• بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

’وزیراعظم کا دورہ سعودی عرب پاکستانیوں کے لیے خوش خبریوں کی نوید ہوگا‘، شاہ محمود

وزیر خارجہ مخدوم شاہ محمود قریشی کا کہنا ہے کہ وزیر اعظم کا دورۂ سعودی عرب انتہائی سود مند رہا ہے، ماہِ رمضان کی برکتیں اس میں شامل تھیں اور یہ دورہ پاکستانیوں کے لیے بہت سی خوش خبریوں کی نوید ہو گا۔

وزیر خارجہ نے جدہ میں وزیر اعظم کے دورۂ سعودی عرب کے حوالے سے خصوصی میڈیا ٹاک کی۔

وزیر خارجہ نے بتایا کہ وہ اس وقت جدہ میں ہیں، وزیر اعظم عمران خان کی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کے ساتھ ملاقات ہوئی ہے جس میں ان کی کابینہ کے اہم اراکین بھی موجود تھے۔

شاہ محمود قریشی نےکہا کہ ان کی سعودی وزیر خارجہ شہزادہ فیصل بن فرحان آل سعود کے ساتھ بھی نشست ہوئی ہے۔

انہوں نے کہا کہ مجھے یہ بتاتے ہوئے بہت خوشی محسوس ہو رہی ہے کہ ان ملاقاتوں کا ماحول انتہائی دوستانہ تھا اور جو گرمجوشی دکھائی دے رہی تھی اس سے مستقبل کی راہوں کا تعین واضح دکھائی دیتا ہے۔

وزیر خارجہ نے کہا کہ اس دورۂ سعودی عرب کے دوران، ولی عہد، خود وزیراعظم عمران خان کا خیر مقدم کرنے تشریف لائے، وفود کی سطح پر مذاکرات کے بعد ہماری ایک گروپ ملاقات ہوئی جس میں وزیر اعظم عمران خان، آرمی چیف اور میں خود موجود تھا۔

انہوں نے کہا کہ اس ملاقات میں افغان امن عمل سمیت خطے کی صورتحال پر تفصیلی تبادلہ خیال ہوا، سعودی وزیر خارجہ نے خطے میں ان کی حالیہ ’آؤٹ ریچ‘ کے حوالے سے اعتماد میں لیا۔

وزیر خارجہ نے کہا کہ وزیر اعظم عمران خان اور ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کے درمیان ایک مفاہمتی یادداشت پر دستخط ہوئے ہیں، اس معاہدے کی رو سے سعودی عرب اور پاکستان کے مابین ایک اعلیٰ سطحی کوآرڈینیشن کونسل کا قیام معرض وجود میں آئے گا جس کے تحت ہمارے درمیان مستقبل میں ادارہ جاتی سطح پر ایک ’اسٹرکچرڈ انگیجمنٹ پلان‘ ترتیب دیا گیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ہم نے باہمی دلچسپی کے تمام شعبوں، بالخصوص توانائی، اقتصادی تعاون، سرمایہ کاری اور روزگار کے مواقعوں میں آگے بڑھنے کے عزم کا اعادہ کیا ہے، سعودی ولی عہد نے ہمیں سعودی عرب کے وژن کے خدوخال سے تفصیلاً آگاہ کیا۔

شاہ محمود قریشی نے کہا کہ سعودی ولی عہد  کے مطابق اس وژن کو عملی جامہ پہنانے کیلئے انہیں اگلے دس سال کے دوران، دس ملین، افرادی قوت درکار ہو گی، انہوں نے فیصلہ کیا ہے کہ پاکستانی ورک فورس کی گذشتہ خدمات کو مدنظر رکھتے ہوئے، اس مطلوبہ ورک فورس کا زیادہ حصہ پاکستان سے لیا جائے گا، روزگار کے مواقعوں کے حوالے سے یہ پاکستانیوں کیلئے ایک بہت بڑی خبر ہے۔

انہوں نے کہا کہ پانچ اہم معاہدوں پر دستخط ہوئے، ایک معاہدہ وزیر اعظم عمران خان اور ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کے درمیان کوآرڈینیشن کونسل کے قیام کے حوالے سے ہوا، دو معاہدے بلترتیب قیدیوں کے تبادلے اور جرائم کی بیخ کنی کے حوالے سے طے پائے جن پر وزیر خارجہ شیخ رشید صاحب نے دستخط کئے، دو معاہدوں پر میں نے دستخط کئے ان میں سے ایک معاہدہ انسداد منشیات کے حوالے سے تھا جبکہ دوسرے معاہدے کی رو سے سعودی عرب پاکستان کو سعودی ڈویلپمنٹ فنڈ سے،500 ملین ڈالر کی رقم فراہم کرے گا۔


شاہ محمود قریشی نے کہا کہ اس رقم کو پاکستان میں انفراسٹرکچر ڈویلپمنٹ، آبی وسائل کی ترقی اور ہائیڈرو پاور ڈویلپمنٹ کیلئے خرچ کیا جائے گا، ہم نے او آئی سی اور اس کی آئندہ سمت کے حوالے سے بھی تبادلہ ء خیال کیا۔

انہوں نے کہا کہ وزیر اعظم عمران خان نے سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کے دورۂ پاکستان کا حوالہ دیتے ہوئے باور کرایا کہ ان کے دورے کے نتیجے میں جو گُڈ-وِل پیدا ہوئی اس کے نقوش آج پاکستانیوں کے دلوں میں تازہ ہیں۔

شا محمود قریشی نے کہا کہ وزیر اعظم عمران خان نے سعودی ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان کو دورۂ پاکستان کی دعوت دی جو انہوں نے شکریے کے ساتھ قبول کی، میں نے بھی اپنے سعودی ہم منصب کو جلد پاکستان آنے کی دعوت دی ہے جسے انہوں نے قبول کیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ انشاء اللہ عید کے بعد ولی عہد شہزادہ محمد بن سلمان اور سعودی وزیر خارجہ کے دورۂ پاکستان کے خدوخال طے کرنے کیلئے سعودی افسران کا وفد پاکستان تشریف لائے گا۔

قومی خبریں سے مزید