• بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

عمران خان کی تحریک کے دوران اداروں کا رویہ کیا ہوگا؟ ن لیگ اور اتحادی جماعتیں شش و پنج کا شکار

لاہور (پرویز بشیر ) پاکستان مسلم لیگ (ن) اور حکومتی اتحادی جماعتیں شش و پنج اور تذبذب کا شکار ہیں کہ عمران خان کی تحریک کے دوران اداروں کا رویہ اور رجحان کیا اور کس کے حق میں ہو گا؟ کیا ادارے اسی طرح نیوٹرل رہیں گے کہ اس مشکل وقت میں اپنا کوئی کردار بھی ادا کرینگے؟ بظاہر یہ تمام جماعتیں مقتدر حلقوں کے نیوٹرل ہونے کی تعریف کرتی ہیں لیکن ہر روز اس آس اور امید پر رہتی ہیں کہ عمران خان کے سخت جارحانہ رویئے پر کوئی رد عمل آئے گا لیکن ایسا نہیں ہوتا یہ جماعتیں سمجھتی ہیں کہ مستقبل میں اسٹیبلشمنٹ کو کسی نہ کسی طرح کا کردار ادا کرنا پڑے گا کیونکہ آئندہ حالات میں ملک اور مشکل میں پڑ سکتا ہے ملک کی معاشی و اقتصادی صورتحال اور ساتھ ہی سیلاب کی تباہ کاریاں اس بات کی متقاضی ہیں کہ ملک میں امن اور سکون ہو۔ جماعتوں کے اندر اس بات پر کافی ابہام موجود ہے کہ پے در پے حملوں کے باوجود ماضی کی اسٹیبلشمنٹ کی طرح کوئی رد عمل کیوں نہیں آتا؟ ۔

اہم خبریں سے مزید