آپ آف لائن ہیں
ہفتہ6؍ربیع الاوّل 1442ھ 24؍اکتوبر 2020ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

اسلام آباد: لیڈی ہیلتھ ورکرز کے حکومتی نمائندوں سے مذاکرات ناکام


اسلام آباد کے ڈی چوک پر کل سے موجود لیڈی ہیلتھ ورکرز کے حکومتی نمائندوں سے مذاکرات ناکام ہوگئے جبکہ انھوں نے بغیر مطالبات منوائے اٹھنے سے بھی انکار کردیا۔

معاون خصوصی برائے صحت ڈاکٹر فیصل سلطان نے بھی خواتین ملازمین سے مذاکرات کیے جو ناکام ہوگئے۔

واضح رہے کہ ملک بھر کی لیڈی ہیلتھ ورکرز تنخواہوں، الاؤنسز میں اضافے اور جبری برطرفیوں کے خلاف اسلام آباد میں 2 روز سے دھرنا دیے بیٹھی ہیں۔

ان ورکرز اور حکومتی نمائندوں کے درمیان مذاکرات کے چار دور ناکام ہوچکے ہیں۔

لیڈی ہیلتھ ورکرز کہتی ہیں کہ رات کھلے آسمان تلے گزارنا ایک مشکل مرحلہ تھا مگر اپنا حق حاصل کیے بغیر دھرنا ختم نہیں کریں گی۔

وفاقی حکومت کا موقف ہے کہ لیڈی ہیلتھ ورکرز کے مسائل کا حل صوبائی حکومتوں کے پاس ہے، یہ وفاق کا اختیار ہی نہیں ہے، کمیٹی بنا کر صوبوں کے ساتھ فوری بات کی جا سکتی ہے۔

تاہم لیڈی ہیلتھ ورکرز نوٹیفکیشن کے اجراء تک دھرنا ختم نہ کرنے پر ڈٹ گئی ہیں، وہ کہتی ہیں کہ تقریباً ڈھائی سال سے کمیٹیوں کا شکار ہیں اب نوٹیفکیشن کے بنا احتجاج ختم نہیں ہوگا۔

لیڈی ہیلتھ ورکرز سے وزارتِ صحت کے حکام کی بدھ کی شام کی بیٹھک بھی ناکام ہوئی۔

وزیر پارلیمانی امور علی محمد خان نے احتجاجی کیمپ آ کر معاملات سلجھانے اور کمیٹی تشکیل دینے کی پیشکش کی اور پھر بدھ و جمعرات کی درمیانی شب رات ساڑھے 3 بجے تک بھی مذاکرات کیے جو ناکام رہے۔

وزیراعظم کے معاون خصوصی برائے صحت ڈاکٹر فیصل سلطان نے بھی لیڈی ہیلتھ ورکرز سے مذاکرات کیے۔

تاہم انھوں نے وزیراعلیٰ پنجاب سردار عثمان بزدار اور صوبائی وزیر صحت ڈاکٹر یاسمین راشد سے مسائل کے حل پر گفتگو کرنے کے بعد پھر سے ملاقات کا وقت مانگ لیا۔

قومی خبریں سے مزید