• بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

ایمان صغیر

اس جدید دور میں سوشل میڈیا کےاستعمال میں دن بہ دن اضافہ ہورہا ہے۔ہم میں سے بہت سےا فراد پورا دن سوشل میڈیا پر تصویریں اور پوسٹس شیئر، لائیک اورٹویٹ کرتے ہیں۔ لیکن بہت کم افراد یہ سوچتے ہیں کہ یہ عمل ہمارے دماغ پر کیا اثرات مر تب کرتاہے۔ تاریخ گواہ ہے کہ جدید ایجادات متعارف ہونے کی وجہ سے انسانی دماغ کوکئی طرح کی پیش رفت سے سمجھو تاکرنےکی ضرورت پیش آتی رہی ہے۔ انٹرنیٹ اور سو شل میڈیا کی تیز رفتار ترقّی اور پھیلاؤ نے بھی انسانی دماغ پربہت دل چسپ اثرات مرتّب کئے ہیں۔

بعض افراد کے لیے آن لائن نیٹ ورکنگ ایک جزوقتی دل چسپی کے ساتھ زندگی کا ایک طرزِ عمل اور کُل وقتی مشغلہ بننے کے بعد ’’نیورو پلاسٹیسِٹی‘‘ یا نئے تجربات کے پیشِ نظر اپنے رویّے کو بدلنے کی دماغی صلاحیت، کا استعمال بے تحاشا بڑھ گیا ہے۔ ماہرینِ دماغ کے مطابق ہمیں یہ یاد رکھنا چاہیے کہ جس شخص کے سوشل میڈیا جتنے زیادہ لوگ ہوتے ہیں ،اُس کے دماغ کا گرے میٹر اتنا ہی بڑا ہوتا ہے۔

ہم آن لائن نیٹ ورکنگ کے سماجی اور معاشرتی اثرات کے بارے میں بات کرتے نہیں تھکتے، لیکن اس کے انسانی دماغ پراثرات کے بارے میں ہم شاید ہی کبھی بات کرتے ہیں۔ بہ ظاہر اس کی وجوہات آن لائن نیٹ ورکنگ کامقابلتاً نیا پن اوراس موضوع پر کسی تحقیق کا نہ ہونا ہو سکتی ہیں، پھر بھی اب تک جو تھوڑی بہت تحقیق کی گئی ہے وہ بلاشبہ تجزیے کے قابل ہے۔ مثلاً رائل سوسائٹی کے ایک جائزے میں بتایا گیا ہے کہ فیس بُک پر ہمارے دوستوں کی تعدادکا ہمارے دماغ میں موجودگرے میٹر سے بہ راہ راست تعلق ہے۔

واضح رہے کہ گرے میٹر یادداشت، احساسات، گفتگو، حسیّاتی تاثر اور پٹھوں کو کنٹرول کرنے والا دماغ کا ایک حصہ ہے۔ محققین نے جب اس کے حجم کی پیمایش کی تو انہیں معلوم ہوا کہ جس شخص کےپاس سوشل میڈیا پر جتنے زیادہ لوگ تھے، اس کے دماغ کے چند حصوں میں اُتنا ہی زیادہ گرے میٹر تھا، پھر بھی اس صورتِ حال کے پسِ منظر میں کسی صریح خواہش کی عدم موجودگی کے ضمن میں یہ ایک قسم کی مرغی اور انڈے کی سی کیفیت ہے جہاں ہم یقین سے نہیں کہہ سکتے کہ آیا وہ لوگ، جن میں گرے میٹر بہت زیادہ ہے، وہ عام طور پر آن لائن نیٹ ورکنگ میں زیادہ بہتر کارکردگی کا مظاہرہ کرتے ہیں یا پھر گرے میٹر کسی شخص کے سوشل میڈیا کے لوگوں کی تعداد کی وجہ سے بنتا ہے۔

چوں کہ یادداشت گرے میٹر کے بنیادی عناصر میں سے ایک ہے اس لئے آن لائن نیٹ ورکنگ کی ہماری صورتِ حال کا جائزہ لینےکی صلاحیت پر اثرات کے حوالے سے اکثر سوالات اٹھائے جاتے ہیں۔ بہت سے لوگ شکایت کرتے ہیں کہ اس حقیقت کے پیشِ نظرکہ مثال کے طور پر ہم آن لائن نیٹ ورکنگ کو کسی سے بات چیت کے لئے استعمال کرتے ہیں جو ان کےٹیلی فون نمبر اور رابطے کی تفصیلات کو یاد رکھنے کے بالکل الٹ ہے۔ لہٰذا اس طرح ہم اپنی یادداشت کو نقصان پہنچا رہے ہیں۔ لیکن سائنسی ثبوت سے ظاہر ہوتا ہے کہ حقیقت اس کے بالکل برعکس ہے۔

2012 میں تجزیہ کار ٹریسی پیکیئم ایلووے اور راس جیفری نے مختلف آن لائن نیٹ ورکنگ چینلز کے ہماری یادداشت، سوچنے سمجھنے کی صلاحیتوں اور سماجی روابط کے مختلف درجات پر ہونے والے اثرات پر ’’سو شل نیٹ ورکنگ سائٹس (SNSs) کے استعمال کے ادراکی مہارت پر اثرات‘‘ کے عنوان سے ایک تحقیقی مقالہ پیش کیا۔ انہیں تحقیق سے معلوم ہوا کہ مختلف مراحل پر مختلف اقسام کی مشقیں یقیناً اراکین کی فعال یادداشت پر فیصلہ کُن اثرات مرتّب کرتی ہیں۔

مثال کے طور پر اُنہوں نے ایک رکن سے اپنے دوستوں کے فیس بُک ا سٹیٹس چیک کرنے کے لئے کہا۔ یہ کام جتنا زیادہ کیا گیا اتنی ہی زیادہ فعال یادداشت کے درجات میں فیصلہ کن بہتری آئی۔ تحقیق سے پتا چالا کہ زیادہ معلومات حاصل کرنے کے لیے، یعنی زیادہ اسٹیٹس چیک کرنے، زیادہ تصویریں دیکھنے اور زیادہ بات چیت کے لئے، ہمارے دماغ کو رفتار کا ساتھ دینے کے لئے زیادہ محنت کرنی پڑتی ہے۔ ماہرین کے بہ قول ایک پٹھے کی طرح سیریبرم سےجتنا زیادہ کام لیا جاتا ہے، اس کی نشونما اُتنی ہی متوازن ہوتی ہے۔

سائنس اینڈ ٹیکنالوجی سے مزید
ٹیکنالوجی سے مزید