آپ آف لائن ہیں
منگل6؍شعبان المعظم 1441ھ 31؍مارچ 2020ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
تازہ ترین
آج کا اخبار
کالمز

مریم حسن 

گھر کو سجا نے کا شوق خواتین کا خواب ہوتا ہےاور وہ بہت محنت سے اپنے آشیانے کو سجاتی ہیں لیکن عموماً خواتین فالتو چیزوں کو کوڑے میں پھینک دیتی ہیں۔اگر تھوڑی سی توجہ اور محنت کی جائے تو گھر میں موجود چھوتی موٹی بیکار چیزوں سے کار آمد سجاوٹی اشیا تیار کرسکتی ہیں ۔ مثلاً ٹرے ٹوٹ جائے تواس میں مٹی کا گملا رکھ کر ،ہرا دھنیا ،پودینا یا ٹماٹر کے بیج ڈال کر باروچی خانے کی کھڑکی میں رکھ کر دیں ۔جب ان کے پتے پھوٹیں گے ،چھوٹے چھوٹے ٹماٹر اُگئیں گے تو خود دیکھ کر طبیعت باغ باغ ہوگی ۔بوتل پھینکنے کے بجائے اس پر مختلف رنگوں سے نقش و نگار بنائیں لیکن یاد رکھیے کہ گھر کی آرائش سے مراد بہت ساری سجاوٹی اشیا سے بھر نہیں ہوتا ،ورنہ گھر عجائب خانہ لگنے لگتا ہے ۔گھر کی آرائش کا بہترین اصول یہ ہے کہ ہر چیز اپنی جگہ موزوں نظر آئے ۔

گھر کا سب سےا ہم کمرہ ڈرائنگ روم ہوتا ہے جو سجاوٹ کا مرکز ہوتا ہے ۔ہر خاتون کی کوشش ہوتی ہے کہ اسے بہترین انداز میں سجائیں لیکن اگر آپ یہ سوچیں کہ صوفوں ،بھاری بھرکم قیمتی فرنیچر اور قالین وغیرہ کے بغیر ڈرائنگ روم ادھوار ہے تو یہ بات درست نہیں ۔جدید رجحان کے مطابق قالین بچھانے کا رواج نہیں رہا ،اب خوبصورت ،چمکتے ٹائیل لگوائے جاتے ہیں ۔درمیان میں قالین کا سینٹر پیس بچھایا جاسکتا ہے ۔پردوں کے لیے ہمیشہ ہلکے رنگوں کا انتخاب کریں ،اگرگہرے رنگ کے ہوں گے تو کمرے میں موجود دوسری چیزیں ماند پڑ جائیں گے ۔

رنگوں کے بارے میں سب کی اپنی پسند ہوتی ہے ۔اس سلسلے میںایک اصول ہمیشہ یاد رکھیں اگر کمرہ چھوٹا ہوتو دیواروں پر گہرا رنگ ہر گز نہ کرائیں ،کیوں کہ اس سے کمرہ تنگ لگتا ہے ۔ہلکے یا سفید رنگ سے کمرہ روشن اور وسیع نظر آتا ہے ۔

گھر کی آرائش اور سجاوٹ میں پھول اہم ہوتے ہیں ۔لیکن روزانہ تازہ پھول خریدنا اور سجانا تو ممکن نہیں ۔لہٰذا خوبصورت مصنوعی پھولوں سے گھر کو سجائیں ۔میزوں پر نفاست سے پھول سجانا باقاعدہ ایک فن ہے ۔پاکستان میںپھول اور گلدان سجانے کا جاپانی طریقہ ’’اکے بانا‘‘ خاصا مقبول ہے ۔اس طریقے سے گل دان میں پودوں اور پھولوں کو خوبصورت طریقے سے ترتیب دے کرمناسب جگہ پر رکھا جاسکتا ہے ۔صوفے کے دائیں اور بائیں چھوٹی میزوں پر لیمپ اچھے لگتےہیں ۔

یہ صوفوں یا قالین کے ہم رنگ کے خریدیں ویسے لیمپ گھر میں آسانی سے تیار کیے جاسکتے ہیں لیکن بازار میںمٹی کے بنے ہوئے پھول دان سستے ملتے ہیں ان پر خوبصورت نقش ونگار بناکر انہیں لیمپ کی شکل دے دیں ۔پلاسٹک کی بوتل لیں اور چھری گرم کر کے اسے آدھا کاٹیے اوراس پر خوبصورت کاغذ چڑھادیں اور اسے گلدان کے طور پر استعمال کریں ۔اس میں چمچہ ،کانٹے چھریاں بھی رکھی جاسکتی ہیں ۔یوںبیکار بوتل کام آجاتی ہے ۔

اسی طرح پرانے کپڑوں کے فالتو ٹکڑے پھینکنے کے بجائے انہیں آپس میں سی کرمنفرد قسم کی چادر بنائیں ۔بازار میں اس قسم کی چادریں مہنگی ملتی ہیں جب کہ گھر میں تھوڑی سی محنت کرکے آپ خوبصورت چادریں خود تیار کرسکتی ہیں ۔اسی طرح کشن بھی بنائے جاسکتے ہیں ۔

اگر فیشن بدل رہا ہے تو اس کا ہرگز یہ مطلب نہیں ہے کہ آپ گھر کا فرنیچر بھی تبدیل کردیں بلکہ فرنیچر کی ترتیب بدل دیں، اس سے بھی خوشگوار تاثر پڑتا ہے ۔فرنیچر اس انداز سے رکھیں کہ صفائی میں آسانی رہے ۔یہ بات یادرکھیں کہ گھر میں خواہ کتنی ہی سجاوٹ اشیا ء رکھی ہوںاگر صفائی نہ ہوتو ساری محنت پر پانی پھر جاتا ہے ۔کمروں میں اگر جالے لگے ہوں ،پنکھا گندا ہو ،چیزوں پر گرد پڑی ہوتو مہمانوں پرا س کا بہت ہی خراب تاثر پڑتا ہے ۔اس لیے چیزیں چاہے کم ہوںلیکن ان کا صاف ستھرا ہونا ضروری ہے ۔فرنیچر کی چمک وقت گزرنے کے ساتھ ماند پڑجاتی ہے۔ اسے چمکانے کا طریقہ بھی بتائے دیتے ہیں۔

فرنیچر پالش بنانے کا طریقہ

گھر میں آپ پرانے فرنیچر کو خود پالش کرنا چاہیں تو اس کا آسان طریقہ یہ ہے ۔السی کا تیل ایک حصہ تارپین کا تیل ایک حصہ اسپرٹ ایک حصہ سرکہ تھوڑا سا ان تمام اشیا کو ملا کر محلول تیار کیجئے اورا س سے فرنیچر چمکائیں ۔کپڑے یا روئی کی گدی سے بنالیں ،تاکہ آسانی سے پالش ہوسکے ۔بعد میں فرنیچر خشک کپڑے سے رگڑ کر صاف کریں ،وہ خوب صاف ہوجائے گا، یاد رکھیے کہ گھر کو سجانے اور سنوارنے کی تمام تر ذمہ داری خواتین ہی پر عائد نہیں ہوتی ،مرد بھی مفید مشورے دے کر ،اپنی جملیاتی حسن کا اظہار کر کے گھر کی آرائش میں حصہ لے سکتے ہیں۔ تمام اہل خانہ کے تعاون اور شمولیت ہی سے گھر جنت بنتا ہے ۔

نصف سے زیادہ سے مزید