• بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

ہائپر ٹینشن ہائی بلڈ پریشر کا دوسرا نام ہے۔ یہ صحت کے حوالے سے شدید پیچیدگیوں کا باعث بن سکتا ہے اور دل کی بیماریوں، فالج اور بعض اوقات موت کا باعث بھی بن جاتاہے۔ بلڈ پریشر وہ دبائو ہے جو انسان کے خون کی شریانوں کے خلاف کام کرتا ہے۔ اس دباؤ کا انحصاراس بات پر ہے کہ خون کی رگیں کتنی مزاحمت برداشت کرپاتی ہیں اور دل اس دباؤ کو برداشت کرنے کے لیےکتنی سختی سے کام کرتا ہے۔

ہائی بلڈ پریشر دل کے امراض کے لیے بنیادی خطرہ ہے، جس کی وجہ سے فالج، دل کا دورہ، ہارٹ فیل اور شریانوں کا پھیلائو(Aneurysm) ہوسکتا ہے۔ صحت مند طرز زندگی گزارنے اور ان خطرات کو کم کرنے کے لئے بلڈپریشر کو کنٹرول میں رکھنا ناگزیر ہے۔

اندازہ ہے کہ پاکستان میں 46 فیصد سے زائد شہری بلند فشار خون کا شکار ہیں اور ہر 20 میں سے نو سے زائد شہریوں کو ہائی بلڈ پریشر کی طبی حالت کا سامنا ہے اور ایسے شہریوں میں نوجوانوں کا تناسب ماضی کے مقابلے میں اب زیادہ ہو چکا ہے۔ طبی ماہرین کے مطابق یہ صورت حال اس لیے پریشان کن ہے کیونکہ ملک میں علاج معالجے کی تسلی بخش سہولیات کی تو بہت سے شہری علاقوں میں بھی شدید کمی ہے جبکہ دیہی علاقوں میں حالت اس سے بھی ابتر ہے۔

اسی لیے اگر عوامی سطح پر صحت بخش غذائی عادات کی حوصلہ افزائی کرتے ہوئے ہائی بلڈ پریشر کے خلاف عوامی شعور بیدار نہ کیا گیا، عام شہریوں کو بلند فشار خون کے کثیرالجہتی نقصانات سے نتیجہ خیز انداز میں آگاہ نہ کیا گیا، تو آئندہ برسوں میں پاکستان میں پبلک ہیلتھ شعبے کو درپیش حالات بحرانی شکل اختیار کرسکتے ہیں۔

ہائی بلڈ پریشر کی دو قسمیں

ہائی بلڈ پریشر کی دو اقسام ہوتی ہیں: ابتدائی ہائپر ٹینشن اور ثانوی ہائپر ٹینشن۔ ان کے مطابق ابتدائی ہائپر ٹینشن ہی وہ طبی شکایت ہے، جس کا عموماً 90 سے 95 فیصد تک عوام کو سامنا ہوتا ہے۔ آئیے، بلڈ پریشر بڑھنے کی وجوہات پر نظر ڈالتے ہیں، ساتھ ہی اس کی نگرانی اور اسے معمول کی حد میں رکھنے کے طریقوں پر بھی بات کریں گے۔

انتظام اور علاج

اگر آپ زندگی میں ہائی بلڈ پریشر کو کنٹرول میں رکھیں گے تو ہائپر ٹینشن سےبھی محفوظ رہیں گے۔ ذیل میں درج باتوں پر عمل کرکے ہائپر ٹینشن پر قابو پایا جاسکتا ہے۔

باقاعدہ جسمانی ورزش

ماہرین و معالج مشورہ دیتے ہیں کہ ہائپر ٹینشن میں مبتلا افراد ہفتے میں 150منٹ پر مشتمل درمیانے درجے کی یا 75منٹ پر مشتمل محنت و مشقت والی ایروبک ورزش ضرور کریں جبکہ دیگر افراد کو بھی یہ ورزش کرنی چاہئے۔ اس ضمن میں چلنا، ٹہلنا، سائیکل چلانا یا تیراکی کرنا، ورزش کی مناسب سرگرمیوں میں شامل ہیں۔

تناؤ میں کمی

اگر آپ کو ذہنی تناؤ یا اسٹریس سے بچنا یا اسٹریس کو منیج کرنا آتاہے تو اس سے بلڈپریشر کو کنٹرول کرنے میں بہت مدد ملتی ہے۔ مراقبہ ، نیم گرم پانی سے غسل، یوگا اور لمبی سیر پر چلے جانا، خود کو آرام دہ حالت میں لانے کی تکنیکیں ہیں جو تناؤ کو دور کرنے میں مدد فراہم کرسکتی ہیں۔ لوگوں کو تناؤ سے نمٹنے کے لئےنشہ آور اشیا، قوت بخش ادویات، تمباکو اور جنک فوڈ کے استعمال سے پرہیز کرنا چاہئے کیونکہ یہ ہائی بلڈ پریشر یا ہائپر ٹینشن کی پیچیدگیوں کو بڑھاتے ہیں۔ تمباکو نوشی سے بلڈ پریشر بڑھ سکتا ہے۔ ویسے بھی سگریٹ نوشی سے پرہیز ہائی بلڈ پریشر سمیت دل کی دیگر بیماریوں اور پھیپھڑوں کے کینسرسے محفوظ رکھتا ہے۔

ادویات کا استعمال

ہائی بلڈ پریشر کے علاج کے لیے صرف ڈاکٹر کی تجویز کردہ ادویات استعمال کرنی چاہئیں۔ ڈاکٹر اکثر اوقات کم خوراک کی سفارش کرتے ہیں۔ دوا کا انتخاب انفرادی اور کسی بھی بنیادی طبی حالت پر منحصر ہوتا ہے، تاہم یہ دوائیں بھی انہیں ڈاکٹر ہی تجویز کرتا ہے۔ مریض کو کسی بھی صورت ڈاکٹر کے مشورے کے بغیر ان دواؤں کا استعمال نہیں کرنا چاہیے۔ اینٹی ہائپرٹینسیو دوائیں لینے والے ہر شخص کو احتیاط کا مظاہرہ کرتے ہوئے کسی بھی میڈیکل اسٹور سے ادویات کی خریداری کے وقت اس کا لیبل پڑھنا چاہیے۔ دوا کے استعمال سے پہلے خاص طور پر اس کی مدت میعاد ضرور دیکھ لینی چاہیے۔

نمک کی مقدار کم کرنا

دنیا کے بیشتر ممالک میں لوگ اوسطاً 9سے 12گرام نمک کھاتے ہیں۔ عالمی ادارہ صحت سفارش کرتا ہے کہ ہائپر ٹینشن اوراس سے متعلقہ صحت کی دیگرپریشانیوں کے خطرے کو کم کرنے کیلئے روزانہ 5گرام سے کم نمک استعمال کیا جائے ۔

پھل سبزیاں زیادہ، چکنائی کم

جن لوگوں کو ہائی بلڈ پریشر ہویا ہائی بلڈ پریشرہونے کا زیادہ خطرہ ہو تو ان کے لیے ماہرین درج ذیل ہدایات دیتے ہیں:

٭ ثابت اناج، ہائی فائبر والی غذائیں کھائیں۔

٭ مختلف اقسام کے پھل اور سبزیاں کھائیں۔

٭ پھلیاں، دالیں اور گری دار میوے اپنی خوراک میں شامل کریں۔

٭ ہفتے میں دو بارا ومیگا 3 والی مچھلی کھائیں۔

٭ ٹھنڈی تاثیر والے تیل مثال کے طور پر زیتون کا تیل استعمال کریں۔

٭ بغیرکھال والی مرغی اور مچھلی کھائیں۔

٭ کم چکنائی والی ڈیری مصنوعات استعمال کریں۔

٭ اس کے علاوہ ٹرانس فیٹ، ہائیڈروجنیٹڈ ویجیٹیبل آئلزاور جانوروں کی چربی سے بنے تیل سے اجتناب کریں۔

وزن او ر خوراک کا خیال

زائدجسمانی وزن ہائپر ٹینشن میں اضافے کا سبب بن سکتاہے۔ وزن میں کمی سے بلڈ پریشر بھی نارمل سطح پر رہتا ہے کیونکہ دل کو جسم کے اندر خون پمپ کرنے کے لئے اتنی محنت نہیں کرنی پڑتی۔ کیلوریز کی مناسب مقدار، متوازن غذا، فرد کا حجم، صنف اور دیگر سرگرمیاں ہائپر ٹینشن پر اثر اندا زہوتی ہیں۔

صحت سے مزید