آپ آف لائن ہیں
جنگ ای پیپر
منگل12؍ربیع الثانی 1441ھ 10؍ دسمبر 2019ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
تازہ ترین
آج کا اخبار
کالمز

زیر حراست بچوں کی سب سے زیادہ شرح امریکا میں ہے، اقوام متحدہ

اقوام متحدہ کا کہنا ہے کہ دنیا میں زیر حراست بچوں کی سب سے زیادہ شرح امریکا کی ہے۔

اقوام متحدہ کے ایک مطالعے کے مصنف نے فرانسیسی میڈیا کو بتایا کہ اقوام متحدہ کے پاس بچوں کی سب سے زیادہ تعداد حراست میں ہے، ان میں امیگریشن سے متعلقہ تحویل میں1 لاکھ سے زیادہ شامل ہیں جو بین الاقوامی قانون کی خلاف ورزی کرتے ہیں۔

آزاد ماہر منفریڈ نوک نے بتایا کہ دنیا بھر میں 18 سال سے کم عمر 70 لاکھ سے زیادہ افراد جیلوں اور پولیس تحویل میں ہیں، ان میں امیگریشن حراستی مراکز میں 330,000 شامل ہیں۔

لبرٹی کے محروم بچوں پر اقوام متحدہ کے عالمی مطالعے کے مطابق بچوں کو جہاں تک ممکن ہو کم سے کم وقت کے لئے حراست میں لیا جاسکتا ہے۔ 

نوواک نے ایک نیوز بریفنگ کو بتایا ،ریاست ہائے متحدہ ان ممالک میں سے ایک ہے جہاں سب سے زیادہ زیر حراست بچوں کی تعداد ہے۔ ہمارے پاس (امریکا) میں ہجرت کر کے آئے ہوئے ایک لاکھ سے زائد بچے حراست میں ہیں۔

ان کی طرف سے حوصلہ افزائی یقیناً بچوں کو ان کے والدین اور یہاں تک کہ میکسیکو، امریکا کی سرحد پر چھوٹے بچوں سے بھی علیحدہ کرنا بچوں کے حقوق سے متعلق بالکل ممنوع ہے۔ 

اُنہوں نے کہا کہ میں اسے والدین کے ساتھ غیر انسانی سلوک قرار دوں گا۔ امریکی حکام کی طرف سے فوری طور پر کوئی رد عمل سامنے نہیں آیا۔

نوواک نے کہا کہ امریکی عہدے داروں نے تمام ممالک کو بھیجے گئے ان کے سوالنامے کا جواب نہیں دیا ہے۔ 

انہوں نے کہا کہ امریکا نے شہری اور سیاسی حقوق کی ضمانت دینے اور تشدد پر پابندی عائد کرنے جیسے بڑے بین الاقوامی معاہدوں کی توثیق کردی ہے۔

نیویارک یونیورسٹی میں بین الاقوامی قانون کے پروفیسر نوواک نے کہا جس طرح سے وہ ریاست ہائے متحدہ میں کنبے سے الگ ہوگئے تھے۔

نوواک نے کہا کہ امریکا اپنے 100,000 بچوں میں سے اوسطاً 60 بچوں کو انصاف کے نظام یا امیگریشن سے متعلق تحویل میں رکھتا ہے، اس کے بعد بولیویا، بوٹسوانا اور سری لنکا کا نمبر آتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ میکسیکو جہاں متعدد وسطیٰ امریکیوں کو امریکی بارڈر پر واپس لایا گیا ہے، وہیں 18,000بچے بھی امیگریشن سے وابستہ نظر بند ہیں اور 7,000جیلوں میں ہیں۔

انہوں نے کہا کہ امریکی شرح مغربی یورپ میں اوسطاً فی 100,000پانچ اور کینیڈا میں 14-15 کے مقابلے میں ہے۔

نوک نے مزید کہا کہ کم از کم 29,000 بچے، جن کا تعلق بنیادی طور پر دولت اسلامیہ کے جنگجوؤں سے ہے، شمالی شام اور عراق میں رکھے گئے ہیں۔ 

یہاں تک کہ اگر وہ چائلڈ سپاہی رہ چکے ہیں تو بھی ان کا شکار بن کر سمجھا جانا چاہیے، مجرموں کی طرح نہیں لہٰذا معاشرے میں ان کی بحالی ہوسکتی ہے۔

بین الاقوامی خبریں سے مزید