• بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

ایک درخواست

احمد ندیم قاسمی

زندگی کے جتنے دروازے ہیں مجھ پہ بند ہیں

دیکھنا حد نظر سے آگے بڑھ کر دیکھنا بھی جرم ہے

سوچنا اپنے عقیدوں اور یقینوں سے نکل کر

سوچنا بھی جرم ہے

آسماں در آسماں اسرار کی پرتیں ہٹا کر

جھانکنا بھی جرم ہے

کیوں بھی کہنا جرم ہے کیسے بھی کہنا جرم ہے

سانس لینے کی تو آزادی میسر ہے مگر

زندہ رہنے کے لیے انسان کو کچھ اور بھی درکار ہے

اور اس کچھ اور بھی کا تذکرہ بھی جرم ہے

اے خداوندان ایوان عقائد

اے ہنر مندان آئین و سیاست

زندگی کے نام پر بس اک عنایت چاہیئے

مجھ کو ان سارے جرائم کی اجازت چاہیئے

آپ اپنا غبار تھے ہم تو

جون ایلیا

آپ اپنا غبار تھے ہم تو

یاد تھے یادگار تھے ہم تو

پردگی! ہم سے کیوں رکھا پردہ

تیرے ہی پردہ دار تھے ہم تو

وقت کی دھوپ میں تمہارے لیے

شجرِ سایہ دار تھے ہم تو

اُڑتے جاتے ہیں دھُول کے مانند

آندھیوں پر سوار تھے ہم تو

ہم نے کیوں خود پہ اعتبار کیا

سخت بے اعتبار تھے ہم تو

شرم ہے اپنی بار باری کی

بے سبب بار بار تھے ہم تو

کیوں ہمیں کر دیا گیا مجبور

خود ہی بے اختیار تھے ہم تو