آپ آف لائن ہیں
جمعہ18؍ربیع الثانی 1442ھ 4؍دسمبر2020ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

مرتب: محمّد ہمایوں ظفر

یہ2017ء کی بات ہے،جب میری بیگم تیسری بار اُمید سے ہوئیں، تو ہم سب بہت خُوش تھے۔ گھر کے قریبی اسپتال سے باقاعدہ چیک اپ کا سلسلہ شروع ہوگیا۔ جس میں الٹرا ساؤنڈ اور دیگر ضروری ٹیسٹس شامل تھے۔ چھٹے مہینے میں معمول کے مطابق ایک روز الٹراساؤنڈ کی رپورٹ لے کر ڈاکٹر کے پاس گئے، تو ڈاکٹر کی نظر پچھلی فائل میں لگی رپورٹس پرپڑی، تو چونکتے ہوئے آہستہ سے بڑبڑائی ’’اوہو، یہ تو تیسرے مہینے کی رپورٹس ہیں۔‘‘ یہ سُن کر میرے کان کھڑے ہوگئے، مَیں نے بے چینی سے استفسار کیا، تو ڈاکٹر صاحبہ نے انکشاف کیا کہ ’’بےبی کا ہونٹ کٹا ہوا ہے اور دماغ میں پانی بھر گیا ہے۔‘‘ یہ سُنتے ہی میں نے گھبراہٹ اور پریشانی کے عالم میں سوال کیا اب کیاکرنا ہے؟ 

تو ڈاکٹر کہنے لگی ’’پریشانی کی بات نہیں، اس کی پلاسٹک سرجری ہوجائے گی۔ اور رہی بات دماغ کی، تو ہم ڈیلیوری کے بعد نیورو سرجن کو بلوالیں گے، وہ بتائیں گے کہ کیا کرنا ہے۔‘‘ پھر اس نے ہمیں مشورہ دیا کہ دیکھیے، ہوسکتا ہے کہ یہ رپورٹ غلط ہو، آپ فلاں جگہ سے’’ڈوپلر الٹراساؤنڈ‘‘ کروالیں، شاید رپورٹ برعکس آئے۔ مگر اس بار بھی وہی رپورٹ آئی، تو ہمارے ایک عزیز نے اسٹیڈیم روڈ پر واقع ایک نجی اسپتال کی ایک ماہر گائناکالوجسٹ سے رابطے کا کہا۔ دوسری صبح ہم وہاں پہنچ گئے اور ڈاکٹر کے سامنے پریشانی کے عالم میں سارا کیس رکھ دیا کہ جب ہم نے تیسرے مہینے کی رپورٹ میں ’’Anomaly Scan Advice ‘‘(اناملی اسکین ایڈوائس) لکھا دیکھا، تو اس بابت ڈاکٹر سے بارہا پوچھاکہ یہ ’’اناملی اسکین ایڈوائس‘‘ کیا ہے، کیوں لکھا گیا ہے؟،، مگر ڈاکٹر نے اس حوالے سے ہمیں کچھ نہیں بتایا اور کہا کہ کوئی خاص بات نہیں ہے، آپ اسے نظر انداز کریں۔‘‘ 

مگر پھر چھٹے مہینے کی رپورٹ دیکھتے ہوئے اچانک اس کی نظر تیسرے مہینے کی رپورٹ پر پڑی، تو وہ چونکی، مگر اس وقت تک بہت دیر ہوچکی تھی۔ ہماری ساری پریشانی اور احوال سُن کر ڈاکٹر نے کہا ’’ٹھیک ہے، مَیں آپ کا سارا کیس سمجھ چُکی ہوں، یہ اُس ڈاکٹر کی غفلت ہے کہ جب تیسرے مہینے سے الٹرا ساؤنڈ رپورٹ میں ’’اناملی اسکین ایڈوائس‘‘ لکھا آتا رہا، تو کیوں نظر انداز کرتی رہی۔‘‘بہرحال، ہم نے مسئلے کا حل پوچھا، تو ڈاکٹر نے کہا’’ دیکھیے، یہ ایسا مسئلہ ہے جو ریورس ایبل نہیں ہے۔

آپ یہاں سے الٹراساؤنڈ کروائیں، پھر بات کرتی ہوں۔‘‘بہرحال، ہم نے ایک بار پھر الٹرا ساؤنڈ کروایا، جس نے ہماری پریشانی کو مزید بڑھادیا۔رپورٹس دیکھنے کے بعد ڈاکٹر نے بتایا کہ بےبی کا Cleft palate یعنی تالو اور ہونٹ کٹا ہوا ہے اور اسے ’’Hydrocephalus‘‘ بھی ہے ۔ہم نے سوال کیا کہ کٹا ہونٹ اور تالو تو سمجھ میں آگیا، لیکن یہ دوسری کیاچیز ہے، تب ڈاکٹر نے بتایا کہ تالو کٹے ہونے کی وجہ سے اس کے منہ سے دماغ میں اضافی پانی چلا گیا ہے، جسےطبّی زبان میں ہائیڈرو سیفیلس کہا جاتا ہے، جس کے علامات کی نشان دہی تیسرے مہینے کی رپورٹ میں کردی گئی تھی۔

ظاہر ہے، ڈاکٹر کی باتیں ہمارے لیے تعجب خیز تھیں، میں نے فوراً سوال کیا ’’اس مرض کا علاج کیسے ہوگا؟‘‘ تو ڈاکٹر نے بتایا کہ ’’دیکھیے، آپ پریشان نہ ہوں، یہ نیورو سرجن کا کام ہے، وہ اس کے دماغ میں ایک ’’shunt‘‘ ڈالے گا، جس کا پائپ پیشاب کی نالی سے جڑ جائے گا، جس کے بعد اضافی پانی پیشاب کے راستے خارج ہوتا رہے گا۔‘‘ میں نے کہا ’’ٹھیک ہے، مگر یہ بتائیے کہ پھر ’’shunt‘‘ نکلے گا کب؟‘‘ تو ڈاکٹر نے یہ بتا کر مجھے مزید صدمے سے دوچار کردیا کہ ’’یہ زندگی بھر لگا رہے گا اور تقریباً دس بارہ سال بعد جب بلاک ہوجائے گا، تو ایک بار پھر کروانا ہوگا۔‘‘ بہرحال، ڈاکٹر نے ہمیں کچھ ضروری ہدایات اور تسلیاں دیں، جس کے بعد ہم گھر آگئے۔

وہ ہفتہ 14 جولائی 2018ء کی دوپہر تھی، جب میرا بیٹا میری گود میں دیا گیا۔ اور وہی ہوا، جو رپورٹس آرہی تھیں۔اس کا ہونٹ اور تالو کٹا ہواتھا۔ لوگ اپنی اولاد کی پیدایش پر خوشی سے رو پڑتے ہیں، مَیں بھی رو رہا تھا، مگر غم اور پریشانی سے۔اسپتال کے میڈیکل اسٹوڈنٹس میرے بچّے کو جس طرح آآکر دیکھ رہے تھے،اس سے مجھے وحشت ہورہی تھی۔ مَیں اکیلا تھا ساتھ کوئی نہیں تھا، جو فیصلہ کرنا تھا، اکیلے ہی کرنا تھا۔ ڈاکٹرز کی ہدایت کے مطابق اسے وارڈ میں ایڈمٹ کروانا تھا، مگر میں اسپتال کے بچّہ وارڈ کا خرچہ اٹھانے سے قاصر تھا، لہٰذا بیگم کو اسپتال ہی میں رہنے دیا اور بچّے کو ڈسچارج کرواکر جناح اسپتال لے گیا۔ 

وہاں ڈاکٹروں نے تھوڑی دیر تک آکسیجن وغیرہ دینے کے بعد کہا کہ اسے گھر لے جائیں، اب یہ ٹھیک ہے۔ میں کیا کرتا، کہاں لےجاتا، وہ کٹے ہونٹ اور تالو کی وجہ سے فیڈ نہیں لے سکتا تھا۔ لامحالہ گھر لاکر اپنی والدہ کے سپرد کردیا، اسی دوران میری بہن آگئی اورکسی نہ کسی طرح بچّے کو فیڈر سے دودھ پلایا۔ اللہ اللہ کر کے تین دن گزرے اور میری بیگم اسپتال سے ڈسچارج ہوگئی۔ دوسری صبح ہم فوراً ایک اسپتال گئے، تو پتا چلا کہ وہاں نیورولوجسٹ نہیں ہوتا، وہاں سے دوسرے اسپتال گئے، تووہاں کے ایک ڈاکٹر کی ہدایت کے مطابق بچّے کے دماغ کا سی ٹی اسکین کروایا۔ 

دوسرے روز سی ٹی اسکین رپورٹ دیکھ کر ڈاکٹر نے بتایا کہ بچّے کے دماغ میں نارمل سے زیادہ پانی ہے، لہٰذا shuntڈالنا ہوگا، مگر اس کے لیے آپ کو پہلے بچّے کا وزن بڑھانا ہوگا۔ اگر وزن نہ بڑھا اور ہائیڈروسیفیلس کی وجہ سے اس کے دماغ میں اضافی پانی کا دبائو بڑھ گیا،تو اس کا سر فٹ بال کے سائز کا ہوجائے گا۔‘‘

اب ہمارے لیے یہ ایک چیلنج تھا کہ ہم اپنے بچے کا وزن کیسے بڑھائیں، ہم ہر ہفتے اس کا وزن چیک کرواتے اور دعائیں کرتے کہ وزن بڑھ جائے، مگر وزن تھا کہ بڑھ ہی نہیں پارہا تھا، اُس پر ہمارے دماغ میں ایک خوف یہ طاری کہ اگر ہائیڈروسیفیلس کے اثرات نمودار ہوگئے، تو کہیں shunt ڈالتے وقت وزن کی کمی کے باعث بچّے کی جان نہ چلی جائے۔ ہم بچّے کا وزن بڑھانے کے لیے دن رات تگ و دو کرتے رہے، مگر وزن بڑھ کے نہ دیا۔ اسی دوران کسی نے ایک پرائیویٹ اسپتال کے نیوروفزیشن سے رابطہ کرنے کو کہا، تو ہم اُن کے پاس چلے گئے۔ انہوں نے معائنے کے بعد دماغ کا پلین (سادہ) سی ٹی اسکین کروانے کا مشورہ دیا، تومعلوم ہوا کہ ہمارے بچے کو ہائیڈرو سیفیلس نہیں بلکہ Hydranencephaly ہے۔ 

جو کہ ایک لاعلاج مرض ہے، اس میں shunt تو کیا، کوئی طریقہ علاج کارگر ثابت نہیں ہوتا، کیوں کہ اگر اضافی پانی وینٹریکلز کے اندر ہوتا ہے، تو تب تو shunt ڈالا جاسکتا ہے، مگر ہمارے بچّے کے وینٹریکلز تو کیا، پورے سرہی میں پانی تھا۔ یعنی سارا دماغ پانی میں ڈوبا ہوا تھا۔ ڈاکٹر کی پوری بات سننے کے بعد میں نے بے چارگی سے کہا ’’سر! دنیا چاند پر چلی گئی ہے، اس کا کوئی تو علاج ہوگا؟‘‘ مگر جواب میں مایوسی کے سوا کچھ نہ تھا۔ پھرمیں نے ڈاکٹر سے پوچھا کہ اس بچّے کا مستقبل کیا ہے؟ تو اُنہوں نے کہا ’’wait and watch بس، آپ اس کے ہونٹ کی سرجری کروالیں۔‘‘

بہرحال، وقت یونہی گزرتا رہا، اس دوران میرے پیارے بیٹے، محمد سالم عمران کو چیسٹ انفیکشن اور نمونیے کے باعث کئی بار اسپتال میں ایڈمٹ کروانا پڑا۔ لیکن جو قدرت کو منظور، 11 جنوری 2019 بروز جمعہ صبح بیگم نے تشویش ناک انداز میں بتایا کہ ’’یہ کچھ سُست سُست لگ رہا ہے،اسے دودھ دینے کے لیے بہت دیر سے اٹھا رہی ہوں، مگر اُٹھ نہیں رہا۔‘‘ فوری طور پر اُسے اسپتال لے کرگئے، تو اُسے فٹس’’fits‘‘(جھٹکے) پڑنے لگے، ڈاکٹروں نے ہر ممکن سعی کی، سی پی آر تک کیا ،مگر ہونی کو کون ٹال سکتا ہے۔ یوں ہمارا پھول جیسا بیٹا، محمد سالم عمران اتنی تکالیف اور اذیتوں سے نجات پاکر پُرسکون ہوگیا۔ بعد نمازِ عصر دبی سسکیوں اور کپکپاتے ہاتھوں سے میں نے خود اُسے لحد میں اُتارا۔

آج میرے بیٹے کو دنیا سے گئے ڈیڑھ سال بیت چکا ہے، لیکن اس کی مختصر زندگی کے واقعات ہمارے لیے ناقابلِ فراموش بن چکے ہیں۔ اُس کی کچھ دوائیں، پیمپرز، دودھ اور اُس کی ضرورت کا سامان میں نے اُسی اسپتال کو ڈونیٹ کردیا، جہاں وہ تین بار داخل رہا تھا۔ البتہ اُس کی ’’کلف پیلٹ نِپل‘‘ سنبھال کے رکھی ہے۔ راتوں کو اُس کے چیخنے کی آوازیں، اُس کا چہرہ، میرا اُس کے ہونٹوں پر بوسہ دینا اور بھیگی آنکھوں سے دُعا کرنا کہ یااللہ! یہ ٹھیک ہوجائے اور کَس کر سینے سے لگانا اب بھی یاد آتا ہے۔ کاش! وہ ڈاکٹر تیسرے مہینے کی رپورٹ ٹھیک سے دیکھ لیتی، تو شاید ہمیں یہ دن نہ دیکھنے پڑتے۔ بہرحال، وہ اب ہمارے لیے یادوں کا ایک ایسا تحفہ ہے، جو ہمیشہ ہمارے دِلوں میں رہے گا۔ جنّت کے پھول، محمد سالم عمران یادوں میں جیتے رہو۔ (عمران اسمعٰیل، کراچی)

سُنیے…آپ سے کچھ کہنا ہے…!!

اگر آپ کے ذہن میں کوئی ایسا واقعہ محفوظ ہے، جو کسی کردار کی انفرادیت، پُراسراریت یا واقعاتی انوکھے پن کی بِنا پر قارئین کے لیے دل چسپی کا باعث معلوم ہو، تو فوراً قلم اٹھائیے اور اس صفحے کا حصّہ بن جائیے۔ یہ واقعات قارئین کے شعور و آگہی میں اضافے کے ساتھ اُن کے لیے زندگی کا سفر آسان کرنے میں بھی ممدومعاون ثابت ہوسکتے ہیں۔ واقعات بھیجنے کے لیے تحریر کا پختہ ہونا ضروری نہیں، صرف سچّا ہونا لازم ہے۔ نیز، اپنا نام و پتا بھی لکھیے تاکہ رابطے کی ضرورت محسوس ہو، تو رابطہ کیا جاسکے۔ ہمیں اپنی تحریریں اس پتے پر بھیجیں۔

ایڈیٹر، ’’سنڈے میگزین‘‘ صفحہ ناقابلِ فراموش، روزنامہ جنگ، شعبہ میگزین، اخبار منزل، آئی آئی چندریگر روڈ، کراچی۔

سنڈے میگزین سے مزید