماز کے علاوہ اللہ کے ذکر کی مجلس کے اختتام پر اجتماعی دعائیں احادیث مبارکہ اور صحابۂ کرامؓ کے آثار سے ثابت ہیں، چند ایک کا یہاں ذکر کیا جاتا ہے ۔حدیث میں ہے کہ جب کوئی گروہ جمع ہوتا ہے اور ان میں سے بعض دعا کرتے ہیں اور بعض آمین کہتے ہیں تو اللہ ان کی دعا ضرور قبول فرماتا ہے۔(مستدرک حاکم۳؍۳۹۰)حضرت انس ؓ کا معمول تھا کہ جب قرآن پاک کا ختم ہوتا تو اپنے گھر والوں کو جمع کرکے اجتماعی دعا کرتے اور بعض آثار میں یہاں تک ذکر ہے کہ اگر رات کے وقت قرآن ختم ہونے والا ہوتا تو کچھ حصہ چھوڑ دیتے اور صبح اپنے گھر والوں کو جمع کرکے اجتماعی دعا کرتے۔(مصنف ابن ابی شیبہ۶؍۱۲۸)

ایک موقع پر مسجد میں رات کے وقت حضرت اُبی بن کعبؓ چند ساتھیوں کے ساتھ بیٹھ کر اللہ کا ذکر کر رہے تھے کہ حضرت عمرؓ تشریف لائے اور ان کے ساتھ مجلس میں شریک ہوگئے اور اس مجلس کا اختتام اجتماعی دعا پر ہوا۔(سنن دارمی۳؍۲۱۸)

مذکورہ بالا تفصیل سے معلوم ہوا کہ خیر کی مجالس کا اختتام اجتماعی دعا پر کرنے کا ثبوت صحابۂ کرامؓ کے عمل سے ہے۔ نیز اللہ سے کوئی خیر طلب کرنے اور اجتماعی دعا کی شکل میں اللہ سے مانگا جائے تو اس میں قبولیت کی زیادہ امید ہے۔

اقراء سے مزید