آپ آف لائن ہیں
بدھ10؍ربیع الاوّل 1442ھ28؍اکتوبر 2020ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

ماہرین فلکیا ت نے ملکی وے کہکشاں میں ایک تیز ترین ستارہ در یافت کیا ہے، جو روشنی کی 8 فی صد رفتار سے گھوم رہا ہے ۔ہماری کہکشاں میں ایک بہت بڑا بلیک ہول ایسا بھی ہے ،جس کے گرد سیکڑوں ستارے بہت تیزی سے گھوم رہے ہیں ان میں بعض کے مدار بہت طویل اور لمبوترے ہیں جنہیں نیوٹن کی ثقل اور کیپلر قوانین سے سمجھا جاتا ہے جب کہ بعض ستاروں کا مدار اتنا تیز رفتار اور چھوٹا ہے کہ انہیں آئن اسٹائن کے نظریہ اضافت کے تحت ہی بیان کیا جاسکتا ہے۔اس ستارے کو ایس 4714 کا نام دیا گیا ہے جو حال ہی میں دریافت ہوا ہے اور وہ سیگیٹیریئس اے نامی ایک بہت بڑے بلیک ہول کے گرد گھوم رہا ہے۔ 

یہ روشنی کی 8 فی صد رفتار سے سفر کررہا ہے اور اسے ملکی وے میں تیز ترین سفر کرنے والے ستارے کا اعزاز حاصل ہوا ہے یعنی یہ ایک سیکنڈ میں 24000 کلومیٹر کا سفر طے کرتا ہے۔ یہ ستارہ بڑے کمیتی بلیک ہول کے اتنے قریب پہنچ چکا ہے جو اس کی قوت سے بھنچ جاتے ہیں اور انہیں اسکویزر یعنی بھنچے ہوئے ستارے کہا جاتا ہے۔اس کے علاوہ انہیں ’’ایس ‘‘ ستارے بھی کہا جاتا ہے۔

تاہم اس سے قبل ملکی وے کہکشاں میں ہی کئی ستارے ایسے مل چکے ہیں جو روشنی کی رفتار کے 6.7 فی صد اور تین یا چار فی صد کی قریبی رفتار سے دوڑ رہے ہیں لیکن پہلی مرتبہ روشنی کی رفتار سے 8 فی صد سرعت سے سفر کرنے والا ستارہ دیکھا گیا ہے۔ماہرین کے مطابق ایسے ستاروں کے مطالعے سے ہم بلیک ہول اور ان کے گرد گھومتے ستاروں کے باہمی تعلق کے بارے میں بہت کچھ جان سکتے ہیں۔

سائنس اینڈ ٹیکنالوجی سے مزید
ٹیکنالوجی سے مزید