وزیر اعظم اسمبلیاں نہیں توڑیں گے، مرتضیٰ وہاب
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

وزیر اعظم اسمبلیاں نہیں توڑیں گے، مرتضیٰ وہاب

ترجمان سندھ حکومت مرتضیٰ وہاب کا کہنا ہے کہ میں سمجھتا ہوں وزیر اعظم اسمبلیاں نہیں توڑیں گے، کیونکہ یہ غلطی، یہ سلیکشن دوبارہ نہیں ہوگا۔

بیرسٹر مرتضیٰ وہاب نے سندھ اسمبلی میں میڈیا سے گفتگو کی، ان کا وزیر اعظم عمران خان کے بغیر پروٹوکول کے دورے پر ردّ عمل دیتے ہوئےکہنا ہے کہ جس بازار میں کپتان گئے وہاں کوئی بھی شخص نہیں تھا، میں کپتان اوران کے وڈیو گرافرز کی پرفارمنس دیکھ رہا تھا، وزیر اعظم صاحب سب بہتر نہیں ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ  جس بازار میں کپتان گئے وہاں کوئی بھی شخص نہیں تھا، یا تو اتنی مہنگائی ہو گئی ہے کہ عام آدمی چیزیں نہیں خرید سکتا، لوگ آپ کو کہتے ہیں کہ سب ٹھیک ہے اور آپ کو احساس نہیں۔

مرتضیٰ وہاب نے تنقید کرتے ہوئے کہا ہے کہ اب آئے گا عمران اور سب پریشان، شاید وزیراعظم کو احساس ہو اور عوام اور ریلیف دیں۔

انہوں نے کہا کہ پاکستان میں مہنگائی 30 اپریل تک 11 فیصد تک پہنچ چکی ہے، کھانے پینے کی اشیا میں مہنگائی 15 فیصد تک پہنچ گئی ہے، گندم کی قیمتوں میں 19 فیصد، مرغی کی قیمت میں85 فیصد اضافہ ہوا ہے۔

مرتضیٰ وہاب کا کہنا تھا کہ بجلی کی قیمتوں میں ایک سال میں 29 فیصد اضافہ ہوا ہے، خان صاحب بار بار کہتے اور بیان دیتے ہیں کہ معیشت کو ٹھیک کیا ہے،  پیپلزپارٹی کی حکومت میں برآمدات 26 ارب ڈالر تک پہنچ گئی تھیں۔

مرتضیٰ وہاب نے کہا ہے یہ لوگ احتساب اورشفافیت کی بات کرتے تھے، ہم تو کہتے تھے کہ کرپشن بڑھی ہے، اب وزیرخزانہ بھی کہہ رہا ہے۔

اُن کا کہنا تھا کہ این 249، ڈسکہ اور دیگر علاقوں میں جو ہوا وہ عوام کا غصہ ہے، بلدیہ ٹائون کے جو جو مسائل ہیں ان کا تدارک پی پی کرتی آئی ہے،  کراچی بلدیہ میں ہم نے سڑکیں بنوائی ہیں ہمارے کام کو دیکھ کر عوام نے ووٹ دیا،  ہم بلدیہ ٹائون کے ووٹرز کے ووٹوں کا مان رکھیں گے،  این اے 249 میں ہم کیسے ان کی حق تلفی کرسکتے ہیں۔

مرتضیٰ وہاب نے کہا ہے کہ مارچ میں پاکستان کی 5.2 ارب روپے کی ایکسپورٹ ہوئی،  ہم زرعی ملک ہیں مگر کپاس بھی ہم درآمد کر رہے ہیں۔

ترجمان سندھ حکومت نے کہا ہے کہ انہوں نے امپورٹ کو ڈبل اور ایکسپورٹ کو کم کر دیا ہے، اسٹاک ایکسیچنج کی انڈکس میں پانچ ماہ میں پانچ فیصد کمی ہوئی، سرمایہ داروں کا حکومت پر اعتماد ختم ہوتا جارہا ہے۔

قومی خبریں سے مزید