Masood Ashar - Urdu Columns Pakistan | Jang Columns
| |
Home Page
بدھ 24 ربیع الاوّل 1439ھ 13 دسمبر2017ء
مسعود اشر
آئینہ
December 12, 2017
ادبی جشن اور تہذیبی تر بیت

یہ جو ملکوں ملکوں اور شہروں شہروں ادبی میلے یا جشن ادب ہو رہے ہیں ان سے ادب و ثقافت میں دلچسپی لینے والے عام آدمی کی تہذیبی اور ثقافتی تربیت بھی ہوتی ہے۔ یہ بات سارہ حیات نے فیصل آباد کے چوتھے جشن ادب کے پہلے اجلاس میں کہی۔ اور ہم نے سوچا کہ یہ بات تو ہمارے دماغ میں آئی ہی نہیں تھی۔ ہم تو اب تک یہی سمجھتے رہے تھے کہ ان میلوں سے علمی...
December 05, 2017
پیپلز پارٹی کے پچاس سال اور ملتان

ہم نے وعدہ کیا تھا کہ اس بار ہم فیصل آباد ادبی میلے یا جشن ادب کے بارے میں لکھیں گے۔ لیکن ہم بھول گئے تھے کہ انہی دنوں وہ سیاسی جماعت اپنی پچاسویں سالگرہ بھی منا رہی ہے جس نے پاکستان کی تاریخ میں پہلی بار عام آدمی کو بولنا سکھایا۔ اس لئے آج ہم اس جماعت کی بات کر رہے ہیں۔ پچاس سال پہلے جب لاہور میں پیپلز پارٹی کی بنیاد رکھی گئی تو ہم...
November 28, 2017
دھرنا اور فیصل آباد سے لاہور، بیس گھنٹے میں

معاہدہ ہو گیا۔ استعفیٰ بھی مل گیا۔ دھرنے بھی ختم ہو گئے۔ لیکن ان دو ڈھائی دن میں پورا ملک جس عذاب میں مبتلا رہا اس کا حساب کون دے گا؟ دھرنے والوں نے دھرنا دیا، ایک ایسے مسئلے پر جو پہلے ہی حل ہو چکا تھا۔ حکومت ٹامک ٹوئیاں مارتی رہی۔ انہیں سمجھانے کی کوشش کرتی رہی۔ لیکن وہ جا نتی تھی کہ اس کی بات نہیں مانی جا ئے گی۔ اور یہ بھی جانتی تھی...
November 21, 2017
یہ آگ کب اور کیسے بجھے گی ؟

اصل بات تو اپنے انور شعور نے کہہ دی۔ اس اتوار کو جنگ میں ان کا جو قطعہ چھپا ہے اس کا دوسرا شعر ہےنازک معاملات پہ کیوں رائے دیں بھلاہے رائے سے زیادہ ہمیں زندگی عزیزہم نے ارون دتی رائے کے ناول کے حوالے سے کہیں لکھ دیا تھا کہ کرپشن کرپشن کی رٹ لگا کر اگر ہم اپنے تمام سیاست دانوں کو گائوں بدر کر دیں گے تو میدان میں کون رہ جائے گا؟ وہی عام...
November 14, 2017
جوانوں کے جوان، مشکور حسین یادؔ

 وہ شخص جس نے بانوے سال کی عمر میں بھی بڑھاپے کو اپنے اوپر سوار نہیں ہونے دیا اور آخری عمر تک جوانوں کا جوان نظر آتا رہا، کل ہم میں نہیں رہا۔ خبر پڑھی تو یقین نہیں آیا۔ ہنستا مسکراتا اور ادھر ادھر چوٹیں کرتا اس کا چہرہ سامنے آ گیا۔ خوش پوشاک، خوش مزاج، خوش گفتار بلکہ بذلہ سنج اور قلم کے دھنی۔ یہ تھے مشکور حسین یاد۔ جب بھی ملے...
November 07, 2017
کتنا خرچہ آتا ہے ایک جلسے پر؟

 کیا کوئی ہمیں بتا سکتا ہے کہ سیاسی لیڈروں کے ایک عام جلسے پر کتنا خرچہ آ تا ہے؟ دودو سوفٹ لمبااور سو سو فٹ چوڑا اسٹیج، پندرہ پندرہ بیس بیس ہزار کرسیاں، شامیانے اور قناتیںالگ، اوپرسے سائونڈ سسٹم، پھر لیڈروں اور ان کے بچونگڑوں کا آنا جانا، ایک کروڑ تک تو پہنچ جا تا ہو گا ایک جلسے کا خرچہ؟ اور اگر یہ جلسہ ہفتے دو ہفتے ہر روز کیا جا...
October 31, 2017
چلو، لندن چلو

 اب تو ایسا لگتا ہے کہ ہماری سیاست کے ساتھ ثقافت کا مرکز بھی لندن بن گیا ہے۔ یہی دیکھئے کہ ہمارے نواز شریف صاحب لندن میں بیٹھے ہیں۔ وہ کچھ دن کے لئے سعودی عرب گئے تھے۔ اس کے بعد پھر لندن پہنچ گئے۔ ہمارے موجودہ وزیر اعظم اور ان کی کابینہ کے ارکان نواز شریف صاحب سے ملنے لندن چلے گئے ہیں۔ ایم کیو ایم کے بانی کو تو جا نے دیجئے کہ ان کے سر...
October 24, 2017
خطرے کی بُو

اپنے نوجوان پڑھاکو دوست محمودالحسن کی مہربانی سے ہم نے بھی ارن دھتی رائے کا ناول The Ministry of Utmost Happiness پڑھ لیا۔ اب یہ ناول کیسا ہے؟ اس کے بارے میں تو پھر کبھی بات ہو گی البتہ ہم یہاں ناول کے اس حصے کا ذکر کرنا چاہتے ہیں جسے پڑھتے ہوئے ہمارے دماغ کو زور کا جھٹکا لگا تھا اور ہماری آنکھوں کے سامنے ایک فلم سی چلنے لگی تھی۔ یہ حصہ دلّی کے اس...
October 18, 2017
اعصاب کا امتحان اور ملتانی آم

آپ کہیں گے کہ کیا ان مل بے جوڑ عنوان ہے اس کالم کا۔ یعنی ماروں گھٹنا پھوٹے آنکھ۔ کہاں اعصاب کا امتحان اور کہاں ملتان کے آم۔ لیکن ادب کے استادوں سے پوچھ لیجئے کہ ادب میں ان مل بے جو ڑ بھی ایک چیز ہو تی ہے۔ اب یہ کوئی صنف ہے یا نہیں، لیکن ان مل بے جوڑ شاعری ضرور ہوتی ہے۔ یعنی شتر گربہ۔ یار لوگوں کو ہماری آج کی سیاسی صورت حال بھی کچھ...
October 10, 2017
نوبیل انعام اور ہریانوی زبان

جب بھی کسی ادیب کو کوئی ادبی انعام ملتا ہے، جھگڑا شروع ہو جاتا ہے۔ فلاں ادیب کو کیوں نہیں ملا؟ اس کا حق زیادہ تھا۔ اسے کیوں ملا؟ اس کا تو حق ہی نہیں تھا۔ اس سال ادب کا نو بیل انعام برطانیہ کے ناول نگار کازو ایشی گرو( Kazuo Ishiguro) کو ملا ہے۔ اول تو اس ادیب کا نام ہی ہمارے حلق سے نیچے نہیں اترتا۔ دوسرے وہ چند ناولوں کا ہی مصنف ہے۔ اس کے صرف دو...
October 03, 2017
سیاست کا اونٹ اور ستارہ شناس

 آپ نے کبھی اونٹ کی سواری کی ہے؟ کہتے ہیں اس کی کوئی کل سیدھی نہیں ہوتی۔ اسی لئے جب وہ کھڑا ہوتا ہے تو ایسے جھکولے کھاتا ہے کہ اس پر بیٹھنے والا ڈرتا رہتا ہے کہ کہیں وہ گر ہی نہ جائے۔ اور جب وہ بیٹھتا ہے تو کبھی دائیں جھکتا ہے اور کبھی بائیں۔ سمجھ میں نہیں آتا کہ وہ دائیں کروٹ بیٹھے گا یا بائیں کروٹ۔ کہتے ہیں آج کل ہماری سیاست کا...
September 26, 2017
پنجابی ادب کا بہت بڑا نام

ہم اپنے اپنے خول میں مگن رہتے ہیں۔ اپنے کابک میں، اپنے ڈربے میں(کابک میں کبوتر اور ڈربے میں مرغی)۔ ہمیں اس سے کو ئی غرض نہیں ہو تی کہ ہمارے خول یا ہمارے کابک اور ڈربے سے باہر کیا ہو رہا ہے۔ یہ خول زبانوں اور ادب میں بھی موجود ہے۔ اردو والے بالکل نہیں جانتے کہ پاکستان کی دوسری زبانوں میں کیا لکھا جا رہا ہے۔ لے دے کے پنجابی یا سندھی زبان...
September 19, 2017
الیکشن، نجم سیٹھی اور پنکچر

یہ اچھا الیکشن تھا۔ دونوں فریقوں کو شکایت ہے کہ ان کے ساتھ زیادتی ہوئی ہے۔ مسلم لیگ نے پولنگ کے دوران ہی شکایت شروع کر دی تھی کہ ان کے کارکن غائب کر دیئے گئے ہیں۔ ان کے ووٹروں کو اندر نہیں جانے دیا جا رہا ہے۔ ان کے ایک پو لنگ ایجنٹ تو یہ کہتے ہوئے بھی پائے گئے کہ جس آدمی کے پاس مسلم لیگ کی پرچی ہوتی ہے اسے واپس بھیج دیا جاتا ہے۔ کسی نے...
September 12, 2017
مرغا کس نے چرایا؟

سوشل میڈیا پر آج کل ایک تصویر ’’وائرل‘‘ ہو رہی ہے۔ یہ تصویر ان رنگ برنگے ٹن کے ڈبوں کی ہے جو شاید کسی ٹوکرے جیسی چیز میں اوپر نیچے پڑے ہوئے ہیں۔ یہ سعادت حسن منٹو کے خالی ڈبے نہیں ہیں بلکہ مشروبات کے ڈبوں جیسے ہیں۔ جیسے کسی کولا کے ٹن۔ یا پھر یورپ اور امریکہ میں کھانے پینے کی چیزوں کے ٹن۔ ان ڈبوں پر چینی زبان میں کچھ لکھا ہوا ہے...