آپ آف لائن ہیں
جمعہ18؍ذیقعد 1441ھ 10؍جولائی 2020ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

نیویارک اور الینوئس کے گورنرز کی ٹرمپ پر تنقید


امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی جانب سے امریکا میں مظاہروں کو روکنے کے لیے فوج تعینات کرنے کے اعلان پر امریکی ریاست نیویارک کے گورنر انڈریو کومو اور گورنر الینوئس جے رابرٹ پریٹزگر نے انہیں ہدفِ تنقید بنایا ہے۔

امریکی ریاست نیویارک کے گورنر انڈریو کومو کا کہنا ہے کہ فلائیڈ کے ہلاکت امریکی تاریخ کا شرمناک باب ہے، پرامن مظاہرین کے خلاف فوج کی تعیناتی مضحکہ خیز ہے۔

جاری کیے گئے ایک بیان میں گورنر نیویارک انڈریو کومو نے کہا ہے کہ ہمیں پولیس کے تشدد اور ناانصافی کا خاتمہ کرنا ہو گا۔

انہوں نے مزید کہا کہ بہت ہوگیا، اور کتنے لوگوں کو ماریں گے؟ انتہا پسند گروپ دائیں بازو میں ہیں اور بائیں بازو میں بھی، یہ سب جانتے ہیں۔

گورنر نیویارک کا یہ بھی کہنا ہے کہ مظاہرین کے خلاف طاقت کے استعمال پر شدید تشویش ہے، مظاہرین کے خلاف طاقت کا بے جا استعمال شرمناک ہے۔

امریکی ریاست الینوئس کے گورنر جے رابرٹ پریٹزگر کا کہنا ہے کہ امریکا کے صدر ڈونلڈ ٹرمپ کی بیان بازی اشتعال انگیز ہے۔

جاری کیے گئے ایک بیان میں الینوئس کے گورنر جے رابرٹ پریٹزگر کا مزید کہنا ہے کہ ٹرمپ کی اشتعال انگیز بیان بازی پر شدید تشویش ہے۔

انہوں نے یہ بھی کہا کہ وائٹ ہاؤس سے ہونے والی بیان بازی حالات کو مزید مشکل بنا رہی ہے، ہمیں ایسی قومی قیادت کی ضرورت ہے جو تحمل و برداشت کی اپیل کرے۔

اس سے قبل امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے پر تشدد مظاہروں کی روک تھام کے لیے فوج کو متحرک کرنے کا اعلان کیا تھا جبکہ وائٹ ہاؤس میں نیشنل گارڈ تعینات کر دیے گئے ہیں۔

ٹرمپ نے اپنے خطاب میں ریاستی گورنرز پر حکومتی عمل داری قائم کرنے پر زور دیتے ہوئے کہا ہے کہ کسی شہر یا ریاست نے ضروری اقدامات سے گریز کیا تو اس میں فوج تعینات کر دیں گے۔

انہوں نے کہا کہ امن و امان کی بحالی کے لیے تمام وسائل بروئے کار لائیں گے، لوٹ مار، جلاؤ گھیراؤ کو روکنے کے لیے ہزاروں فوجی تعینات کر رہا ہوں۔

ٹرمپ نے کہا کہ داخلی دہشت گردی کی کارروائیاں قابلِ مذمت ہیں، چاہتا ہوں اس دہشت گردی کے ذمے دار نوٹس پر آئیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ ذمے داروں کو بھاری جرمانے اور طویل جیل کی سزائیں دلائیں گے، ریاستیں نیشنل گارڈز تعینات کر کے سڑکوں پر عمل داری قائم کریں۔

ٹرمپ کے خطاب سے قبل وائٹ ہاؤس کے باہر آنسو گیس کی شیلنگ اور ربڑ کی گولیاں برسائی گئیں۔

یہ بھی پڑھیئے: پوسٹ مارٹم رپورٹ میں جارج فلائیڈ کی موت قتل قرار

مظاہرین کو منتشر کرنے کے بعد ٹرمپ ہنگاموں سے متاثر ہونے والے چرچ تک پیدل گئے، اس موقع پر سیکیورٹی کے سخت انتظامات تھے۔

امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ کے خطاب کے بعد وائٹ ہاؤس میں نیشنل گارڈ تعینات کر دیئے گئے ہیں۔

واضح رہے کہ سیاہ فام شخص جارج فلائیڈ کی امریکی سفید فام پولیس کے ہاتھوں ہلاکت کے بعد امریکا کے کئی شہروں میں احتجاج اور مظاہروں کا سلسلہ جاری ہے۔

جارج فلائیڈ کی موت کو پوسٹ مارٹم رپورٹ میں قتل قرار دیا گیا ہے، مقتول کو حراست اور تشدد کے دوران دل کا دورہ بھی پڑا تھا۔

سرکاری پوسٹ مارٹم رپورٹ نے جارج فلائیڈ کو دل کا دورہ پڑنے کی تصدیق کی ہے جبکہ رپورٹ میں گردن سختی سے دبانے کی تصدیق بھی ہوگئی ہے، مقتول کو پہلے سے دل کی بیماری تھی۔

قبل ازیں جارج فلائیڈ کے اہلِ خانہ کی جانب سے کرائے گئے پوسٹ مارٹم کی رپورٹ میں بھی موت کی وجہ گردن اور کمر کو دبانا قرار دیا گیا تھا۔

بین الاقوامی خبریں سے مزید