• بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

عامر لیاقت پر ٹریفک پولیس اہلکار سے بدسلوکی کا الزام


رکن قومی اسمبلی اور اینکر پرسن ڈاکٹر عامر لیاقت حسین پر ٹریفک پولیس اہلکاروں سے بدتمیزی کرنے کا الزام سامنے آیا ہے جبکہ ان کی پولیس اہلکاروں سے بدتمیزی کرنے اور انھیں زدوکوب کرنے کی ویڈیو سامنے آگئی۔ 

اس حوالے سے ڈی آئی جی ٹریفک کراچی کے دفتر سے جاری بیان کے مطابق پیر کی سہ پہر تقریباً 4 بجکر 32 منٹ پر فیروز آباد ٹریفک سیکشن کی حدود شارع قائدین پر ہیڈ کانسٹیبل سید یاسر عباس اپنی ڈیوٹی پر مامور تھے کہ اسی اثناء میں ایک گاڑی نمبر BD-9930 آکر رکی جس میں 3 افراد سوار تھے ان میں سے ایک نے مذکورہ ہیڈ کانسٹیبل کو کہا کہ تم مجھے جانتے ہو اس علاقے کا ایم این اے عامر لیاقت ہوں۔

اس میں کہا گیا کہ مذکورہ شخص نے الزام لگایا کہ تم لوگوں کو تنگ کر رہے ہو ان سے پیسے بٹورتے ہو اور اسی دوران بدتمیزی بھی کرنے لگے۔

ڈی آئی جی ٹریفک کراچی کے دفتر سے جاری بیان میں بتایا گیا کہ اسی اثناء میں ریکارڈ کیپر ASI شاہد میراں بھی اسی مقام پر آگئے اور انہوں نے شور شرابا دیکھا تو عامر لیاقت سے دریافت کیا کہ کیا ہوا ہے؟ تو عامر لیاقت نے ان سے بھی انتہائی ناشائستہ اور غلیظ زبان استعمال کی اور ان سے SOP پر عمل کرنے کا پوچھا جس پر ریکارڈ کیپر نے اپنا کورونا ویکسینیشن کارڈ دکھایا، تو اس پر بھی اعتراض لگاتے ہوئے چلے گئے۔

دوسری جانب ایس پی ٹریفک ایسٹ کراچی کے مطابق مذکورہ وقوعہ کے ساتھ ایک اور واقعہ منسلک ہے جس کی تفصیل کچھ یوں ہے کہ ٹریفک پولیس کی ریپیڈ کاریں جو شارع فیصل پر متعین ہیں ریپیڈ 5 جس کا انچارج سب انسپکٹر محمد اشرف 1630 بجے بمقام نرسری برج موٹر سائیکل پر 3 افراد سوار تھے SOP کی خلاف ورزی پر روکا انہیں خلاف ورزی کے متعلق بتایا گیا جس پر موٹر سائیکل سوار نے پہلے سے طارق روڈ ٹریفک سیکشن کا چالان دکھایا جس پر سب انسپکٹر محمد اشرف نے ان موٹر سائیکل سواروں کو جانے دیا۔

انھوں نے بتایا کہ اتنے میں پیچھے سے ایک گاڑی نمبر BD-9930 آکر رکی جس میں 3 افراد سوار تھے وہ باہر طیش میں آئے جس میں ایک شخص نے سرکاری کار کی ڈگی پر مکے مارنے شروع کیے اور اپنے آپ کو عامر لیاقت ظاہر کیا۔

ان کی اس حرکت پر افسر نے کار سے باہر اترنے کی کوشش کی تو انہوں نے اور ان کے دیگر ساتھیوں نے مکے مارے اور دھکے دیے اور کار سے اترنے نہیں دیا اور ہم پر مختلف الزامات لگائے بدتمیزی کی۔

ایس پی ٹریفک ایسٹ کا کہنا تھا کہ مذکورہ شخص نے کہا کہ علاقے سے دفع ہو جاؤ ورنہ میں تمھیں نوکری سے برخواست کرادوں گا جس پر مذکورہ افسر نے صبر و تحمل سے کام لیا اور مذکورہ اشخاص آگے روانہ ہوگئے۔

قومی خبریں سے مزید