Muhammad Sajid Khan - Urdu Columns Pakistan | Jang Columns
| |
Home Page
جمعہ 6؍ جمادی الثانی 1439ھ 23؍ فروری 2018ء
محمد ساجد خان
حرفیہ
February 17, 2018
کاروان وقت جا پہنچے گا، ایک پل میں کہاں

عجب بے چارگی والا زمانہ ہے۔ وقت ہے کہ بھاگا جا رہا ہے۔ کام ہوتے بھی نہیں اور کام لوگوں کے رکتے بھی نہیں۔ معلوم نہیں اتنے سال پہلے صاحب یقین شاعر اسد اللہ غالب کو کیا سوجھی کہ فرنگی کے بھرپور زمانہ میں یہ شعر کہہ دیا۔کیا کہا خضر نے سکندر سے اب کسے رہنما کرے کوئیاب کا زمانہ بھی کسی فرنگی کے زمانہ سے کم نہیں فرق اتنا ہے کہ اب ہمارے زمانہ...
December 16, 2017
واپسی کے سفر کے منتشر خیالات

اب واپسی کا سفر شروع ہے گزشتہ چند ہفتوں سے میں کینیڈا اور امریکہ کے درمیان سفر کرتا رہا۔ امریکہ میں پاکستانی نامعلوم سی تشویش کا شکار ہیں۔ بظاہر تو حالات ٹھیک ہی نظر آتے ہیں مگر کچھ نہ کچھ ان کو پریشان رکھتا ہے۔ جب لوگ مجھ سے پوچھتے کہ میں کہاں سے ہوں۔ پہلا جواب تو پاکستان ہی ہوتا جس سے اکثر تسلی نہ ہوتی۔ خیر دوسرا سوال پاکستان میں...
October 28, 2017
سیاسی لوگوں کو کیا پریشانی ہے ؟

اب پھر ایک سفر درپیش ہے مجھے ملک سے باہر جانا ہے۔ سفر وسیلہ ظفر ہے ہمارے پرانے وزیراعظم حضرت نواز شریف بھی آج کل بہت سفر کرتے نظر آرہے ہیں۔ چند ماہ میں انہوں نے لندن کا کئی بار سفر کیا۔ ان کی بیگم علیل ہیں۔ پھر پاکستان میں ان کو عدالتوں کا سامنا ہے۔ سیاسی رہنمائوں کے لئے عدالت ایک اہم جگہ ہوتی ہے پہلے میاں نواز شریف عدالت لگایا...
October 19, 2017
نواز سیریز سے سانحہ کار ساز تک!

 ماضی تاریخ ہے اور مستقبل سربستہ راز! انسان کو مگر ان دونوں کے مابین ہی زندگی کا سفر طے کرنا ہے۔ برادر کالم نگار سہیل وڑائچ نے ’’پارٹی از اوور‘‘ (Party is over)کے عنوان سے اپنے ایک کالم میں کہا تھا:’’ایسا پہلے بھی ہوا تھا اور اب پھر ہونے جا رہا ہے۔ قرآئن و آثار بتا رہے ہیں کہ موجودہ وزیراعظم نواز شریف کے لئے ’’پارٹی از اوور‘‘ کی...
September 23, 2017
جنگل میں جمہوریت کیسی؟

کچھ عجیب سی صورتحال ہے۔ہماری ایک رفیق شانتی دیوی ایک عرصہ سے پوچھ رہی تھی اس سال اقوام متحدہ کے سالانہ اجلاس پر آسکوگے۔ میں اس کو ٹالتا ہی رہا۔ اب نیویارک میں اقوام متحدہ کا میلہ جاری ہے۔ شانتی بتارہی تھی، پاکستان کا وفد فور سیزن میں قیام پذیر ہے۔ میں نے پوچھا وہ پاکستان اور پی آئی اے کے ہوٹل روز ویلٹ میں کیوں نہیں ٹھہرے۔ اس کی...
September 09, 2017
یہ خواب جو خیال نہیں بنتے

’’ہم اپنی ذات کے کافر‘‘ یہ شعری مجموعہ سید مبارک شاہ کا ہے۔ جو اب ہمارے درمیان موجود نہیں۔ ان کا اک شعر ہے؎مکاں اپنی جگہ رکھے ہوئے ہیںمکیں سارے ٹھکانے لگ گئے ہیںموصوف ہماری نوکر شاہی کے ستون تھے 2015میں انہوں نے پردہ فرمالیا۔ میں ان کی کتاب کے نام پر غور کررہا تھا۔ ان کی یہ کتاب1995میں شائع ہوئی تھی۔ میں سوچ رہا تھا کہ مبارک شاہ...
August 26, 2017
کتابیں اپنے آباء کی

پاکستان میں آج کل ہماری سیاست اور ریاست جمہوریت کے لئے سرگرم عمل ہے۔ ہماری ستر سال کی تاریخ میں اب جمہوری دور زیادہ نظر آتا ہے۔ اگرچہ جمہوری دور میں ہی شخصیت پرستی کو جمہوری اقتدار میں شامل کرلیا گیا۔ اب تک سب سے کامیاب جمہوری دور سابق صدر آصف علی زرداری کے زمانہ صدارت میں رہا۔ انہوں نے اپنے دو وزیراعظموں کو شاہراہ جمہوریت پر...
August 12, 2017
آنکھوں میں روشنی ہے مگر حوصلہ نہیں

ناشتہ بس مناسب سا تھا۔ روایتی سا، اور لوگوں کی تعداد بھی مناسب تھی۔ ہر شعبہ زندگی کے لوگ اخبارات کا مطالعہ کررہے تھے۔ میں اصل میں عمر سیف کو دیکھنے آیا تھا۔ عمر سیف کی انٹرنیٹ کی دنیا میں بڑی دھوم ہے۔ آج کل وہ پاکستان بھر میں جدت کی حامل ٹیکنالوجی کی مدد سے نظام کو آسان بنانے کے منصوبے پر کام کرتے نظر آتے ہیں۔ میں آج تک عمر سیف...
July 29, 2017
ظاہر کی آنکھ سے نہ تماشا کرے کوئی

پہلا سوال تھا اگر قانون موجود نہ ہو تو فیصلہ کیسے ہو گا؟ دوسرا سوال اگر قانون ہے تو انصاف کیسے ہوگا اور تیسرا اہم سوال، قانون بھی ہے، انصاف بھی ہوسکتا ہے، مگر نظام نہیںہے ۔ شریک محفل حضرات ایسی بحث کر رہے تھے جس کا سرا کئی لوگوں کے ہاتھ میں ہے۔ ویسے بھی قانون اور قاعدہ دنیا میں ہر جگہ موجود ہے۔ قدرتی قانون جسے عام زبان میں قانون فطرت...
July 22, 2017
حل کی جانب توچلا ہے…

پاکستان کے ایک مشہور وکیل جو ایک زمانہ میں ٹی وی کے میزبان بھی رہے۔ انہوں نے بہت عرصہ پہلے جب ملٹری صدر مشرف کا اقتدار پر قبضہ تھا تو انہوں نے اس وقت کے چیف جسٹس سپریم کورٹ کے بارے میں صدر کو خط لکھا تھا۔ اب یہ سب کچھ ہمارا ماضی اور ہماری تاریخ ہے۔ چند دن پہلے کی بات ہے وہ ایک مقدمہ کے سلسلہ میں عدالت میں حاضر تھے اور بڑی صاف گوئی سے...
July 15, 2017
جس سحر سے سفینہ رواں ہو سراب میں

کافی دن ہوئے شانتی دیوی کی ای میل پاناما کے تناظر میں تھی۔ میرا خیال تھا کہ پاناما کا معاملہ کافی عرصہ تک ملکی سیاست کو خلفشار سے دوچار رکھے گا۔ مگر اعلیٰ عدالت نے جے آئی ٹی بنا کر معاملہ فہمی کا سوچا اور فریقین اس پر راضی ہوگئے اور جب جی آئی ٹی نے 60دن کی محنت اور مشقت کے بعد اپنی رپورٹ سپریم کورٹ کو جمع کروا دی اور اس کے بعد ہمارے...
July 08, 2017
تزکیہ کے علم بردار اخوت کے ساتھ

میں اس دعوت شیراز پر حیران تھا۔ مجھے پیغام ایس ایم ایس کے ذریعے ملا تھا۔ ملک سے باہر رہنے کی وجہ سے میں کافی معاملات سے بے خبر بھی تھا۔ پھر ملک میں آنے کے بعد سے پاناما کا مقدمہ ہمارے میڈیا پر چھایا ہوا ہے اور فریقین، لگتا ہے کہ وہ سب ہی پریشان اور حیران ہیں۔ میں نے ایس ایم ایس کرنے والے محترم کو مطلع کیا کہ میں اس دعوت کو قبول کر رہا...
June 24, 2017
ٹاس وہ جیتے اورمیدان ہم جیتے

پاکستان کی کرکٹ ٹیم نے تاریخ رقم کردی۔ اس فتح کو پورے ملک میں منایا گیا۔ کچھ حلقوں کاردعمل بھارت کے حوالے سے مناسب نہیں تھا۔ بھارت کی طرف سے میچ کے شروع ہونےسے پہلے جو ردعمل تھا اور ان کو جو مان تھا اور جس طریقہ سے پاکستان کرکٹ ٹیم کا مذاق بنایا گیا، وہ ہی ان کے لئے خفت اور شرمندگی کا باعث بنا۔ پاکستان کے کھلاڑی پورے جوش و جذبے اور...
June 17, 2017
اک دعا ،گورے شہر میں کالی بلی نہ ہو!

دنیا میں ترقی ہو رہی ہے۔ اس ترقی کی دوڑ میں پاکستان بھی کسی سے کم نہیں۔ ہمارے نیتا ترقی کے معاملہ پر بہت ہی بھاشن دیتے نظر آتے ہیں۔ پاکستان میں ترقی اور توانائی کا مقابلہ جمہوریت کے ساتھ ہے۔ اگر جمہوریت پر اعتبار کرنا اور اسے لاگو کرنا ہے تو ترقی کے معاملات کو نظر انداز کرنا ہوگا۔ پاکستان ایک عرصہ سے بجلی کے بحران سے دوچار ہے۔...