• بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

’ڈی ڈی ایل جے‘ 2020ء میں بنتی تو آخری ڈائیلاگ کیا ہوتا؟

بھارتی اداکارہ کاجول نے سوشل میڈیا پر فلم ’دل والے دلہنیا لے جائیں گے‘ سے متعلق ایک دلچسپ تصویر شیئر کی ہے جس میں اُن کا بتانا ہے کہ اگر یہ فلم 2020ء میں بنتی تو اس فلم کا آخری مشہور ترین ڈائیلاگ کیا ہوتا؟

بھارتی سانولی سلونی سی اداکارہ کاجول نے اپنی فلم ’دل والے دلہنیا لے جائیں گے‘ کے کامیاب 25 سال گزرنے پر سماجی رابطے کی ویب سائٹ ٹوئٹر پر ایک دلچسپ پوسٹ شیئر کی ہے جس میں انہوں نے اپنے فالوورز کو بتایا ہے کہ اگر اُن کی فلم دل والے دلہنیا لے جائیں گے 2020ء میں عالمی وبا کورونا وائرس کے دوران  بنتی تو فلم کا مشہور ترین آخری ڈائیلاگ کیا ہونا تھا۔

کاجول نے ٹوئٹ کے ساتھ ایک کارٹونک تصویر بھی شیئر کی ہے جس میں فلم کے آخری ٹرین والے سین کی عکاسی کی گئی ہے۔

کارٹونک تصویر میں دیکھا جا سکتا ہے کہ راج (شاہ رُخ خان) اپنا ہاتھ بڑ ھا کر سِمرن ( کاجول ) سے کہہ رہا ہے کہ ’سمرن ہاتھ دو،‘ جبکہ سمرن جواب میں راج کو کہہ رہی ہے ’نہیں پہلے ہاتھ دھو۔‘

کاجول کی جانب سے ٹوئٹ کی گئی اس تصویر میں کیپشن بھی دیا گیا ہے جس میں وہ کورونا وائرس سے مخاطب ہوتے ہوئے کہہ رہی ہیں کہ ’جا وائرس جا، جینے دے ہمیں اپنی زندگی۔‘

واضح رہے کہ فلم ’دل والے دُلہنیا لے جائیں گے‘ سینما گھروں میں طویل عرصے تک چلنے والی بھارتی فلموں میں سے ایک فلم ہے۔

آج سے 25 سال قبل ادتیہ چوپڑا کی ہدایات میں بننے والی فلم ’دل والے دلہنیا لے جائیں گے‘ نے اپنی ریلیز کے وقت باکس آفس پر تباہی مچادی تھی اور 100 کروڑ روپے سے زائد کا بزنس کیا تھا۔

انٹرٹینمنٹ سے مزید