Irfan Athar Qazi - Urdu Columns Pakistan | Jang Columns
| |
Home Page
اتوار 03 محرم الحرام 1439ھ 24 ستمبر 2017ء
عرفان اطہر قاضی
September 18, 2017
انجام گلستاں کیا ہوگا؟

جس ریاست میں قانون کی عمل داری نہ ہو وہاں مختلف پریشر گروپس جنم لیتے ہیں اورہر پریشر گروپ اپنی مرضی کے فیصلے کرانے کی تگ ودوکرتا ہے۔ دھونس ایسے معاشرے کاکلچر بن جاتاہے۔ پریشر گروپس انصاف کومانتے ہیںنہ ہی انسانیت کو۔ ہم تو اس بدقسمت معاشرے میں رہتے ہیں جہاں ایمرجنسی کے اسٹریچر پر آخری سانسیں لیتے حضرت انسان کو مرنے کے لئے چھوڑ...
September 11, 2017
دلوں کے کھوٹے کبھی مراد نہیں پاتے

موجودہ حکومت نے گزشتہ چار برس کے دوران ریاستی خارجہ پالیسی اور قومی بیانئے کو جو ستّو پلارکھے تھے وہ رنگ دکھانا شروع ہوگئے ہیں۔ برکس اعلامیہ جس میں دوست ملک چین بھی شامل ہے، پاکستان کے لئے بہت بڑا دھچکا ہے۔ ثابت ہوگیا کہ پاکستان کا وقار بلند کرنے، دنیا کے سامنے ٹھوس طریقے سے اپنا مؤقف پیش کرنے، اپنی قربانیوں کے عوض عزت و تکریم...
August 28, 2017
فیصلہ کن گھڑی

انسانی فطرت کا یہ ایک المیہ ہے کہ جب اسے ناکامی سامنے نظر آتی ہے اس کے غیر فطری خواب چکنا چور ہونے لگتے ہیں تو وہ مایوسی کی دلدل میں دھنستا چلا جاتا ہے۔ ایسی دلدل جس سے نکلنا ناممکن ہو اس کا انجام پہلے سے بھی بڑے نقصان کی شکل میں بربادی کے سوا کچھ نہیں ہوتا دوسری طرف انسانی فطرت کا ایک خوب صورت پہلو یہ بھی ہے کہ جو انسان ناکامی کے...
August 20, 2017
بلوچستان میں امن ضروری

جو مٹی اپنے دامن سے سونا اُگلتی ہو بنجر رہے، جہاں معدنی وسائل ہوں مگر روز گار نہ ملے، جس دھرتی سے میٹھے پانی کے چشمے پھوٹیں مگر وہاں کے باسی پیاسے رہیں، بچوں بچیوں میں آگے بڑھنے کی لگن ہو، شعور ہو لیکن تعلیم سے محروم رہیں۔ جس دھرتی کے نوجوان وطن سے محبت کرتے ہوں۔ اپنی جانیں قربان کرنے کے لئے تیار ہوں، مگر ان پر اعتبار نہ کیا جائے،...
August 14, 2017
المیہ ستر برس کا

ستر برس سے چلتا جارہاہوں پاکستان نہیں آیا، کتنا دور ہے میرا وطن، مزید کتنا سفر طے کرنا پڑے گا، کوئی تو مجھے بتائے مجھے منزل کب حاصل ہوگی۔ اب میں نحیف ہوگیاہوں، میری سانسیں اکھڑ جاتی ہیں، جسم میں توانائی نہیں رہی نہ ہی چہرے پر رعنائی مگر میں نے ہمت نہیں ہاری، اپنے جذبے کوماند نہیں پڑنے دیا، ارادے کو ٹوٹنے نہیں دیا اور حوصلہ نہیں...
August 07, 2017
عقل سے عاری حکمراں، دلیل سے خالی سیاست داں

آج ہم ناراض لوگوں کو قومی دھارے میں لانے کی بات کرتے ہیں، تاریخ پر نظر دوڑائیں تو ہم نے گزرے ہوئے کل میں بہت سے ایسے لوگ قومی دھارے سے اٹھا کر باہر پٹخ دیئے جو ہماری قومی طاقت کا باعث ہوسکتے تھے۔ ہم نے اپنی گود میں سندھی ، پنجابی، بلوچی، پختون اورمہاجر پالے اور عام پاکستانی کو لاوارث چھوڑ دیا۔ملک میں اس وقت جو ماحول چل رہا ہے اس میں...
July 31, 2017
تاریخی فیصلہ ، عوام کی امیدیں اور خدشات

پاناما کیس کا تاریخی فیصلہ آگیا، ایک نئی عدالتی تاریخ کے پس منظر میں سیاست کا ایک عہد ختم ہوگیا۔ سابق وزیراعظم میاں محمد نوازشریف کو فیصلے کی روشنی میں تاحیات میدان سیاست سے نکال باہرکیا۔ اپوزیشن جماعتیں خصوصاً پی ٹی آئی کی قیادت اور کارکن شاداں ہیں مبارک بادیں دے اور وصول کر رہے ہیں مٹھائیاں بانٹی جارہی ہیں ایک جشن کا سماں ہے۔...
July 24, 2017
گوشہ نشین شخصیت کا روحانی پیغام

’’ پانامہ کیس کا جومعاملہ آج اٹھا ہے یہ بھی قدرت کی طرف سے اٹھا ہے اس کی وجہ سے پتہ نہیں کون کون سے معاملات اٹھیں گے، آپ دیکھیں گے کہ بہت سارے لوگ جو ابھی بڑے اطمینان سے بیٹھے ہیں اور جو کہتے ہیں یہ کرلیا وہ کرلیاان کاکچھ نہیں ہوسکتا۔ آپ دیکھئے گا کیسے کیسے لوگ پکڑے جائیں گے، میری بات یاد رکھئے گا، کوئی واقعہ دو ماہ بعد ہوگا،...
July 16, 2017
برہمن اور اچھوت کا کھیل اب ختم ہونا چاہئے

ہم بیس، بائیس کروڑ پاکستانیوں کے ساتھ تو یہ وعدہ کیا گیا تھا کہ تمہارے ساتھ انصاف ہو گا، نہ کہ ہاتھ ہو گا۔ ستر برس سے انصاف کے نام پر ہماری جھولی میں پتا نہیں کیا کچھ ڈالا جا رہا ہے مگر ہم آج بھی انصاف کو ترس رہے ہیں۔ ہر وزیراعظم کو اس کی مدت پوری ہونے سے قبل ہی بدعنوانی اور بدانتظامی کا ٹیکہ لگا کر اقتدار سے الگ کر دیا جاتا ہے مگر...
July 10, 2017
47 ء سے 17ء تک

جذبے کا رنگ نہیں ہوتا مگر جب یہ رنگ دکھاتا ہے تو زندگی میں رنگ بھر دیتا ہے اور اس رنگ سے جو خود اعتمادی اور توانائی پیدا ہوتی ہے وہ قوموں کی تاریخ بدل دیتی ہے یہی وہ اعتماد ہوتا ہے جو انہونی کو ہونی کر دیتا ہے ایک انسان خواب لے کر اٹھتا ہے اس کی تعبیر کو اپنی تقدیر پر نہیں چھوڑتا بلکہ اس میں اپنے پسینے اور خون کا رنگ بھر دیتا ہے وہ...
July 03, 2017
یہ خاموشی کیوں؟

ہر طرف ماتم ہی ماتم، لاشیںہی لاشیں، آہ وبکا ، چیخ و پکار، دکھ درد تکلیفیں ہیںکہ کم ہوتی نہیں، خوشیاں وہ جو ہم سے روٹھ گئیں۔ پشاور سے کوئٹہ ، کوئٹہ سے پارا چنار، پارا چنار سے احمد پور شرقیہ بس ماتم اور لاشیں، بیٹوں ، بیٹیوں بوڑھے والدین کے آنسو اور ایک قبرستان سی خاموشی، جن کی ٹیسیں ختم ہونے کو نہیں آتیں۔ حکمرانوں کے کھوکھلے...