• بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

تمام فارمیٹ وکٹ کیپنگ اور بیٹنگ میں توازن مشکل مرحلہ ہوتا ہے، محمد رضوان


پاکستان کرکٹ ٹیم کے نائب کپتان محمد رضوان نے کہا ہے کہ بیٹنگ آڈر میں تبدیلی کی وجہ سے ان کی کارکردگی میں اضافہ ہوا۔

تینوں فارمیٹ میں وکٹ کیپنگ اور بیٹنگ کے توازن کو برقرا رکھنا مشکل مرحلہ ہوتا ہے، تینوں فارمیٹ کھیلنے کیلئے سپر فٹنس لازمی درکار ہوتی ہے۔

پاکستان کرکٹ ٹیم ان دنوں انگلینڈ میں موجود ہے، جہاں پاکستان ٹیم کے اوپنر فخر زمان نے پی سی بی میڈیا کے لئے نائب کپتان محمد رضوان کا انٹرویو کیا۔

فخر زمان نے ان کی مسلسل اچھی پرفارمنس کا راز پوچھا تو رضوان نے اس کی وجہ بیٹنگ آرڈر کو قرار دیا۔

محمد رضوان کا کہنا تھا کہ پہلے وہ 6 یا 7 نمبر پر بیٹنگ کرنے آتے تھے، اور لوگوں کا تاثر تھا کہ وہ چھکا نہین مارسکتے حالانکہ وہ ڈومیسٹک کرکٹ میں اوپر کھیلتے تھے۔

انہوں نے کہاکہ جب نئی مینجمنٹ نے انہیں اوپر بیٹنگ کے لئے بھیجا تو پھر اچھے رنز بننا شروع ہوئے، مینجمنٹ نے جو اعتماد کیا، اس پر پورا اترنے کی ہر ممکن کوشش کرتا ہوں۔

محمد رضوان نے کہا کہ بیٹنگ آڈر میں تبدیلی کی وجہ سے ان کی کارکردگی میں اضافہ ہوا۔

63 میچز میں وکٹوں کے پیچھے 83 شکار کرنے والے محمد رضوان نے گزشتہ 12 ماہ میں میں کُل 33 میچز میں 1320 رنز بناچکے ہیں، گزشتہ 5 ماہ میں انہوں نے10 ٹی ٹونٹی انٹرنیشنل میچز میں 106 کی اوسط اور 141.71 کے اسٹرائیک ریٹ سے 530 رنز بناچکے ہیں، جس میں ایک سنچری اور 5 نصف سنچریاں شامل ہیں۔

محمد رضوان کا کہنا ہے کہ محمد حفیظ، مشتاق احمد اور شاہد آفریدی نے ان کی ہارڈ ہٹنگ صلاحیت کو بہتر بنانے میں اہم کردار کیا ہے۔

ایک روز رمیز راجہ نیٹ کے پاس سے گزر تے ہوئے مشورہ دے گئے کہ’ہیڈ اسٹل رکھو‘ جس کا مجھے بہت فائدہ ہوا۔

انہوں نے مزید کہا کہ بحیثیت وکٹ کیپر بیٹسمین ٹیسٹ کرکٹ بہادری اور مستقل مزاجی مانگتی ہے اور اگر تینوں فارمیٹ کھیلنے ہیں تو آپ کو سپر فٹ ہونا چاہیے۔

محمد رضوان نے بتایا کہ گزشتہ سال انگلینڈ کے دورے سے قبل انہوں نے اپنی بیٹنگ اور وکٹ کیپنگ کے لیے خصوصی مشقیں کی تھیں۔

انہوں نے کہا کہ برطانیہ کی کنڈیشنز میں ریڈ بال کے لیٹ سوئنگ ہونے کے باعث گیند آخری وقت تک گھومتا رہتا ہے جس پر قابو پانے کے لیے خصوصی محنت درکار ہوتی ہے۔

محمدرضوان نے یہ بھی کہاکہ اسی طرح وائٹ بال میں وہاں ہائی اسکورننگ گیمز ہوتی ہیں، جس کے لیے زیادہ دیر کریز پر ٹھہرنا ضروری ہوتا ہے۔

قومی خبریں سے مزید