• بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

سندھ میں لاک ڈاؤن، کیا بند ہوگا اور کیا کھلا رہے گا؟


وزیراعلیٰ سندھ سید مراد علی شاہ نے کل سے ہونے والے تمام امتحانات ایک ہفتے کے لیے ملتوی کرنے کا اعلان کیا ہے۔

کراچی میں پریس کانفرنس کے دوران وزیراعلیٰ سندھ نے کہا کہ سندھ میں مکمل لاک ڈاؤن نہیں ہوگا، مخصوص شعبوں کو بند کیا جائے گا۔

انہوں نے کہا کہ 8 اگست تک کے لاک ڈاؤن میں صحت سے متعلق شعبے کھلے رہیں گے، صفائی، بجلی اور پانی کے محکمے کھلے رہیں گے، ٹرانسپورٹ بند کررہےہیں، چھوٹی ٹرانسپورٹ کھلی رکھیں گے۔

مراد علی شاہ نےمزید کہا کہ کریانہ، بیکری، سبزی اور گوشت کی دکانیں شام 6 بجے تک کھلیں گی جبکہ ریٹیل کے تمام کاروبار بند رہیں گے۔

اُن کا کہنا تھا کہ ریسٹورنٹ سے صرف ڈیلیوری کی اجازت ہوگی، بینک، ایکسپورٹ کے شعبے، بندرگاہ، پیٹرول پمپس اور اسٹاک ایکسچینج کھلا رہے گا۔

وزیراعلیٰ سندھ نے یہ بھی کہا کہ صوبائی حکومت نے کل سے ہونے والے تمام امتحانات ایک ہفتے کے لیے ملتوی کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ لاک ڈاؤن ہماری آخری امید ہے، کوشش کررہے ہیں کہ دوبارہ نہ جائیں، اللہ کرے وبا ختم ہوجائے مگر اقدامات سے پھیلاؤ کو روک سکتےہیں۔

سید مراد علی شاہ نے کہا کہ علما نے کہا کہ ویکسی نیشن سینٹر مساجد اور امام بارگاہوں میں لگائیں، سندھ اسمبلی کا اجلاس بھی اسپیکر کو آن لائن کرنے کی درخواست کی ہے۔

اُن کا کہنا تھا کہ پہلے بھی میرے فیصلوں کا مزاق اڑایا گیا تھا، میرے ان فیصلوں سے فائدہ ہوا تھا، میں اس کا کریڈٹ نہیں لیتا۔

وزیراعلیٰ سندھ نے کہا کہ اس لاک ڈاؤن کا زیادہ فوکس کراچی میں ہوگا، یہ زبانی جمع خرچ سے نہیں ہوگا عملی اقدامات اٹھانے ہوں گے۔

انہوں نے کہا کہ جو کہتے ہیں کہیں لاک ڈؤن نہیں ہوا توغلط کہتےہیں، سڈنی میں دو کیسز آئے تولاک ڈاؤن لگا دیا گیا تھا۔

سید مراد علی شاہ نے کہا کہ کوئی ایک شخص بھی ایسا نہیں جولاک ڈاؤن میں بھوک سےہلاک ہوا، پتا نہیں کہاں کہاں کی وڈیوز اور تصاویر دکھائی گئیں۔

ان کا کہنا تھا کہ جن کے پاس شناختی کارڈ نہیں ان کی ویکسی نیشن کے لئے طریقہ کار بنایا جارہا ہے، نجی دفاتر کو مشورہ ہے کہ بند رکھیں یا کم افراد رکھیں۔

وزیراعلیٰ سندھ نے کہا کہ جب تک بہت ضروری کام نہ ہو لوگ گھر سے نہ نکلیں، اس وقت سب کوسائنوفارم لگ رہی تھی میں نے وہی ویکسین لگائی۔

انہوں نے کہا کہ ڈاکٹرز نے کہا ہے کہ اس ویکسین کا بہت فائدہ ہے، میں دوبارہ انفیکٹ ہوسکتا تھا، میں نے بہت بےاحتیاطی کی۔

قومی خبریں سے مزید