• بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

پی ایف یو جے نے پی ایم ڈی اے بل پر مذاکرات کا تاثر رد کر دیا

اسلام آباد (نمائندہ جنگ)پاکستان فیڈرل یونین آف جرنلسٹس (پی ایف یو جے) نے اس تاثر کو ختم کر دیا ہے کہ اسٹیک ہولڈرز متنازع پاکستان میڈیا ڈویلپمنٹ اتھارٹی (پی ایم ڈی اے) بل پر مذاکرات کے لیے تیار ہیں۔ 

جمعرات کو لاہور میں جاری ایک بیان میں پی ایف یو جے کے صدر شہزادہ ذوالفقار اور سیکرٹری جنرل ناصر زیدی نے کہا کہ صحافیوں کی برادری نے پاکستان میڈیا ڈویلپمنٹ اتھارٹی بل کو قانون کا ایک سخت حصہ سمجھا اور اسے مکمل طور پر مسترد کر دیا۔

حکومت پریس ریلیز اور بیانات کے ذریعے یہ تاثر دینے کی کوشش کر رہی ہے کہ اسٹیک ہولڈرز پی ایم ڈی اے بل پر مذاکرات کے لیے تیار ہیں۔ پی ایف یو جے کے نمائندے سمیت پوری ایکشن کمیٹی نے وزیر اطلاعات پر یہ واضح کر دیا تھا کہ ہم پی ایم ڈی اے جیسی چھتری والی کسی بھی تنظیم کو قبول نہیں کریں گے اور ہم صرف موجودہ قوانین کو مضبوط بنانے کے لیے حکومت کے ساتھ بیٹھیں گے۔ 

میٹنگ کے بعد جاری ہونے والی پریس ریلیز بھی بہت واضح ہےکہا گیا ہے کہ اسٹیک ہولڈرز نے وزیر کو بتایا کہ پی ایم ڈی اے بھی ناقابل قبول ہے۔ PFUJ کے نمائندے نے پہلے بھی PBA ، CPNE ، APNS ، AMEND اور دیگر اسٹیک ہولڈرز کی موجودگی میں سینیٹ کی قائمہ کمیٹی کو بتایا تھا کہ اگر دوسرے اسٹیک ہولڈرز حکومت کے بل سے اتفاق کرتے ہیں تو بھی PFUJ اکیلے ہی اس کے خلاف لڑے گا کیونکہ ہم نے اس طرح کے سخت قوانین کا مقابلہ کیا تھا۔ 

سول سوسائٹی اور پاکستانی عوام کی مدد سے مارشل لاء کی مدت بیان میں کہا گیا ، پی ایف یو جے متنازعہ بل کو آئین اور جمہوری روایات کی روح کے خلاف آمرانہ ادارہ بنانے کے متنازعہ بل پر غور کرتا ہے۔

یہ مجوزہ بل میڈیا کو دبانے کے لیے ہے اور یہ ملک میں میڈیا کی آزادی کے لیے تباہی ثابت ہوگا۔دونوں رہنماؤں نے واضح کیا کہ پی ایف یو جے مختلف قوانین میں اصلاحات کے مخالف نہیں،ہم نیوز پیپرز ایمپلائز کنڈیشن آف سروس ایکٹ 1973 میں اصلاحات کے لیے تیار ہیں۔

صوبائی دارالحکومتوں میں آئی ٹی این ای بنچوں کا مزید قیام ، الیکٹرانک میڈیا ملازمین کے لیے اجرت ایوارڈ صحافی برادری پیمرا کے کام کے بارے میں بات اور اصلاحات کے لیے تیار ہے جو کہ ریگولیٹری اتھارٹی کے کام کو بہتر بنانے کے لیے پیش کی جا سکتی ہے لیکن جہاں تک پاکستان میڈیا ڈویلپمنٹ اتھارٹی بل کا تعلق ہے ، یہ پی ایف یو جے کے لیے ایک بند باب ہے۔ 

اسے پہلے ہی اسٹیک ہولڈرز مسترد کر چکے ہیں اس لیے اس پر کوئی بات چیت نہیں ہو سکتی۔ دونوں رہنماؤں نے حکومت پر جعلی صحافی اداروں کے ساتھ مذاکرات کرنے کا الزام لگایا۔ "کچھ جعلی ادارے ہیں جو اسٹیبلشمنٹ کے مفادات کو پورا کر رہے ہیں اور میڈیا ورکرز کی صفوں اور فائلوں میں ان کا کوئی احترام نہیں ہے۔ 

حکومت ایسی جعلی تنظیموں سے مشاورت کر رہی ہے اور چاہتی ہے کہ ہم ایسی تنظیموں کے ساتھ پلیٹ فارم شیئر کریں۔ یہ بہت واضح ہے کہ ہم اس طرح کی صحافی یونینوں کے ساتھ کوئی پلیٹ فارم شیئر نہیں کریں گے جو کہ اس چھوٹے سے مفادات کے حصول کے لیے اسٹیبلشمنٹ کے لیے بولی لگا رہے ہے۔

دونوں رہنماؤں نے تمام اسٹیک ہولڈرز سے اپیل کی کہ وہ اس سخت قانون سازی کے خلاف متحد رہیں جو ملک میں میڈیا مارشل لاء نافذ کرے گی،یہ نہ صرف ملک میں میڈیا کی آزادی کا سوال ہے بلکہ پاکستان میں جمہوریت کے مستقبل کا بھی سوال ہے۔

اہم خبریں سے مزید