Masood Ashar - Urdu Columns Pakistan | Jang Columns
| |
Home Page
ہفتہ 7؍ جمادی الثانی 1439ھ 24؍ فروری 2018ء
مسعود اشر
آئینہ
February 20, 2018
روشن خیالی کی پسپائی اور حکمراں طبقے کا کردار

عاصمہ جہانگیر کی وفات کے بعد سوچنے سمجھنے والے حلقے اب اس ہولناک صورتحال کی طرف توجہ دلا رہے ہیں کہ ہمارے معاشرے میں روشن خیالی، رواداری اور وسیع المشربی کی گنجائش محدود سے محدود تر ہوتی جا رہی ہے۔ اور تنگ نظری اور انتہا پسندی ہمارے سیاسی، سماجی اور مذہبی ماحول پر قابض ہوتی جا رہی ہے بلکہ ہماری نئی نسل کے روشن فکر مورخ ڈاکٹر طاہر...
February 13, 2018
وہ جس نے ہمیں مردانگی کے حقیقی مفہوم سے روشناس کرایا

یہ کیسا سال چڑھا ہے۔ ہمارا ایک سے ایک بے بہا ہیرا ہم سے چھینا جا رہا ہے۔ ادب میں رسا چغتائی، ساقی فاروقی اور محمد علوی گئے۔ صحافت میں منو بھائی نے ہمیں چھوڑا۔ اور ٹی وی اور اسٹیج ڈرامے میں قاضی واجد ہم سے رخصت ہو گئے۔ اور کل جمہوری اقدار اور انسانی حقوق کی شعلہ بیاں محافظ اور ہر نوع اور ہر رنگ کے ظلم و ستم اور ہر قسم کے انسانی استحصال...
February 06, 2018
شاہد حمید۔ کمال کا آدمی

میرا اور اس کا تعلق ساٹھ سال سے بھی زیادہ کا تھا۔ آج، جب میں اس کا ذکر کر رہا ہوں تو میرے دل میں ہول سا اٹھ رہا ہے۔ 1953 سے اب تک کتنے سال ہوئے؟ آپ خود ہی حساب لگا لیجئے۔ اس سال پاکستان کا پہلا مارشل لا لگا تھا۔ اور یہ مار شل لا صرف لاہور میں ہی لگا تھا کیونکہ احمدیوں کے خلاف تحریک نے اسی شہر میں زور پکڑا تھا۔ روزنامہ زمیندار پر پابندی...
January 30, 2018
یہ کس کی پدماوت ہے

اگر آج ملک محمد جائسی زندہ ہو تے تو اپنی مثنوی ’’پدماوت‘‘ پر بنائی جانے والی فلم دیکھ کر’’جوہر‘‘ ہو جاتے۔ معاف کیجئے جوہر تو راجپوت ناریاں اپنی راجپوتی آن بان شان پر ہوتی تھیں، ملک جائسی تو مسلمان تھے، وہ جو کچھ کرتے اسے خودکشی کہا جا سکتا ہے۔ انہوں نے تو ایک خیالی داستان رقم کی تھی، انہیں کہاں معلوم ہو گا کہ ان کی مثنوی ہالی...
January 24, 2018
یہ تعزیتی کالم نہیں ہے

یہ تعزیتی کالم نہیں ہے۔ مجھے تعزیتی مضمون یا تعزیتی کالم لکھنا نہیں آتا۔ میں نے اپنے جگری دوست افضل خاں پر جو کالم لکھا تھا وہ بھی تعزیت نہیں تھی، بلکہ اس کی یاد تازہ رکھنے کا بہانہ تھا۔ یہ کالم بھی منو بھائی کی تعزیت نہیں ہے بلکہ چالیس پچاس سال پرانی یادیں تازہ رکھنے کا ایک بہانہ ہے۔ یہ 1970کی دہائی ہے۔ جنرل یحییٰ خاں کی حکومت ہے۔...
January 16, 2018
یہ آن لائن کا زمانہ ہے

ہمارے شاعر اور افسانہ نگار دوست ایرج مبارک کہتے ہیں کہ یہ آن لائن رسالوں اور کتابوں کا زمانہ ہے۔ کاغذ پر چھپنے والے رسالوں اور کتابوں کا زمانہ لد گیا۔ ان کا خیال ہے کہ کاغذ پر چھپنے والے رسالے اور کتابیں زیادہ سے زیادہ پانچ سو چھپتی ہیں، اور چند سو سے بھی کم قارئین تک پہنچتی ہیں، جبکہ آن لائن چھپنے والے رسالوں اور کتابوں کے قاری...
January 10, 2018
نیا سال، ڈونلڈ ٹرمپ اور عمران خان

بچھو سے کسی نے پو چھا ’’تم گرمیوں میں نظر آتے ہو، سردیوں میں نظر کیوں نہیں آتے؟‘‘بچھو نے جواب دیا ’’گرمیوں میں میرے ساتھ کونسا اچھا سلوک کیا جاتا ہے کہ سردیوں میں بھی نظر آئوں؟‘‘ اب نیا سال شروع ہوا ہے تو خیال آیا کہ بھلا جانے والے سال نے ہمیں کتنی خوشیاں دی ہیں کہ نئے سال سے کچھ زیادہ توقعات رکھی جائیں؟ لیکن کسی نے یہ بھی...
January 02, 2018
خلال سے بانس تک کا سفر

پورے دس سال ہو گئے کراچی آرٹس کونسل کی عالمی کانفرنس کو۔ یوں تو دس سال کچھ زیادہ عرصہ نہیں ہوتا لیکن دیکھا یہ گیا ہے کہ اس قسم کی تقریب چند سال بعد ہی اپنی کشش اور اپنی توانائی کھو دیتی ہے۔ اور اس میں سستی اور کاہلی اپنے ڈیرے ڈالنے لگتی ہے۔ لیکن ہم دیکھ رہے ہیں کہ سستی اور کاہلی تو دور کی بات ہے اس کانفرنس کی توانائیوں میں ہر سال...
December 19, 2017
اس کا دل اسے دھوکا دے گیا

اس کے دل نے اسے دھوکا دیا۔ وہ جو ہر وقت ہنسی مذاق اور بحثا بحثی میں سب سے آگے ہو تا تھا، اور جس کی آواز ساری محفل پر چھا جاتی تھی، دل کے ہاتھوں مار کھا گیا۔ خوش شکل، خوش مزاج اور ہنگامہ پرور افضل خاں۔ ابھی پچھلے اپریل میں ہی تو اس سے ملاقات ہو ئی تھی۔ ٹیلی فون پر تو کسی نہ کسی بہانے اس سے بات ہوتی رہتی تھی، مگر اس ملاقات کا موقع...
December 12, 2017
ادبی جشن اور تہذیبی تر بیت

یہ جو ملکوں ملکوں اور شہروں شہروں ادبی میلے یا جشن ادب ہو رہے ہیں ان سے ادب و ثقافت میں دلچسپی لینے والے عام آدمی کی تہذیبی اور ثقافتی تربیت بھی ہوتی ہے۔ یہ بات سارہ حیات نے فیصل آباد کے چوتھے جشن ادب کے پہلے اجلاس میں کہی۔ اور ہم نے سوچا کہ یہ بات تو ہمارے دماغ میں آئی ہی نہیں تھی۔ ہم تو اب تک یہی سمجھتے رہے تھے کہ ان میلوں سے علمی...
December 05, 2017
پیپلز پارٹی کے پچاس سال اور ملتان

ہم نے وعدہ کیا تھا کہ اس بار ہم فیصل آباد ادبی میلے یا جشن ادب کے بارے میں لکھیں گے۔ لیکن ہم بھول گئے تھے کہ انہی دنوں وہ سیاسی جماعت اپنی پچاسویں سالگرہ بھی منا رہی ہے جس نے پاکستان کی تاریخ میں پہلی بار عام آدمی کو بولنا سکھایا۔ اس لئے آج ہم اس جماعت کی بات کر رہے ہیں۔ پچاس سال پہلے جب لاہور میں پیپلز پارٹی کی بنیاد رکھی گئی تو ہم...
November 28, 2017
دھرنا اور فیصل آباد سے لاہور، بیس گھنٹے میں

معاہدہ ہو گیا۔ استعفیٰ بھی مل گیا۔ دھرنے بھی ختم ہو گئے۔ لیکن ان دو ڈھائی دن میں پورا ملک جس عذاب میں مبتلا رہا اس کا حساب کون دے گا؟ دھرنے والوں نے دھرنا دیا، ایک ایسے مسئلے پر جو پہلے ہی حل ہو چکا تھا۔ حکومت ٹامک ٹوئیاں مارتی رہی۔ انہیں سمجھانے کی کوشش کرتی رہی۔ لیکن وہ جا نتی تھی کہ اس کی بات نہیں مانی جا ئے گی۔ اور یہ بھی جانتی تھی...
November 21, 2017
یہ آگ کب اور کیسے بجھے گی ؟

اصل بات تو اپنے انور شعور نے کہہ دی۔ اس اتوار کو جنگ میں ان کا جو قطعہ چھپا ہے اس کا دوسرا شعر ہےنازک معاملات پہ کیوں رائے دیں بھلاہے رائے سے زیادہ ہمیں زندگی عزیزہم نے ارون دتی رائے کے ناول کے حوالے سے کہیں لکھ دیا تھا کہ کرپشن کرپشن کی رٹ لگا کر اگر ہم اپنے تمام سیاست دانوں کو گائوں بدر کر دیں گے تو میدان میں کون رہ جائے گا؟ وہی عام...
November 14, 2017
جوانوں کے جوان، مشکور حسین یادؔ

 وہ شخص جس نے بانوے سال کی عمر میں بھی بڑھاپے کو اپنے اوپر سوار نہیں ہونے دیا اور آخری عمر تک جوانوں کا جوان نظر آتا رہا، کل ہم میں نہیں رہا۔ خبر پڑھی تو یقین نہیں آیا۔ ہنستا مسکراتا اور ادھر ادھر چوٹیں کرتا اس کا چہرہ سامنے آ گیا۔ خوش پوشاک، خوش مزاج، خوش گفتار بلکہ بذلہ سنج اور قلم کے دھنی۔ یہ تھے مشکور حسین یاد۔ جب بھی ملے...