آپ آف لائن ہیں
جمعہ8؍ جمادی الثانی 1442ھ 22؍ جنوری2021ء
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیئرمین و ایگزیکٹوایڈیٹر: میر جاوید رحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن
Jang Group

آن لائن ویب سائٹ کے اشتہار پر خریداروں نے گلستان جوہر میں گھر لوٹ لیا

کراچی کے علاقے گلستان جوہر بلاک 13 میں آن لائن ویب سائٹ کے اشتہار پر آنے والے ملزمان گھر لوٹ کر فرار ہوگئے۔

ملزمان کے فون نمبر ہونے کے باوجود پولیس نے ساڑھے 11 لاکھ روپے سے محروم ہونے والے اہلخانہ سے درخواست لے کر انتظار کرنے کا کہا ہے۔

مقامی کمپنی میں ملازم عدنان جاوید نے نے بتایا کہ انہیں گھر منتقل کرنا ہے، جس کیلئے اہل خانہ نے پرانا گھریلو سامان بیچنے کا کہا اور آن لائن ویب سائٹ پر سامان کا اشتہار دے دیا۔

عدنان کے مطابق کچھ سامان ایک فیملی خرید کر لے گئی جبکہ جمعہ کو داڑھی والے دو افراد نے آکر باقی سامان خرید لیا، اور وہ بیعانہ دے کر چلے گئے۔ دونوں افراد نے ہفتہ کو دوبارہ آنے اور رقم ادا کرکے سامان لیجانے کا کہا۔ 

عدنان کے مطابق ہفتے کی صبح دونوں افراد ان کے گھر آئے، پہچان پر انہیں گھر کے اندر بلوالیا گیا۔ انہوں نے کارپینٹر کے آنے کہا اور انتظار کرنے لگے۔ 

تھوڑی دیر میں کارپینٹر ایک ساتھی کے ہمراہ آیا تو انہوں نے سامان لوڈ کرنے کیلئے سوزوکی والے کے آنے کا کہا۔ عدنان کے مطابق کچھ دیر میں گاڑی والا بھی اپنے ساتھی کے ہمراہ آیا۔ یوں 6 افراد جمع ہوئے تو سودا کرنے والے دونوں افراد نے اسلحہ نکال لیا۔

عدنان کے مطابق ملزمان نے انہیں اور اہل خانہ کو یرغمال بنا کر دو گھنٹے تک گھر میں لوٹ مار کی۔ ملزمان نے 5 لاکھ نقد، 6 لاکھ روپے کے زیورات اور دیگر سامان لوٹ لیا، عدنان جاوید کے مطابق اس دوران ملزمان نے ان سے اے ٹی ایم کارڈ لیا اور پن کوڈ حاصل کرکے دو افراد چلے گئے۔

ملزمان نے اے ٹی ایم مشین سے ان کے بینک اکاؤنٹ سے 50 ہزار روپے نکلوا لئے۔ رسید میں باقی رقم 3 لاکھ روپے درج دیکھی تو ملزمان نے مزید 3 لاکھ روپے نکلوانے کیلئے انہیں 6 دن تک کا الٹی میٹم دیا اور اے ٹی ایم کارڈ بند کرنے کی صورت میں سب گھر والوں کو مارنے کی دھمکی دی اور فرار ہوگئے۔ 

عدنان کے مطابق انہوں نے فوری طور پر پولیس کو واردات کی اطلاع دی، پولیس اہلکار گھر آئے معائنہ کرکے تھانے آنے کا کہہ کر چلے گئے۔ عدنان کے مطابق وہ شاہراہ فیصل تھانے گئے تو ان سے درخواست لے کر گھر روانہ کردیا گیا اور پولیس نے ایف آئی آر تک درج نہیں کی۔

عدنان کا کہنا ہے کہ پولیس افسر نے مشورہ دیا کہ اگر ایف آئی آر درج کرائی تو تھانہ کچہری کے چکر کاٹتے رہ جاؤ گے۔ پولیس افسر نے تسلی دی کہ گھر جاکر انتظار کرو ملزمان پکڑے گئے تو اگلی کاروائی کریں گے۔ اب یہ بدقسمت خاندان ملزمان کے پکڑے جانے اور اگلی کارروائی کا منتظر ہے۔

قومی خبریں سے مزید