آپ آف لائن ہیں
جنگ ای پیپر
پیر22؍ جمادی الثانی 1441ھ 17؍فروری 2020ء
Namaz Timing
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
تازہ ترین
آج کا اخبار
کالمز

پی ٹی آئی حکومت میں ایک کے بعد دوسرا مافیا سراٹھا رہا ہے، تجزیہ کار

پی ٹی آئی حکومت میں ایک کے بعد دوسرا مافیا سراٹھا رہا ہے، تجزیہ کار 


کراچی (ٹی وی رپورٹ) جیو کے پروگرام’’آج شاہزیب خانزادہ کے ساتھ‘‘ میں میزبان نے تجزیہ پیش کرتے ہوئے کہاکہ جب سے تحریک انصاف کی حکومت آئی ہے ایک مافیا کے بعد دوسرا مافیا سراٹھا رہا ہے۔

پچھلے سولہ مہینے میں یہی ہوتا آیا ہے آٹے کے بحران کے بعد چینی کی قیمتوں میں مسلسل اضافہ ہو رہاہے یہ خدشہ جنم لے رہا ہے کہ چینی کی قیمت سو روپے فی کلو تک مارکیٹ میں پہنچ سکتی ہے۔

ماہر اجناس شمس الاسلام خان نے کہا کہ پاکستان کی معیشت مکس اکنامی ہے اس میں گٹھ جوڑ بڑے پروان چڑھتے ہیں، نمائندہ جیو نیوز زاہد گشکوری نے کہا کہ ہماری تحقیقات کے مطابق میجر شیئر بنتا ہے جہانگیر ترین کا تقریباً بائیس فیصد حصہ ہے۔

شوگر انڈسٹری میں خسرو بختیار کا بارہ فیصد حصہ ہے ان کی بھی شوگر ملیں پروڈکشن کے حساب سے دوسرے نمبر پر ہیں پھر ہمایوں اختر خان وہ بھی حکومت کا حصہ ہیں ان کی بھی تین شوگر ملز ہیں دس فیصد کے قریب ان کا بھی حصہ ہے پھر فیصل مختار، جہانگیر ترین کے کزن شمیم خان کی بھی چار شوگر ملز ہیں۔

مجموعی طور پر 45 فیصد کے قریب حصہ بنتا ہے شوگر ملز میں ۔ماہر اجناس شمس الاسلام خان نے کہا کہ پاکستان کی معیشت مکس اکنامی ہے اس میں گٹھ جوڑ بڑے پروان چڑھتے ہیں ہم کوئی بھی قدم لیتے ہیں اس سے ان لوگوں کو فائدہ ہوتا ہے ان کے روابط ہوتے ہیں چینی میں اتنی زیادہ قلت نہیں ہے ۔

دسمبر میں قیمتیں جب انہوں نے سیزن اسٹارٹ کیا تو 62 کی مارکیٹ تھی آج 73.50 پڑھا کر ایکس مل کر دی ہے لیکن نہ ہی اسٹاک وہاں سے لفٹ ہو رہے ہیں نہ ہی کنزیوم ہو رہے ہیں اس میں ایک سٹہ ہو رہا ہے سٹے میں شوگر بیلنس کرتے ہیں اپنے ڈیلرز کے ذریعے سٹے باز ان قیمتوں کو بہت اوپر لے کر جاتے ہیں۔

گنے کے کاشتکاروں کے نام پر پالیسی بنتی ہے اورفائدہ شوگر بیلنس کے پاس جارہا ہوتا ہے جب تک اس پورے سسٹم کو نہیں بدلیں گے اس وقت تک بحران آتے رہیں گے۔

اس سسٹم میں گٹھ جوڑ بہت ہے جب ان کے مفاد ہوتے ہیں تو یہ سب اکٹھے ہوجاتے ہیں۔ ماضی میں سٹے بازوں پر کریک ڈاؤن کیا گیا تھا تو قیمتیں بہت حد تک نیچے آگئی تھیں۔

اہم خبریں سے مزید