آپ آف لائن ہیں
منگل13؍ذی الحج 1441ھ 4؍اگست 2020ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

تاجر کا اغواء و قتل:عزیر بلوچ پر فردِ جرم عائد


کراچی کی انسدادِ دہشت گردی کی عدالت نے تاجر کے اغواء برائے تاوان اور قتل کے کیس میں لیاری گینگ وار کے سرغنہ عزیر بلوچ پر فردِ جرم عائد کر دی۔

کراچی کی انسداد دہشت گردی کی عدالت میں تاجر کے اغواء برائے تاوان اور قتل کے کیس میں لیاری گینگ وار کے سربراہ عزیر بلوچ کو چہرہ ڈھانپ کر اور ہتھکڑی لگا کر پیش کیا گیا۔

عزیر بلوچ نے عدالت میں صحتِ جرم سے انکار کر دیا۔

کمرۂ عدالت میں فاضل جج نے عزیر بلوچ کو فردِ جرم پڑھ کر سنائی اور کہا کہ آپ پر عبدالصمد کے اغواء برائے تاوان اور قتل کا الزام ہے۔

فردِ جرم میں کہا گیا ہے کہ عزیر بلوچ نے 10 لاکھ روپے تاوان طلب کیا اور 70 ہزار روپے لینے کے باوجود تاجر کو قتل کر دیا۔

فردِ جرم سناتے ہوئے فاضل جج نے عزیر بلوچ سے سوال کیا کہ کیا آپ اپنا جرم قبول کرتے ہیں؟

عدالت کے کٹہرے میں موجود عزیر بلوچ نے نفی میں سر ہلا کر صحتِ جرم ماننے سے انکار کر دیا۔

یہ بھی پڑھیئے:۔

JIT رپورٹ اپ لوڈ ہوتے ہی محکمۂ داخلہ سندھ کی ویب سائٹ کا سرور ڈاؤن

ذوالفقار مرزا کی ایماء پر عزیر بلوچ سے ملاقاتیں کیں، نثار مورائی

عدالت نے عزیر بلوچ کے انکار پر آئی او اور گواہان کو نوٹس جاری کر دیئے اور آئندہ سماعت پر گواہان کو پیش کرنے کا حکم دیا۔

عزیر بلوچ کو سینٹرل جیل میں قائم انسدادِ ہشت گردی کی عدالت میں پیش کیا گیا تھا، اس موقع پر عدالت میں رینجرز کی بھاری نفری تعینات تھی۔

اس مقدمے میں عزیر بلوچ کا بھائی زبیر بلوچ و دیگر ملزمان بھی گرفتار ہیں، دیگر ملزمان پر پہلے ہی فردِ جرم عائد کی جا چکی ہے۔

قومی خبریں سے مزید