• بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

یورپی یونین، امریکا سمٹ: فریقین کا مشترکہ ایجنڈا تیار کرنے اور گفتگو کا فیصلہ

یورپی یونین اور امریکہ کے درمیان برسلز میں منعقد ہونے والی سمٹ میں دونوں فریقین نے اپنی ٹرانس اٹلانٹک شراکت کی تجدید، عالمی وباء کورونا وائرس کے بعد مشترکہ ایجنڈا تیار کرنے اور ہونے والی پیش رفت کا جائزہ لینے کیلئے باضابطہ گفتگو کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

اس سمٹ میں یورپی یونین کی نمائندگی یورپین کونسل کے صدر چارلس مشل اور یورپین کمیشن کی صدر ارسلا واندرلین نے جبکہ امریکی وفد کی نمائندگی صدر جو بائیڈن نے کی۔

اس موقع پر دونوں فریقین نے دیگر مسائل پر گفتگو کے علاوہ تین اہم تجارتی اقدامات اٹھانے کا فیصلہ بھی کیا۔ جس میں بڑے سویلین مقاصد کے ہوائی جہاز کیلئے مشترکہ فریم ورک بنانے، اس سال کے آخر تک اسٹیل اور ایلومینیم سے متعلق اقدامات پر اختلافات دور کرنے اور یورپ اور امریکہ کے درمیان تجارت اور ٹیکنالوجی کونسل قائم کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

سمٹ کے بعد یورپین کونسل کے صدر چارلس مشل اور یورپین کمیشن کی صدر ارسلا واندرلین نے ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے بتایا کہ دونوں فریقین نے COVAX Facility کو مدد فراہم کرکے 2021 کے دوران ویکسین کی دو ارب خوراکیں فراہم کرنے اور 2022 کے اختتام تک دنیا بھر کی دو تہائی آبادی کو ویکسین کی کافی مقدار فراہم کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

اس کیلئے دونوں فریقین نے مشترکہ ای یو ۔ یو ایس مینو فیکچرنگ اور سپلائی چین ٹاسک فورس بنانے کا بھی فیصلہ کیا ہے۔

اس یورپ-امریکہ سمٹ کے دوران رہنماؤں نے آئندہ وبائی امراض سے بچائو کیلئے عالمی ادارہ صحت کی اصلاح کے علاوہ عالمی وباؤں کیلئے ایک نئے ممکنہ عالمی معاہدے پر بھی گفتگو کی ہے ۔

اسی حوالے سے ایک قدم اور آگے بڑھاتے ہوئے ان رہنماؤں نے کوویڈ-19 کی ابتداء کے بارے میں ایک شفاف، شواہد پر مبنی، عالمی ادارہ صحت اور آزاد ماہرین کی زیر قیادت دوسرے تحقیقاتی مطالعے پر بھی پیش رفت کا مطالبہ کیا جو ہر طرح کی مداخلت سے پاک ہو۔

دونوں فریقین نے جی سیون سمٹ میں دنیا کیلئے 3B یعنی بلڈنگ، بیک، بیٹر تجویز پر گفتگو کا خیر مقدم بھی کیا، جو ماحولیاتی تبدیلیوں اور ان کے اثرات سے نمٹنے کیلئے انفرااسٹرکچر اور ٹیکنالوجی کی طرف رقوم کی منتقلی کیلئے کی گئی تھی۔

بین الاقوامی خبریں سے مزید