کراچی: 2 مقامات پر احتجاج جاری، ٹریفک بلاک
  • بانی: میرخلیل الرحمٰن
  • گروپ چیف ایگزیکٹووایڈیٹرانچیف: میر شکیل الرحمٰن

کراچی: 2 مقامات پر احتجاج جاری، ٹریفک بلاک


کراچی میں مذہبی جماعت کے احتجاج کے باعث شہر میں تاحال 2 مقامات پر احتجاج جاری اور ٹریفک بلاک ہے۔

صبح شارع فیصل اسٹار گیٹ اور اورنگی ٹاؤن نمبر 5 پر بھی ٹریفک رکا ہوا تھا تاہم مذاکرات کے بعد ان دونوں علاقوں میں ٹریفک بحال ہو چکا ہے۔

ٹریفک پولیس کے مطابق بلدیہ حب ریور روڈ اور کورنگی ڈھائی نمبر پر تاحال دھرنا جاری ہے، کورنگی ڈھائی سے 3 نمبر جانے والی سڑک ٹریفک کے لیے بند ہے۔

ادھر شارع فیصل پر اسٹار گیٹ پر بڑی تعداد میں پولیس کی نفری موجود ہے، ٹریفک پولیس کے مطابق مظاہرین کی جانب سے بار بار سڑک بند کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے جبکہ پولیس نے سڑک کھلوا کر اضافی نفری تعینات کر دی ہے۔

ٹریفک پولیس کا کہنا ہے کہ ملیر سے ایئر پورٹ آنے اور جانے والا روڈ ٹریفک کے لیے کھلا ہے، مظاہرین کی بار بار مداخلت کے باعث ٹریفک کی روانی متاثر ہوئی ہے۔

ٹریفک پولیس کا کہنا ہے کہ بلاک راستوں کے مقامات سے شہریوں کو متبادل راستے فراہم کیئے جا رہے ہیں، جبکہ شہر کے بیشتر مقامات پر ٹریفک معمول کے مطابق ہے۔

دوسری جانب ٹریفک پولیس کا کہنا ہے شہری زحمت سے بچنے کے لئے متبادل راستہ اختیار کریں۔

گزشتہ روز احتجاج کے باعث شہر بھر میں ٹریفک کا نظام درہم برہم ہو گیا جبکہ کئی فلائٹس لیٹ ہوئیں، متعدد شہری ایئر پورٹ بھی نہ پہنچ سکے۔


گزشتہ روز احتجاج کے باعث کراچی کی مرکزی شاہراہوں پر ٹریفک کا نظام تہنس نہس ہوکر رہ گیا، شام 5 بجے کے بعد ٹاور، آئی آئی چندریگر روڈ، ایم اے جناح روڈ، زینب مارکیٹ، گورنر ہاؤس، شارع فیصل، لیاقت آباد، فائیو اسٹار چورنگی نارتھ ناظم آباد، پاور ہاؤس چورنگی نارتھ کراچی اور دیگر مقامات پر بدترین ٹریفک جام سے گاڑیوں کی طویل قطاریں لگ گئیں۔

لاکھوں شہری کئی گھنٹوں تک ٹریفک میں پھنسے رہے، اسٹار گیٹ کے قریب احتجاج کے باعث ایئر پورٹ جانے اور آنے والے دونوں ٹریک پر ٹریفک کی روانی تادیر معطل رہی جس کے باعث مسافروں کو کراچی ایئر پورٹ پہنچنے میں شدید مشکلات پیش آئیں۔

رات 9 بجے کے بعد کراچی سے دیگر شہروں کو جانے والی پروازیں تاخیر کا شکار ہوئیں۔

ٹریفک کی بدترین صورتِ حال کے پیشِ نظر ریلوے نے سر سید ایکسپریس، گرین لائن ایکسپریس اور خیبر میل کو ڈرگ روڈ اور لانڈھی میں 2 منٹ کا اسٹاپ دیا تاکہ اطراف کے علاقوں کو جانے والے مسافر آرام سے گھروں کو پہنچ سکیں۔

قومی خبریں سے مزید