آپ آف لائن ہیں
منگل29؍شعبان المعظم 1442ھ 13؍اپریل2021ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

انتہائی اہمیت کی ویڈیو سامنے آئی ہے: کنور دلشاد

سینیٹ انتخابات میں مبینہ طور پر ووٹ فروخت کرنے والے خیبر پختون خوا اسمبلی کے اراکین کی منظر عام پر آنے والی ویڈیو کے حوالے سے سابق سیکریٹری الیکشن کمیشن کنور دلشاد کا کہنا ہے کہ انتہائی اہمیت کی ویڈیو سامنے آئی ہے۔

’جیو نیوز‘ کے مارننگ شو ’جیو پاکستان‘ میں گفتگو کرتے ہوئے سابق سیکریٹری الیکشن کمیشن نے کہا کہ 2009ء میں ہمارے پاس اس طرح کی شکایت آئی تھی۔

کنور دلشاد نے کہا کہ اس وقت انکوائری کی تو ثبوت سامنے نہیں آئے، اب انتہائی اہمیت کی ویڈیو سامنے آئی ہے۔

انہوں نے کہا کہ وزیرِ اعظم عمران خان کا ہمیشہ بیان آتا رہا ہے کہ سینیٹ الیکشن میں ہارس ٹریڈنگ ہوتی ہے، ہارس ٹریڈنگ میں کروڑوں اربوں روپیہ تقسیم ہوا ہے۔

کنور دلشاد نے کہا کہ اس معاملے کو منطقی انجام تک پہنچانے کیلئے ضروری ہے کہ الیکشن کمیشن کو تمام دستاویزات، ویڈیو کے ساتھ ریفرنس کی صورت میں اور 2017ء کے الیکشن ایکٹ سیکشن 167، 168، 169 اور 170 کے تحت داخل کر دیں۔

انہوں نے کہا کہ یہ معاملہ رشوت کے زمرے میں آتا ہے، الیکشن ایکٹ 2017ء کے سیکشن 167، 168، 169، 170 میں لکھا ہے کہ جو بھی رشوت کے ذریعے الیکشن میں مداخلت کرتا ہے وہ قومی مجرم ہے۔

سابق سیکرٹری الیکشن کمیشن کنور دلشاد کا مزید کہنا ہے کہ ان سیکشنوں میں لکھا ہےکہ الیکشن کمیشن انہیں نااہل قرار دینے کے ساتھ 3 سال کی سزا بھی دے سکتا ہے۔

انہوں نے یہ بھی کہا کہ ایسے افراد کے خلاف الیکشن کمیشن ایف آئی آر درج کرانے کا بھی مجاز ہے، نا اہل قرار پانے والا 5 سال تک الیکشن میں بھی حصہ لینے کا مجاز نہیں۔

واضح رہے کہ 2018ء کے سینٹ انتخابات میں مبینہ طور پر ووٹ فروخت کرنے والے خیبر پختون خوا اسمبلی کے اراکین کی ویڈیو منظر عام آگئی ہے۔

خیبر پختون خوا کابینہ کے موجودہ وزیرِ قانون سلطان محمد بھی 2018ء کے سینیٹ انتخابات میں ہارس ٹریڈنگ میں ملوث نکلے ہیں۔


مبینہ طور پر منظرِ عام پر آنے والی ویڈیو میں وزیرِ قانون سلطان محمد کو بھی رقم لیتے ہوئے دیکھا جا سکتا ہے۔

وزیرِ اعظم عمران خان نے ویڈیو کا نوٹس لیتے ہوئے وزیرِ اعلیٰ خیبر پختون خوا محمود خان کو فوری کارروائی کرنے اور وزیرِ قانون کو عہدے سے ہٹانے کا حکم دیا جس پر وزیرِ اعلیٰ محمود خان نے وزیرِ قانون سلطان محمد سے فوری طور پر استعفیٰ طلب کرتے ہوئے معاملے کی شفاف انکوائری کا حکم دیا ہے۔

بعد ازاں سلطان محمد خان نے عہدے سے مستعفی ہو کر اپنا تحریری استعفیٰ وزیرِاعلیٰ کو ارسال کر دیا جس کے بعد وزیراعلیٰ خیبر پختون خوا محمود خان نے ان کا استعفیٰ منظور کر لیا۔

دیئے گئے استعفے میں سلطان محمد نے کہا ہے کہ ایک ویڈیو منظرِ عام پر آئی ہے جس میں میرا بھی ذکر کیا گیا ہے، لہٰذا یہ میری ذمے داری ہے کہ میں کابینہ سے الگ ہو کر استعفیٰ دے دوں۔

قومی خبریں سے مزید