آپ آف لائن ہیں
جمعرات10؍ذیقعد 1441ھ2؍جولائی2020ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

موٹے لوگ زمین کے لیے خطرہ بن رہے ہیں، تحقیق

موٹے لوگ زمین کے لیے خطرہ بن رہے ہیں، تحقیق


جو لوگ موٹاپے کا شکار ہوجاتے ہیں وہ اپنے ساتھ ساتھ ایسے افراد کو بھی نقصان پہنچانے کا سبب بنتے ہیں جو دُبلا، چست اور توانا جسم رکھتے ہیں۔

ایک تحقیق میں یہ بات سامنے آئی ہے کہ دنیا بھر میں متوسط وزن رکھنے والے افراد کے مقابلے میں موٹے افراد سالانہ 70 کروڑ ٹن کاربن ڈائی آکسائیڈ گیس پیدا کرنے کا سبب بنتے ہیں۔ 

مزید پڑھیے: گرم موسم میں پیدا ہونیوالی خواتین میں امراض قلب کا خطرہ زیادہ ہوتاہے، تحقیق

موٹاپے سے متعلق ریسرچ کرنے والے ادارے دی او بیسیٹی سوسائٹی کے محققین نے اپنی تحقیق میں بتایا کہ یہ موٹے افراد دنیا بھر میں 1.6 فیصد گرین ہاؤس گیس پیدا کرنے کا سبب بنتے ہیں۔

محققین کا کہنا ہے کہ اس میں مختلف عوامل شامل ہیں جن میں موٹے افراد کے میٹابولیزم کے تیز ہونے کی وجہ سے اضافی کھانا بنانا اور انہیں ایک جگہ سے دوسری جگہ لے جانے والی گاڑیوں میں اضافی ایندھن کا استعمال وغیرہ شامل ہے۔

دی اوبیسیٹی سوسائٹی کا کہنا ہے کہ اس نے تحقیق کے لیے گرین ہاؤسز گیسز کے اخراج، ڈیموگرافک ڈیٹا اور موٹاپا پھیلنے کے اعداد و شمار کا استعمال کرتے ہوئے اپنا نتیجہ اخذ کیا ہے۔

محققین کا ماننا ہے کہ متوسط وزن رکھنے والے افراد کے مقابلے میں بھاری جسامت والے انسان 20 فیصد زیادہ گرین ہاؤس گیز پیدا کرنے کا سبب بنتے ہیں۔

اس تحقیق کے مصنف فیڈون میگ کوس کا کہنا ہے کہ انسانی جسم کے اوسط سائز میں اضافے کی وجہ سے دنیا میں انسان کے سانس لینے سے پیدا ہونے والی کابن ڈائی آکسائیڈ گیس کو کم کرنے کی کوششیں متاثر ہوسکتی ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ یہ تحقیق ان لوگوں کے لیے زیادہ اہم ہے جو موٹاپے سے چھٹکارا پانے کے لیے کام کر رہے ہیں۔

صحت سے مزید
خاص رپورٹ سے مزید