• بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

مون سون ایکنی سے کیسے بچا جائے؟

موسم کے بدلنے اور مون سون کے آغاز سے جلد سے متعلق متعدد بیماریاں پھوٹتی ہیں جن سے بچاؤ کے لیے چند مفید تجاویز پر عمل کر کے چھٹکارہ حاصل کیا جا سکتا ہے۔

ماہرینِ جلدی امراض کے مطابق مون سون موسم کے دوران اپنی جلد کی صفائی کے لیے خصوصاً چکنی جلد رکھنے والے افراد کو ضرور وقت نکالنا چاہیے، مون سون کا موسم جہاں پیٹ سے متعلق متعدد شکایات کا سبب بنتا ہے وہیں اس موسم میں جلد سے متعلق کئی شکایات بھی بڑھ جاتی ہیں۔

ماہرین جِلدی امراض کے مطابق مون سون کے دوران عام روٹین سے ہٹ کر جلد کو موسمی انفیکشن اور کیل مہاسوں سے بچانے کے لیے خصوصی اقدامات کرنا لازمی ہیں ورنہ اس موسم میں جِلدی امراض تیزی سے پھیلتے ہیں جبکہ اِن کے خاتمے میں کافی وقت لگ جاتا ہے۔

ماہرین کے مطابق مون سون موسم نارمل اور خشک جلد والوں کے لیے اتنا خطرناک ثابت نہیں ہوتا جتنا کہ چکنی جلد والوں کے لیے، مون سون موسم میں جنہیں ایکنی کی شکایت پہلے سے ہو وہ مزید پریشان نظر آتے ہیں کیونکہ نمی کے سبب ایکنی زیادہ ہو جاتی ہے اور چہرے پر پھیل جاتی ہے اور ایسا دراصل موسم کے بدلتے اثرات کی وجہ سے ہوتا ہے جنہیں روکا نہیں جا سکتا مگر منفی اثرات کو کم ضرور کیا جا سکتا ہے۔

ماہر ین کا کہنا ہے کہ مون سون کے دوران چکنی اور ایکنی کی شکایت سے دو چار افراد کو کم از کم دن میں 3 بار منہ دھونا چاہیے، منہ دھونے کا بہترین وقت صبح اور رات ہے اور اگر جلد ایسی ہے جو کبھی خشک اور کبھی چکنی تو اس طرح کی جلد والے افراد کے لیے بھی دن میں کم از کم دو بار فیس واش سے چہرہ دھونا لازمی قرار دیا جاتا ہے۔

طبی ماہرین کی جانب سے تجویز کیا جاتا ہے کہ بارشوں کے دوران اپنی جلد کو بار بار کسی اچھے یا معالج کے تجویز کردہ فیس واش سے منہ دھونا اور اپنی مجموعی صفائی کا خاص خیال رکھنا چاہیے۔

مون سون موسم کے جِلد پر منفی اثرات سے بچاؤ کے لیے مندرجہ ذیل تجاویز پر باقاعدگی سے عمل کر کے بہتر نتائج حاصل کیے جا سکتے ہیں۔

چکنی جلد والے افراد دن میں 2 سے 3 بار ’سیلیسائیلک ایسڈ‘ والے فیس واش سے اپنا چہرہ دھوئیں اور برف سے چہرے پر مساج کریں، جب تک مون سون کا موسم رہے ان عادات کو نہ چھوڑیں۔

اس موسم میں ایسا ٹونر جس میں ٹی ٹری آئل بھی شامل ہو جلد پر لگایا جا سکتا ہے، یہ مفید ثابت ہوگا ۔

خود کو پر سکون رکھنے کی کوشش کریں اور پانی زیادہ پئیں ۔

اپنے پاس ہر وقت ٹشو پیپر رکھیں، اپنی چہرے کی جلد پر آنے والا پسینہ اور اضافی تیل ٹشو پیپر سے صاف کریں ۔

جسم کا درجہ حرارت بڑھنے سے جلد کے مسام اضافی تیل خارج کرنے لگتے ہیں، اس دوران کیفین والے مشروبات جیسے کہ چائے، کافی، کاربونیٹڈ واٹر اور مسالے والی غذاؤں سے اجتناب کریں۔

اسکرب کرنا جلد کی صحت کے لیے ایک بہترین عمل ہے، مگر آئلی اسکن والے افراد مون سون کے دوران اسکرب کرنے سے اجتناب کریں، ہفتے میں زیادہ سے زیادہ 2 بار کر سکتے ہیں ۔

کھلے مساموں کو بند کرنے کے لیے پھٹکری کا پانی بنا کر 15 منٹ کے لیے روئی کی مدد سے چہرے پر لگایا جا سکتا ہے۔

خشک جلد والے افراد گھر سے باہر جاتے ہوئے کسی اچھے اور لائٹ کم چکناہٹ والے موسچرائزر کا استعمال کر سکتے ہیں جبکہ آئلی اسکن والے ایلویورا جیل لگا سکتے ہیں ۔

آئلی اسکن والے افراد مون سون کے دوران کسی بھی قسم کی بی بی کریم یا موسچرائزنگ لوشن سے اجتناب کریں، میک اپ کم سے کم لگائیں۔

مون سون موسم میں جِلد کو موسچرائز کرنا جلد کے لیے خطرناک ثابت ہو سکتا ہے، مون سون کے دوران آئلی جلد والے افراد ایلوویرا جیل براہ راست اپنے چہرے پر لگا سکتے ہیں۔

اسی طرح خشک اور نارمل جلد والے افراد جلد کو موسچرائز کرتے ہوئے کسی لائٹ اور کم گریس والے موسچرائز کا استعمال کر سکتے ہیں۔  

صحت سے مزید