• بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

آپ کے مسائل اور اُن کا حل

سوال: گزشتہ دو سال سے گردوں کے مرض میں مبتلا ہوں اور غدود کا بھی مسئلہ ہوچکا ہے ، جس کی وجہ سے 15 روزے رکھ پائی اور باقی پندرہ روزے بیماری کی وجہ سے نہ رکھ سکی، میری عمر 30 سال ہے، بیماری کی وجہ سے کوشش کے باوجود پندرہ روزے نہیں رکھ سکتی ، اس سلسلے میں شرعی حکم کیا ہے؟ (ثناء، کوئٹہ)

جواب: بیماری کی وجہ سے اگر روزہ رکھنے کی طاقت نہ رہی اور آئندہ صحت یابی کی امید بھی نہیں ہے، تو ایسی صورت میں آپ کے لیے زندگی میں روزوں کا فدیہ دینا درست ہے۔ ایک روزے کا فدیہ ایک صدقۃ الفطر کے برابر یعنی دو کلو گندم یا اس کی موجودہ قیمت ہے ، تاہم فدیہ ادا کرنے کے بعد اگر روزے رکھنے کی طاقت حاصل ہو جائے اور وقت بھی ملے تو ان روزوں کی قضا کرنا ضروری ہوگااور جو فدیہ اداکیا ہے ،وہ صدقہ شمار ہوگا۔(شامی2/74، باب قضا ء الفوائت، ط، سعید)